09:58 am
رہبر کمیٹی کا کوئی مستقل چئیرمین نہیں ہو گا

رہبر کمیٹی کا کوئی مستقل چئیرمین نہیں ہو گا

09:58 am


اسلام آباد: حکومت کے خلاف بنائی گئی متحدہ اپوزیشن کی رہبر کمیٹی کا آج پہلا اجلاس ہوا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ رہبر کمیٹی کا کوئی مستقل چئیرمین نہیں ہو گا جبکہ کمیٹی کے ہر اجلاس میں الگ الگ اراکین سے صدارت کروائی جائے گی۔ تفصیلات کے مطابق اپوزیشن کی رہبر کمیٹی کا پہلا باضابطہ اجلاس آج وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں ہوا جس میں کمیٹی کا مستقل چیئرمین نہ منتخب کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔نئے چیئرمین سینیٹ کےنام پر مشاورت بھی کی گئی، ملکی سیاسی صورتحال اور آئندہ کی مشترکہ حکمت عملی پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ رہبرکمیٹی کے پہلے اجلاس کی صدارت جے یو آئی ف کے اکرم درانی نے کی جبکہ تمام گیارہ ارکان شریک ہوئے۔

 

شاہد خاقان عباسی کے مطابق اجلاس میں اتفاق کیا گیا کہ رہبر کمیٹی کا کوئی مستقل چئیرمین نہیں ہوگا، باری باری تمام ارکان سے اجلاس کی صدارت کرائی جائے گی۔جمعہ کے وقفے کے بعد اجلاس دوبارہ شروع ہوا تو چئیرمین سینیٹ کے لیے تین آپشنز زیر غور آئے، پہلے آپشن کے تحت نئے چیئرمین سینیٹ کا اُمیدوار سب سے بڑی اپوزیشن جماعت کا ہونا چاہئیے، دوسری تجویز میں کہا گیا کہ چئیرمین سینیٹ کے لئے دو بڑی جماعتوں کے تجویز کردہ شخص کو متفقہ اُمیدوار نامزد کیا جائے جبکہ تیسری یہ تجویز سامنے آئی کہ تمام اپوزیشن جماعتیں مل کر ایسا اُمیدوار لائیں جس پر کسی کو اعتراض نہ ہو۔ان تجاویز پر حتمی فیصلے کے لیے اپوزیشن جماعتوں کے اراکین سر جوڑ کر بیٹھ گئے۔ خیال رہے کہ چئیرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی جگہ پاکستان پیپلز پارٹی نے تین اُمیدواروں کو گذشتہ روز نامزد کیا تھا ، نامزد کیے جانے والے اُمیدواروں میں رضا ربانی ، سلیم مانڈوی والا اور رحمان ملک کے نام شامل ہیں۔

تازہ ترین خبریں