تازہ ترین  
منگل‬‮   11   دسمبر‬‮   2018

جگلوٹ تھانے میں شہری پرتشدد،عوام کاوزیراعلیٰ ہائوس کے باہردھرنا،کارروائی کیلئے 48گھنٹوں کی ڈیڈلائن


گلگت ( وقائع نگار خصوصی ) جگلوٹ کے عوام ڈٹ گئے ، عمائدین و نوجوانان جگلوٹ کا وزیر اعلیٰ ہائوس کے باہر احتجاجی دھرنا ، ایس ایچ او سمیت جگلوٹ تھانہ عملے کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ ۔ 48گھنٹوں میں کارروائی نہ کی گئی تو شاہراہ قراقرم بلاک کرنے کی دھمکی دیدی ، جگلوٹ پولیس قومیت کا رنگ دیکر شریف ہریوں پر بلا وجہ تشدد کرکے

خطے کے پر امن حالات خربا کرنے کی سازش کررہی ہے ۔ اگر پر امن خطے کے حالات خراب ہوئے تو تمام تر زمہ داری انتظامیہ پر عائد ہوگی ، احتجاجی دھرنے کے بعد عمائدین جگلوٹ کا اوصاف سے گفتگو ۔ عمائدین جگلوٹ صدر مسلم لیگ ن یوتھ ونگ عمران میر ، اجلال میر ، سمیع اللہ ، لطیف میر ، اسامہ قریشی اور دیگر نے اوصاف سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ حالیہے روز جگلوٹ ایس ایچ او اور تھانہ عملے نے جگلوٹ کے شریف شہری پر بلا وجہ تشدد کرکے ظلم کی انتہا کر دی ہے عوام جگلوٹ پولیس گردی کے خلاف سراپا احتجاج ہیں اعلیٰ حخام نے ظلم کرنے کے خلاف کارروائی کرنے کی یقین دہانی بھی کرا دی تھی لیکن تا حال کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے جس سے عوام میں سخت مایوسی پھیلی ہوئی ہے اور عوام نے پولیس عملے کے خلاف کارروائی نہ کرنے پر وزیر اعلیٰ ہائوس کے باہر دھرنا دیکر احتجج ریکارڈ کرایا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جگلوٹ پر امن خطہ ہے مگر بد قسمتی سے گزشتہ کئی سالوں سے جگلوٹ تھانے میں تعینات ایس ایچ اور اور اسکا عملہ جگلوٹ میں قومیت کا رنگ دیکر دیگر قوموں کیساتھ زیادتی کرکے پر امن خطے کو خراب

کرنے کی کوشش کررہے ہیں جسکے باعث پر امن خطے کے حالات خراب ہو سکتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے تشدد کرنے والے پولیس اہلکاروں کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے انہیں پڑی بنگلہ تھانہ ٹرانسفر کر دیا ہے جو جگلوٹ کے عوام کو قبول نہیں ۔ انہوں نے وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن سے پر زور مطالبہ کیا ہے ہک فوری نوٹس لیکر پر امن شہریوں پرتشدد کرنے میں ملوث ایس ایچ او ولی اللہ ، اے ایس آئی ریاض احمد ، پولیس کانسٹیبل مجیب ، محمد عابس اور میر افضل کے خلاف قانونی کارروائی کرنے کے احکامات جاری کریں اگر عوام کے تحفظات دور نہ کئے گئے تو جگلوٹ کے عوام پولیس گردی کے خلاف سڑکوں پر نکل پر احتجاج پر مجبور ہونگے اور شاہراہ قراقرم کو بلاک کیا جائیگا ۔




 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

تازہ ترین خبریں




     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved