پیرامیڈیکل سٹاف ایسوسی ایشن نے سوائے ایمرجنسی کے کام چھوڑہڑتال کا اعلان کردیا،چوہدری بشیر
  13  فروری‬‮  2018     |      کشمیر

راولاکوٹ (نمائندہ خصوصی) ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ آزادکشمیر چوہدری بشیر پر مظفرآباد کے ایک وکیل کی طرف سے مبینہ حملہ کے خلاف آزادکشمیر بھر میں ڈاکٹرز ، پیرامیڈیکل سٹاف ایسوسی ایشن نے سوائے ایمرجنسی کے کام چھوڑہڑتال کا اعلان کردیا اور واضح کیا ہے کہ جب تک حملہ آور ہونے والے راجہ شہباز ایڈووکیٹ کو گرفتار نہیں کیا جاتا اس وقت تک ہڑتال جاری رہے گی اور آزادکشمیر بھر میں سخت ترین احتجاج کیا جائیگا،گزشتہ روز منگل کو پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن ( پی ایم اے ) آزادکشمیر کے مرکزی صدر ڈاکٹر واجد علی خان ، پیر امیڈیکل سٹاف ایسوسی ایشن کے مرکزی سرپرست اعلیٰ سردار خالد محمود نے ہنگامی اجلاس طلب کیا جس میں موجودہ صورت حال کا جائزہ لیا گیا اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ جب تک مذکورہ وکیل کو گرفتار کرکے قرار واقعی سزانہیں دی جاتی ہے اس وقت تک آزادکشمیر بھر میں سوائے ایمرجنسی کے ڈاکٹرز اور پیرامیڈیکل ہڑتال پر رہیں گے ، ڈاکٹر واجد علی خان ، سردار خالد محمود خان جو کہ ہنگامی طور پر مظفرآباد روانہ ہوئے ،روانگی سے قبل انہوں نے صحافیوں کو بتایا کہ مبینہ طور پر گزشتہ روز منگل کو ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ چوہدری بشیر اپنے دفتر میں بیٹھے تھے کہ مذکورہ وکیل نے ایک اہلکار کے تبادلہ کیلئے ان پر دباؤ ڈالا جس پر ڈی جی ہیلتھ نے انہیں ضابطہ کے تحت کارروائی اور تبادلہ کی یقین دہانی کروائی مگر وکیل نے انہیں سخت نتائج کی دھمکیاں دیں اور ان پر حملہ کردیا جس کی وجہ سے آزادکشمیر بھر میں محکمہ صحت کے افسران اور ملازمین میں تشویش کی لہر پائی جاتی ہے ، ڈائریکٹر جنرل جیسے منصب فائز شخص اگر محفوظ نہیں تو پھر عام افسران اور ملازمین کا تحفظ کیسے ممکن ہو گا ،

اس سے قبل بھی ڈاکٹرز اور پیرا میڈیکس کو ہراساں کرنے اور انہیں تشدد کا نشانہ بنانے کے درجنوں واقعات رونما ہو چکے ہیں جس پر ابھی تک متعلقہ اداروں نے موثر کارروائی نہیں کی جس کی وجہ سے ایسے عناصر کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے ،وزیر اعظم آزادکشمیر ، چیف سیکرٹری ، آئی جی پولیس ، سیکرٹری ہیلتھ فوری اس گھناؤنے قدم کا نوٹس لیں اور حملہ آور کے خلاف کڑا مقدمہ قائم کرکے اسے سخت سزاد ی جائے اور ڈاکٹرز سمیت محکمہ صحت کے جملہ عملہ کو تحفظ فراہم کیا جائے وگرنہ ایسے حالات میں افسران اور ملازمین اپنی خدمات جاری نہیں رکھ سکتے ۔ ادھر ڈی ایچ او آفس میں ڈی جی ہیلتھ پر حملہ کی اطلاع ملنے پر تمام دفتری امور پر روک دیا گیا اور افسران اور ملازمین نے ہڑتال کردی ، ڈی ایچ او پونچھ ڈاکٹر محمد داؤد بھی اطلاع پر مظفرآباد روانہ ہوگئے ، انہوں نے حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ حملہ آور کے خلاف مقدمہ درج کرکے اسے گرفتار کیا جائے اور قرار واقعی سزاد ی جائے ۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

کشمیر

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved