برنالہ،ماحولیاتی آلودگی شہریوں کیلئے وبال جان بن گئی
  13  ‬‮نومبر‬‮  2017     |      کشمیر

برنالہ ( نمائندہ خصوصی )ماحولیاتی آلودگی شہریوں کیلئے وبال جان بن گئی ۔ برقت بارشیں نہ ہونے کے باعث امراض میں اضافہ پرائیویٹ کلینک ہسپتالوں کے ڈاکٹر زکی لاکھوں کی دیہاڑیاں لگنے لگی۔ہسپتالوں کلینک میں بے پناہ رش ،ہر دوسرا شخص ادویات لینے پر مجبور ۔ مین بازار و اندرون مارکیٹ میں جگہ جگہ گندگی کچرے کے ڈھیر، مٹی ،دھول سے گلے کے امراض ، الرجی ،ٹی بی ،دمہ ،سانس کی بیماریوں نے شہریوں کو گھیرے میں لے لیا ۔تحصیل برنالہ کے بازاروں کڈہالہ ،برنالہ ،موئیل میں ہسپتالوں کے آس پاس گندگی کے ڈھیر ٹاؤن کمیٹی کے فعال نہ ہونے سے مزید مشکلات بڑھ سکتی ہیں ۔ تفصیلات کے مطابق ماحولیاتی آلودگی کی بڑی وجہ آبادی کے قریب کریش مشینوں کا ہونا ہے اور جنگلات کی کٹائی اور ٹمر مافیا ہے

۔سینکڑوں ڈیمپرز ،ٹریکٹرز ٹرالیوں ، ٹرک ، لوڈرز گاڑیوں کے اندر ریت ،مٹی ،پتھر مین روڈ پر جگہ جگہ بکھرے نہیں آتے ہیں دوکانوں ،محلوں ،مین بازاروں، ہسپتالوں کے ویسٹج میٹریل کو ضائع کرنے کا کوئی جامع نظام نہیں ہے ۔ مین روڈ کے دونوں اطراف سالوں سے بند نالیاں دلدل بن چکی ہیں جن کے اندر گندا کیچڑ مچھروں کی اماجگاہ بن گیا ہے ۔ بارشوں کے نہ ہونے سے ماحول آلودہ رہنے لگا ہے فضائی آلودگی سے سانس کی مختلف بیماریاں انسانوں کی قیمتی جانیں نگل رہی ہیں ۔ عوامی حلقے گورنمنٹ آزاد کشمیر کے اعلی آفیسران سے اور محکمہ صحت و ماحولیات سے اپیل کرتے ہیں کہ صفائی نصف ایمان ہے پر عمل پیرا ہوتے ہوئے تحصیل برنالہ میں فل فور ٹاؤن کمیٹی کو فعال کیا جائے اور ساتھ ساتھ فیکٹریوں ،کریش مشینوں کو شہر سے باہر نکالا جائے تاکہ ماحول صاف ستھرا ہو سکے اور ہسپتالوں ،پرائیو ٹ کلینک ،بازاروں کا ویسٹج زمین کے اندر دفن کیا جانا ضروری ہے کیونکہ موزی امراض ،ہپاٹائٹس سی ، معدے کا سرطان ، جلد کے امراض ،دمہ سانس کی بیماریاں ،ٹی بی جیسی خطر ناک بیماریاں گندگی کی وجہ سے پھیل رہی ہیں جو کہ مستقبل قریب میں ختم ہوتی دیکھائی نہیں دیتی ۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

کشمیر

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved