قمیص میں کتنے سوراخ ہیں؟نہایت سادہ مگر انتہائی چیلنجز سے بھرپورسوال
  14  ‬‮نومبر‬‮  2017     |     دلچسپ و عجیب

انٹرنیٹ پر صارفین کی ذہانت کو جانچنے کے لیے مختلف لوگوں کی طرف سے نت نئی تصاویر آنے کا سلسلہ کوئی نیا نہیں اس لیے لوگ انہیں حل کرنے میں دلچسپی بھی ظاہر کرتے ہیں۔دنیا کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے لوگ اپنے اپنے متعلقہ اداروں سے متعلق پہیلیاں پوچھتے ہیں جیسے کہ فوٹو گرافر کچھ تصاویر بنا کر اُن میں چھپی چیز تلاش کرنے کا چیلنج دیتے ہیں جبکہ کچھ پزل بھی سامنے آتے ہیں۔سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی تصاویری پہیلیاں آسان ہونے کے باوجود صارفین کو سر پکڑنے پر مجبور کردیتی ہیں، زیر گردش تصویر ایک قمیص کی ہے جس میں پوچھا گیا ہے کہ اس میں کتنے سوراخ ہیں؟انٹرنیٹ پر صارفین کی ذہانت کو جانچنے کے لیے مختلف لوگوں کی طرف سے نت نئی تصاویر آنے کا سلسلہ کوئی نیا نہیں اس لیے لوگ انہیں حل کرنے میں دلچسپی بھی ظاہر کرتے ہیں۔دنیا کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے لوگ اپنے اپنے متعلقہ اداروں سے متعلق پہیلیاں پوچھتے ہیں جیسے کہ فوٹو گرافر کچھ تصاویر بنا کر اُن میں چھپی چیز تلاش کرنے کا چیلنج دیتے ہیں جبکہ کچھ پزل بھی سامنے آتے ہیں۔سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی تصاویری پہیلیاں آسان ہونے کے باوجود صارفین کو سر پکڑنے پر مجبور کردیتی ہیں، زیر گردش تصویر ایک قمیص کی ہے جس میں پوچھا گیا ہے کہ اس میں کتنے سوراخ ہیں؟ مذکورہ تصویر میں انتہائی سادہ سوال پوچھا گیا ہے کہ ’قمیص میں کتنے سوراخ موجود ہیں؟‘۔ سوال سننے کے بعد یقیناً آپ بھی فورا جواب دیں گے مگر اس کا صحیح جواب دینے کے لیے ہم آپ کو کچھ وقت دیتے ہیں۔

صحیح جواب کے لیے اسکرول کریں جی ہاں! قمیص میں8 سوراخ موجود ہیں کیونکہ گلے، دو آستینوں اور دامن کے چار سوراخ سمیت جہاں سے ٹی شرٹ پہنی جائے ان سب کوملا کر درست تعداد 8 بنتی ہے۔دامن کے 4 سوراخ اس طرح ہیں کہ ٹی شرٹ سے بیک گراؤنڈ بھی نظر آرہا ہے یعنی یہ دو سوراخ سامنے پیٹ کی طرف اور وہی دو سوراخ کمر کی طرف کپڑے پر بھی ہیں۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
50%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
50%


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

دلچسپ و عجیب

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved