تازہ ترین  
ہفتہ‬‮   19   جنوری‬‮   2019

گلگت پولیس نے داریل کارہائشی راکٹ لانچراوربارودی مواد سمیت دھرلیا(تفتیش کیلئے جے آئی ٹی تشکیل)


گلگت ( محمد ذاکر سے ) گلگت پولیس نے کامیاب کارروائی کرتے ہوئے داریل سمیگال کے رہائشی محمد روان سے راکٹ لانچر سمیت راکٹ کے گولے برآمد کر لئے ، تفتیش کیلئے جے آئی ٹی تشکیل ، گرفتار ملزم سے اہم انکشافات متوقع ، محکمہ پولیس نے بر وقت کارروائی کرکے مشکوک شخص سے راکٹ لانچر اور گولے برآمد کرکے گلگت کو تباہی سے بچانے پر ایس ایچ او جوٹیال اسحاق حسین اور پوری ٹیم کو نقد انعام دینے کا اعلان کر دیا ۔ ایڈیشنل ایس پی گلگت محمد ایاز ، اے ایس پی گلگت سٹی سلمان نے مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے کہ گلگت بلتستان میں سی پیک میگا منصوبے پر کام جاری ہے ، ملک دشمن لوگ سی پیک کو ناکام کرنے کیلئے مختلف حربوں کے ذریعے خطے میں افرا تفری پھیلانے کی کوشش کررہے ہیں محکمہ پولیس نے ملک دشمنوں کو ناکام کرنے اور سی پیک جیسے منصوبوں کی کامیابی کیلئے سیکورٹی اداروں کو ہائی الرٹ کر دیا ہے جسکے تحت سرچ آپریشن جاری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مورخہ 26دسمبر سہہ پہر تین بجے کے قریب مخبر نے ایس ڈی پی او دنیور کو اطلاع دی کہ مناور کے مقام پر مشکوک شخص ایک تھیلے میں کوئی سامان لیکر گھوم رہا ہے ۔ ایس ایس پی گلگت تنویر الحسن کے حکم پر ایس ڈی پی او دنیور کے زیر نگرانی ایس ایچ اور جوٹیال اسحاق اور خفیہ اداروں نے بر وقت کارروائی کرکے مناور کے مقام پر مشکوک شخص سے ایک عدد راکٹ لانچر سمیت راکٹ کے گولے برآمد کرکے ملزم کو انوسٹی گیشن ونگ منتقل کر دیا اور تحقیقات کا دائرہ کار وسیع کرنے کیلئے جے آئی ٹی تشکیل دیدی ہے ۔ گرفتار ملزم محمد روان ولد محمد عیسیٰ فاروق آباد سمیگال تحصیل داریل ضلع دیامر کے خلاف دہشت گردی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے جس سے تفتیش جاری ہے ۔ جے آئی ٹی کی مکمل تفتیش کے بعد اصل حقائق میڈیا کے ذریعے عوام کے سامنے لائے جائینگے۔ انہوں نے کہا کہ سردیوں میں چوروں کا گروہ فعال ہو گیا ہے جنکے خلاف بھی سرچ آپریشن کیلئے ٹیمیں تشکیل دی ہیں ، منشیات فروشوں اور لینڈ مافیا نے شہریوں کا جینا محال کر دیا ہے جن کے خلاف بھی کارروائیاں کی جا رہی ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ محکمہ پولیس نے فیصلہ کیا ہے کہ آئندہ متعلقہ تھانوں کے ایس ایچ اوز کی کارکردگی کی بنیاد پر ترقی دی جائیگی غفلت کے مرتکب ذمہ داروں کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لائی جائیگی ۔




 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

تازہ ترین خبریں




     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved