تازہ ترین  
منگل‬‮   13   ‬‮نومبر‬‮   2018

جہالت کی انتہا پڑوسی ملک کاایک ایساگائوں جہاں عورتوں کومردوں کے سامنے چپل پہننے تک کی اجازت نہیں


جے پور(ویب ڈیسک) دمکتے چمکتے بھارت کے ویسے تو دنیا بھر میں چرچے رہتے ہیں، اور خود ہندوستانی حکومت اپنی تعریفیں کرتے نہیں تھکتی، دنیا کی سب سے بڑی سیکولر جمہوریت کا دعویٰ کرنے والے بھارت میں جہاں ذات پات کے مسائل بڑا مسئلہ ہیں، وہیں خواتین کو تو انسان ہی نہیں سمجھا جاتا، ایک حالیہ رپورٹ کے سامنے آنے سے پتہ چلا ہے

کہ بھارت کے ایک گاؤں میں خواتین کو مردوں کے سامنے چپل پہننے کی اجازت تک نہیں، بھارت کی وسطی ریاست مدھیہ پردیش کے چمبل ڈویژن کے ایک گاؤں آمیٹھ میں خواتین مردوں کے سامنے چپل نہیں پہن سکتیں۔انھیں مردوں کے سامنے آنے یا ان کے سامنے سے گزرنے کے لیے چپل اتار کر ننگے پاؤں چلنا پڑتا ہے۔تفصیلات کے مطابق بھارتی ریاست مدھیہ پردیش کے گاؤں آمیٹھ میں خواتین کو مردوں کے سامنے چپل پہننے تک کی اجازت نہیں، بھارتی میڈیا کے مطابق مطابق تقریباً 1200 افراد پر مشتمل اس گاؤں میں خواتین کی آبادی تقریباً 500 ہے۔ صبح سویرے آمیٹھ کی خواتین پانی کے لیے تقریباً ڈیڑھ کلو میٹر کا سفر کرتی ہیں جہاں ایک چشمے سے پانی حاصل ہوتا ہے۔گھر کے لوگوں کے لیے پانی کا انتظام کرنے میں انھیں روزانہ 7،8 گھنٹے لگتے ہیں۔ ایک ایسی ہی خاتون ششی بائی کا کہنا تھا کہ انھیں گھر اور سماج میں وہ عزت نہیں ملتی جس کی وہ مستحق ہیں۔




 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

تازہ ترین خبریں


کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved