تازہ ترین  
پیر‬‮   17   دسمبر‬‮   2018

وزیراعلیٰ چاہتے ہیں اسمبلی میں صرف وہی بولیں،ایسانہیں ہوسکتا،شفیع خان


گلگت( بیورورپورٹ) قائد حزب اختلاف محمد شفیع خان نے کہا ہے کہ وزیراعلیٰ چاہتے ہیں کہ اسمبلی میں صرف وہ ہی بولیں اور اپوزیشن ممبران چپ سادھ لیں، ایسا نہیں ہوسکتا ہے ، اپوزیشن ممبران بھی معزز ایوان کا اسی طرح ہی حصہ ہیں جیسے کہ حکومتی اراکین ہیں، اسمبلی فلور میں حکومت بنچوں سے سوائے جھوٹ کی تشہیر کے علاوہ کچھ بھی نہیں ہوتا ہے، ہم اعتراض کریں تو اسمبلی کا ماحول خراب کیا جاتا ہے ، حکومتی بینچز کم از کم نئی اسمبلی بلڈنگ کا پاس رکھتے ہوئے جھوٹ سے پرہیز کریں، وزیراعلیٰ غیر ضروری چیزوں پر مداخلت کرتے ہیں۔ اوصاف سے گفتگو کرتے ہوئے حزب اختلاف کے قائد محمد شفیع خان نے کہا کہ صوبائی حکومت کے پاس زبانی جمع خرچ ہیں اور اس زبانی جمع خرچ کی قیادت حافظ حفیظ الرحمن احسن طریقے سے ادا کررہے ہیںجبکہ عوامی مسائل کم ہونے کی بجائے بڑھ رہے ہیں، اسمبلی سے منظور ہونے والے متعدد قرارداد سردخانے کی نذر ہوئے ہیں، عوامی منتخب نمائندوں کو دیوار سے لگانے کی کوشش کی جارہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ اپنے اختیارات سے تجاوز کرتے ہوئے غیر ضروری معاملات میں مداخلت کرتے ہیں جو افسوسناک ہے ، اسمبلی کا اجلاس طلب کرنے کا معاملہ سپیکر اسمبلی اور گورنر گلگت بلتستان کے درمیان کا ہے ، اس میں نہ وزیراعلیٰ کی سفارش کی ضرورت ہے اور نہ ہی ان کی منظوری کی ضرورت ہے، حافظ حفیظ الرحمن چاہتے ہیں کہ نئی اسمبلی میں بھی پرانی اسمبلی کی طرح ایک دن یا ڈیڑھ دن کا اجلاس منعقد ہوجائے جس میں عوامی مسائل ، حکومت کرپشن سمیت دیگر اہم اور سنجیدہ مسائل پر گفتگو نہ ہوسکے ، گورنر گلگت بلتستان نے اپنے اختیارات کے مطابق اسمبلی کا اجلاس طلب کیا ہے جو کہ احسن اقدام ہے ۔




 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

تازہ ترین خبریں




     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved