تازہ ترین  
بدھ‬‮   14   ‬‮نومبر‬‮   2018

ضلعی ہیڈ کوارٹر سے چھلت سٹی بر ویلی روڑ منصوبہ التواء کا شکار(عوامی حلقوں کا شدید احتجاج)


نگر ( اقبال راجوا) ضلعی ہیڈ کوارٹر سے چھلت سٹی بر ویلی روڑ منصوبہ ضلع نگر کی عوام کے لئے معاشی اعتبار سے سی پیک سے بھی زیادہ اہم اور سیاحتی اعتبار سے سیاحوں کو فیری میڈو دوئم اور شندور کا متبادل ہے ، اب تک اس منصوبے کو اس اہم ترین منصوبے کو ٹھیکدار ،محکمہ تعمیرات عامہ اور صوبائی حکومت کی علاقہ نگر دشمنی کے سبب التواء کا

شکار کیا گیا ہے ۔ عوامی حلقوں میں اس منصوبہ بارے میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے ۔ عوامی حلقوں نے اس منصوبے کو بار بار اخبارات میں لانے کے لئے صحافیوں سے منصوبے پر کام کے اجراء تک مسلسل اور بڑی کوریج کا بھی مطالبہ ۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ ایک سال قبل 13کروڑ 20لاکھ کی خطیر رقم کے اس اہم ترین منصوبے کا ٹینڈر کرایا گیا جسے ایک گورنمنٹ کنٹریکٹر نے سب سے کم صرف 5کروڑ چالیس لاکھ میں بولی دے کر حاصل کرنے کی کوشش کی جس سے محکمہء ترقیات عامہ سمیت علاقے کی عوام کے لئے کھٹائی میں پڑنے والا مسئلہ کشمیر بن گیا ۔پھر محکمہء تعمیرات عامہ نگر نے مذکورہ ٹھیکیدار سے اپنی تمام تحفظات ختم کرنے اور منصوبے کی تعمیر و تکمیل کو یقینی بنانے کے لئے شیڈول بینک گارنٹی مقررہ وقت دو ہفتے کے اندر جمع کرانے کی ہدایت کی جس پر ٹھیکیدار نے بینک گارنٹی کی ضمانت غیر قانونی اور اپنے ساتھ ناانصافی قرار دیتے ہوئے عدالت سے رجوع کیا ۔بس پھر کیا تھا کہانی پہ کہانی شروع ہوئی اور ایک عدالت سے دوسری عدالت میں معاملہ جاری ہے ۔ اس منصوبے کو ٹھکیدار یونین نے عدالت میں موجود ٹھیکیدارو

ں کو ان کی اپیل خارج کرنے اور منصوبے پر کام بات چیت کے زریعے طے کرنے کے لئے اقدامات کئے لیکن تمام تر اقدامات منصوبہ بندی کے لحاظ طے کرنے کے بعد ٹینڈر کے دوران کسی ایک اضافی ٹھیکیدار کو ٹینڈر میں شامل کر لیا گیا۔عوامی حلقوںنے اس منصوبے کو مجرمانہ التواء کا شکار کرنے والے ٹھیکیدار ،محکمہ اور صوبائی حکومت سمیت تمام زمہ داروں کی مذمت کی ہے اور مطالبہ کیا ہے کہ یہ بنیادی انسانی حقوق کی شدید خلاف ورزی ہو رہی ہے لیکن کسی کو کوئی بھی احساس تک نہیں ہو رہا ہے ۔ عوام نے متعلقہ محکموں اور زمہ داروں سے جواب طلب کیا ہے کہ کب تک اس منصوبے پرکام کا آغاز ہوگا۔عوام کو یہ خود احتجاج اور دھرنوں کی طرف جانے پر مجبور کر رہے ہیں ۔عوام نے عدالت سے امید ظاہر کی ہے کہ اس منصوبے پر ایک منصفانہ فیصلہ سناتے ہوئے عوام کو ان کے حقوق دلانے میں تاریخی کردار ادا کرے گی ۔ ہم عدالت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اس منصوبے کے التواء میں شامل تمام زمہ داروں کے خلاف قانونی کاروائی بھی کرے۔




 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

تازہ ترین خبریں


کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved