مظفرآباد،فنی ملازمین برقیات نے دارالحکومت مظفرآباد سمیت ریاست بھر میں شدید احتجاج کیا
  13  فروری‬‮  2018     |      کشمیر

مظفرآباد (سٹاف رپورٹر) برقیات فنی ملازمین کی ریاست گیر ہڑتال میں شد ت آگئی۔ فنی ملازمین برقیات نے دارالحکومت مظفرآباد سمیت ریاست بھر میں شدید احتجاج کیا ۔ ہڑتالی ملازمین کی حمایت میں 28 ملازمین تنظیموں کی نمائندہ تنظیم جائنٹ سپریم کونسل آزاد جموں وکشمیر میدان میں کود پڑی۔ حکومت کی 24گھنٹوں کا الٹی میٹم دے دیا۔ ہڑتالی ملازمین نے چیف انجینئر برقیات سمیت تمام بالا آفیسران کے ماتحت کام نہ کرنے ، ایمرجنسی بجلی سروس معطل کرنے ، بجلی بلات تقسیم نہ کرنے ، ہر قسم کی ریکوری نہ کرنے کی دھمکی دے دی۔ جس سے حکومت آزادکشمیر کو تین ارب سے زائد کا نقصان کا خطرہ پیدا ہو گیا۔ ملازمین برقیات نے کام چھوڑ ہڑتال کرنے کا بھی اعلان کر دیا ۔ ریاست گیر بجلی شٹ ڈاؤن ہونے کا سنگین خطرہ پیدا ہو گیا۔ جس سے آزاد جموں وکشمیر تاریکی میں ڈوب جائے گا۔ہڑتالی ملازمین برقیات فنی کے چیئرمین اسد نقوی ، راجہ علی افسر ، مدثر اعوان ، راجہ بدر السلام ، ذوالفقار منہاس، خواجہ سلیم، خواجہ رضوان اکبر، گلفام قریشی، میر نصیر احمد اور دیگر نے وزیراعظم راجہ فاروق حیدر سے نوٹس لینے کی اپیل کر دی۔ دارالحکومت مظفرآباد میں برقیات دفتر کے آٹھویں روز بھی ہڑتال جاری رہی۔ ملازمین کا جمے غفیرہڑتال میں اُمڈ آیا ہڑتالی ملازمین نے حکومت سے واپڈا رولز کے مطابق گریڈ 1تا 16کی اپ گریڈیشن ، برقیات ملازمین کو واپڈا ملازمین کے برابر ٹائم سکیل، ریسک الاؤنس ،برقیات فاؤنڈیشن ، ورکچارج ملازمین کی مستقلی ، برقی حادثہ کے دوران ، جاں بحق ہونے والے اہلکاروں کو فی کس 10,10لاکھ روپے معاوضہ ادائیگی ، آفیسرکے گھروں میں تعینات 200 چھوٹے ملازمین کے واپسی، غیر قانونی بھرتیوں کے آرڈر کی منسوخی ، براہ راست ترقیوں کا خاتمہ، لائن مین ، میٹر ریڈر اور سپروائزر کی آسامیوں کی تخلیق ، بوسیدہ لائنوں کی تبدیلی ، ریکوری شعبہ کمرشل کے حوالے کرنے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ گزشتہ روز مظفرآباد میں مظفرآباد ڈویژن کے ملازمین نے مظاہر ہ میں شرکت کی۔ مظاہر ہ جائنٹ سپریم کونسل آزاد جموں وکشمیر کے صدر راجہ طاہر خان چیئرمین فنی ملازمین اسد نقوی ، راجہ علی افسر ، راجہ بدر السلام، ذوالفقار منہاس، خواجہ سلیم ، عبدالمجید عباسی، عدنان ظہیر ، چوہدری خالد، چوہدری منیر، نثا راعوان ، راجہ وقاص ، خواجہ رضوان اکبر، چوہدری نذیر ، راجہ ظہیر ، راجہ مشتاق، نسیم شاہ، چوہدری بشیر، نصیر حسین ، گلفام قریشی، میر نصیر احمد مظہر علی ، نجم رشید ، ظہیر نقوی ، محمد ارشد اعوان، اشتیاق قریشی، ذوالفقار منہاس، ظہیر حسین مغل ، خالد حمید ، چوہدری عالم دین، شفیق الرحمن ،

سلیم اعوان، شاہد منظور اور دیگر نے خطاب کیا۔ 21 نکاتی چارٹر آف ڈیمانڈ پر عمل درآمد کا مطالبہ کیا ۔ بصورت دیگر غیر معینہ مدت احتجاج جاری رکھنے کا اعلان کیا۔ جائنٹ سپریم کونسل کے مرکزی صد رراجہ طاہر مجید نے اعلان کیا کہ 24گھنٹوں کے اندر حکومت 21نکاتی چارٹر آف ڈیمانڈ پر عملدرآمد کرے بصورت دیگر 80ہزار ملازمین ہڑتال میں شامل ہو جائیں گے۔ہم حکومت کے خلاف نہیں اور نہ ہی حکومت کے لیے مشکلات پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ حکومت سنجیدگی کا مظاہر کرے ۔ ملازمین کے مطالبا ت جائز ہیں۔ غیر جریدہ ملازمین کے ساتھ سراسر نا انصافی ہو رہی ہے۔ تیس تیس سالوں سے جن کی ترقیاں رکی ہوئی ہیں سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ملازمین کے ساتھ ہونے والی نا انصافی پر سو موٹو ایکشن لیں۔ چھوٹے ملازمین شدید سردی میں سڑکوں پر نکل اپنا حق مانگ رہے ہیں ان کی فریاد سننے والا کوئی نہیں ہے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کشمیر

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved