انصاف کی فراہمی میرا مشن ہے، راجہ محمد فاروق
  13  ‬‮نومبر‬‮  2017     |      کشمیر

راولاکوٹ (پی آئی ڈی)وزیر اعظم آزاد کشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ انصاف کی فراہمی میرا مشن ہے، مستحق اور مجبور عوام کی فلاح و بہبود کیلئے اقدامات اٹھاتا رہوں گا چاہے اس کیلئے کوئی بھی قیمت اٹھانی پڑے ۔ دنیا کی تیز ترین ترقی میں شامل ہونے کیلئے ہمیں جدید تعلیمی نظام کو اپنا نا ہوگاتاکہ ہم ایک ترقی یافتہ قوم بن کر سامنے آسکیں ۔جوڈیشل پالیسی کی تشکیل، شریعت اپیلٹ بینچ، فیملی کورٹس کا قیام اور ہائی کورٹ کے ججز کی تعداد میں بھی اضافہ کیا گیا ہے تاکہ عوام کو بروقت اور سستے انصاف کی فراہمی ممکن ہو سکے۔ 16کروڑ روپے کی لاگت سے آزادکشمیر کے اندر فوڈ ٹیسٹنگ لیبارٹری قائم کی جارہی ہے ۔ بدقسمتی سے آزادکشمیر 85ہزارسرکاری ملازمین کیلئے ویلفئیر سٹیٹ بنا دیا گیا تھا جس کو بدلنے کیلئے بھرپور کوشش کررہے ہیں ۔ راولاکوٹ کو سیاحت کا مرکز بنائیں گے۔ وکلاء نے ہمیشہ میں عزت افزائی کی میں وہ واحد وزیر اعظم ہوں جسے منگلا پل پر وکلاء نے کندھوں پر اٹھا کر کراس کیا۔ مجھے یقین ہے کہ ریاست کے اندر نظام کو بدلنے اورعوام تک سستے انصاف کی فراہمی کیلئے وکلاء برادری میری معاونت جاری رکھے گی۔ اللہ رب العزت سے وعدہ کیا ہے کہ انصاف قائم کرنے کیلئے جو کچھ بھی میں کر سکا کرونگا۔ وکلاء کو بے یارومددگا نہیں چھوڑا جائیگا ان کے علاج معالجے سمیت دیگر مسائل کا حل اولین ذمہ داری ہے ۔ان خیالات کا اظہار وزیر اعظم آزادکشمیر نے ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن پونچھ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر ڈسٹرکٹ بار ایسو سی ایشن پونچھ کے صدررسردار اعجاز نے بھی خطاب کیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ سپریم کورٹ اور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس صاحبان کا شکرگزار ہوں جن کے تعاون کے باعث ماتحت عدلیہ میں بھی تقرریاں آزادجموں وکشمیر پبلک سروس کمیشن کے ذریعے ہونگی۔ پاکستان کے آئین میں ٹیکنو کریٹ حکومت کی کوئی گنجائش نہیں، اس کی تجویزیں دینے والوں کے خلاف آرٹیکل 6کے تحت مقدمات درج کیے جائیں ۔ہمارا بدترین مخالف بھی الیکشن جیت کر آجائے تو سر آنکھوں پر مگر غیر آئینی طریقہ کار سے حکومت کی تبدیلی قبول نہیں ۔انہوں نے کہا کہ آزاد کشمیر ہائی کورٹ میں ججز کی تعداد بڑھا دی گئی ہے جن پر جلد میرٹ پر تقرریان ہونگی۔ میرٹ کی بحالی مساویانہ تعمیر و ترقی موجودہ دور میں آسان کام نہیں تھا مگر پارلیمانی پارٹی اور کارکنوں کی بھرپور سپورٹ کی وجہ سے یہ ممکن ہو رہا ہے ۔ نیلم جہلم ہائیڈرل پاور پراجیکٹ کے اوپر جلد معاہدہ ہوگا۔اپنی موجودگی میں پاکستان کے خلاف آزادکشمیر میں کسی کو بات نہیں کرنے دونگا۔ مجھے کسی گورننس کے لیکچر کی ضرورت نہیں ۔مجھے گورننس کے لیکچر دینے والے بتائیں کہ خود انہوں نے اپنے دور میں کیا کیا ہے ۔ اپنے عمل سے لوگ فیصلہ کرینگے کہ ہم نے کیسی گورننس کی۔ گھر جانے والے سابق وزیر کو بہت زعم ہوتا ہے کہ اس نے بہت کمالات کیے ہیں جبکہ موجودہ ٹیکنالوجی کے دور میں کوئی بات کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہے ۔

انہوں نے کہا کہ میاں نواز شریف نے آزادکشمیر کی تعمیر و ترقی کیلئے بجٹ دوگنا کیا اوراہم معاملات پر آزادحکومت کا موقف تسلیم کیا ۔ صدرسردار محمد مسعود خان کا انتخاب بطور صدر اس لیے کیا گیا کہ وہ سفارتکاری پر عبور رکھتے ہیں اور مسئلہ کشمیر کو دنیا کے سامنے بہترین انداز میں رکھیں گے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ آزادکشمیر کے اندر اتنے بڑے انتظامی ڈھانچے کے فوائد عام آدمی تک نہیں پہنچ رہے اس کو عوام تک پہچانے کیلئے اقدامات اٹھا رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ خواتین مردوں کے برابر کی شہری ہیں ان کی فلاح و بہبودکیلئے بھی خصوصی اقدامات اٹھائیں گے۔وزیر اعظم نے کہا کہ جس دن نوازشریف کو برطرف کیا گیا اسی روزآزادکشمیر کے ایکٹ میں ترامیم کے حوالے سے ان کی زیر صدارت اعلیٰ سطحی اجلاس منعقد ہونا تھا،زندگی کی بڑی خواہش ہے کہ ایکٹ 74میں ضروریات کے پیش نظرترامیم کی جائیں۔اس موقع پر وزیر اعظم نے اس موقع پر راولاکوٹ میں بار روم کی تعمیرکا اعلان ،بار کیلئے 10لاکھ روپے گرانٹ کا اعلان اورکھائی گلہ سے تولی پیر تک سڑک بنانے کا اعلان بھی کیا۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

کشمیر

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved