گلگت بلتستان میں ٹیکس غریبوں پر نہیں بلکہ امیروں پر لگایا گیا ہے،حافظ حفیظ الرحمٰن
  11  اکتوبر‬‮  2017     |     گلگت بلتستان

گلگت (خصوصی رپورٹ) وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان میں ٹیکس غریبوں پر نہیں بلکہ امیروں پر لگایا گیا ہے ، ٹیکس لگانے کے حوالے اپر طبقہ شور مچا رہا ہے جنہوں نے کروڑوں کی جائیدادیں بنائی ہیں ، اب امیر طبقے کو ٹیکس دینا پڑے گا ۔ ہم نہیں چاہتے کہ غریب آدمی پر ٹیکس لگے ، گلگت بلتستان میں ٹیکسوں کا نفاذ پی پی پی کے سابقہ دور میں ہوا ہے ۔ خطے کے عوام ستر سالوں سے وہ تمام ٹیکسز ادا کررہے ہیں جو ملک کے دیگر آئینی صوبوں کے شہری ادا کررہے ہیں ضرورت اس امر کی ہے کہ عوام جو ٹیکس ادا کرتے ہیں وہ ان کے فلاح و بہبود پر خرچ ہو ۔ گلگت بلتستان کے متنازعہ حیثیت کے حوالے سے امریکی سیکریٹری دفاع کا بیان قابل مذمت ہے ۔ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبہ گیم چینجر ہے اس کی کامیابی کےئے تمام وسائل بروئے کار لائے جائینگے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بدھ کیر وز قانون ساز اسمبلی کے اکیسویں اجلاس کے دوسرے روز اپوزیشن ممبر محمد شفیع کی طرف سے امریکی سیکریٹری دفاع کا گلگت بلتستان سے متعلق بیان اور خطے میں ود ہولڈنگ ٹیکس کے نفاذ سے متعلق توجہ دلاؤ نوٹس پر جاری بحث کو سمیٹتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ کی شروع دن سے یہ پالیسی رہی ہے کہ وہ اپنے اتحادیوں کو ڈالرز اور اسلحہ کی لالچ دیکر ان کے ذریعے اپنے مزموم مقاصد کی تکمیل چاہتا ہے ۔ اس کی کوشش ہوتی ہے کہ ان ممالک میں لسانی ، مذہبی اور علاقائی تعصبات کے ذریعے لوگوں کو آپس میں لڑایا جائے ۔ لیکن پاکستان کے سیاسی حکمرانوں نے اپنی بصیرت سے نہ صرف ملک کو ایٹمی طاقت بنایا بلکہ خطے میں پاکستان ایک معاشی طاقت بن کر ابھر رہا ہے ۔ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے کے حوالے سے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ یہ منصوبہ صرف چین اور پاکستان کا نہیں بلکہ 17ممالک کا منصوبہ ہے ۔ اس منصوبے کی خاص بات یہ ہے کہ یہ منصوبہ پاکستان کے سمندری اور مینی حدود سے گزر کے جاتا ہے اس منصوبے سے گلگت بلتستان کو جو فوائد مستقبل میں حاصل ہونگے اس کا اندازہ ہمیں ہے کیونکہ اس وقت ڈرائیونگ سیٹ پر ہم بیٹھے ہوئے ہیں سی پیک سے گلگت بلتستان میں معاشی انقلاب آئیگا ۔ جس سے یہاں کے لوگوں کو معیار زندگی بلند ہوگا ۔ اس منصوبے کی تکمیل سے پاکستان معاشی طور پر مضبوط مو مستحکم ہوگا اور یہ بات امریکہ اور اس کے حواریوں کو ہضم نہیں ہو رہی ہے ۔

گلگت بلتستان کی آئینی حیثیت کے تعین کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ وفاق میں گلگت بلتستان کو قومی دھارے میں شامل کرنے کیلئے تیزی سے کام جاری تھا ۔ لیکن اٹھائیس جولائی کو وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف کے خلاف عدالتی فیصلہ آنے کے بعد معاملہ التوا کا شکار ہوا تھا ، تاہم نئی کمیٹی تشکیل دیدی گئی ہے جو تیزی سے کام کررہی ہے امریکہ اور بھارت گلگت بلتستان کو آزاد کشمیر سے نتھی کرکے اس کو متنازعہ بنانے کی ساش کررہے ہیں جو اپنے مقصد میں کبھی کامیاب نہیں ہونگے ۔ انہوں نے ایوان کو بتایا کہ آج جو لوگ ٹیکس کی مخالفت کررہے ہیں وہ امیر طبقہ ہے ۔ اانہوں نے ایوان میں اعداد و شمار پیش کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ سال ٹیکسوں کی مد میں جمع ہونے والی مجموعی رقم سے ایک ارب روپے کی لاگت سے ہندور یاسین روڈ تعمیر کیا جا رہا ہے جبکہ اس رقم سے گلگت بلتستان کے تمام ضلعی ہیڈ کوارٹرز کی تزئین و آرائش پر پچاس کروڑ روپے خرچ ہو رہے ہیں ٹیکسوں کے مد میں جمع ہونے والی رقم سے ہی گلگت بلتستان کونسل کے فی ممبر کو پانچ کروڑ روپے کا ترقیاتی بجٹ دیا گیا ہے جو عوام کی فلاح و بہبود پر خرچ ہونگے ۔ ڈپٹی سپیکر جعفر اللہ خان نے اظہار خیال کرتے ہوئے امریکی سیکریٹری دفاع کے بیان کو یکسر مسترد کرتے ہوئے اس کی شدید الفاظ یں مذمت کی اور کہا کہ امریکہ پاکستان کی قربانیوں کو تسلیم کرنے کے بجائے ڈو مور کی رٹ لگا رہا ہے لیکن پاکستان نے واضح پیغام دیا ہے کہ اب ڈومور کا نہیں نومور کا ہے ۔ انہوں نے اقتصادی راہداری منصوبے کو خطے کیلئے گیم چینجر قرار دیتے ہوئے اس عزم کا اظہار کے اکہ اس منصوبے کی کامیابی کے لئے کسی قسم کی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائیگا ۔ انہوں نے گلگت بلتستان کے آئینی حقوق سے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ آئینی حقوق کے حوالے سے گلگت بلتستان کی تمام سیاسی جماعتیں ایک پیج پر ہیں ۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ قانون ساز اسمبلی سے گلگت بلتستان کی آئینی حیثیت کے تعین سے متعلق قرار داد پر فوری طور پر عمل درآمد کیا جائے ۔ اس سلسلے میں وفاقی سطح پر باقاعدہ ایک کمیٹی کام کررہی ہے اور بہت جلد گلگت بلتستان کے عوا خوشخبری سنیں گے ۔ا نہوں نے ٹیکس کے نفاذ کے حوالے سے کہا کہ اس سلسلے میں باقاعدہ قرار داد پیش کی جائیگی اورنگزیب ایڈووکیٹ ، صوبائی وزیر حیدر خان ، اپوزیشن ممبر جاوید حسین ، کاچو امتیاز ، اپوزیشن لیڈر حاجی شاہ بیگ اور رضوان علی نے بھی امریکی سیکریٹری دفاع کے بیان کو شر انگیز اور اقتصادی راہداری منصوبے کو سبوتاژ کرنے کی سازش قرار دیتے ہوئے نہ صرف مسترد کر دیا بلکہ اس کی شدید الفاظ میں مذمت کی


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 




آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

گلگت بلتستان

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved