میں نا اہل نہیں ہوں۔۔میں پیش بھی نہیں ہوں گا کیونکہ۔۔نوازشریف نے عدالت کو اپنا جواب دے ڈالا
  7  فروری‬‮  2018     |     دلچسپ و عجیب

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سابق وزیراعظم نواز شریف نے نااہلی کی مدت کے تعین سے متعلق کیس میں فریق نہ بننے کا فیصلہ کرتے ہوئے باسٹھ ون ایف کی تشریح کیس سے متعلق اپنا جواب سپریم کورٹ میں جمع کرا دیا ہے۔منگل کے روز ایڈووکیٹ آن ریکارڈ کے زریعے جمع کرائے گئے جواب میں نواز شریف نے موقف اختیار کیا ہے کہ وہ درخواست گزار یا مقدمہ میں فریق نہیں ہیں لیکن اگر فریق ہوتے تو جسٹس عظمت سعید شیخ اور جسٹس اعجاز الا حسن سے مقدمہ کی کارروائی سے الگ ہونے کی درخواست کرتے، نواز شریف نے اپنے جواب میں کہا ہے کہ جسٹس شیخ عظمت سعید اور جسٹس اعجاز الا احسن میری اہلیت کے مقدمہ میں شامل رہے اور اپنی رائے دے چکے ہیں، کئی متاثرہ فریق عدالت کے روبرو ہیں ان کے مقدمہ کو متاثر نہیں کرنا چاہتا، نواز شریف نے کہا ہے کہ طے شدہ اصول ہے کہ انتخابات میں حصہ لینا بنیادی حق ہے، آئین کے آرٹیکل باسٹھ ون کے تحت

تاحیات نا اہلی نہیں ہو سکتی نواز شریف نے کہا ہے کہ آرٹیکل 62 ون ایف میں پارلیمنٹ نے کوئی مدت کا تعین نہیں کیا، نا اہلی صرف اس الیکشن کے لیے ہو گی جس کو چیلنج کیا گیا ہو، نواز شریف نے اپنے جواب میں مزید کہا ہے کہ جمہوریت پر پختہ یقین رکھتا ہوں، انتخابات میں حصہ لینا پاکستان کے عوام کا حق ہے، عوام کا حق ہے کہ وہ کسے منتخب کریں یا کسے مسترد کریں، درست جمہوری عمل کے زریعے عوام کو اپنی نمائندے منتخب کرنے کا نا قابل تنسیخ حق ہے، نواز شریف نے اپنے جواب میں کہا ہے کہ ایسا نہیں کہ نکالنے کا عمل شروع کر کے عوامی نمائندوں کو منتخب کرنے کے لیے ایک مخصوص فہرست دی جائے


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
100%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

دلچسپ و عجیب

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved