11:58 am
بکس  میرٹ بحال  ہوا ،بائیومیٹرک حاضری سسٹم آنے کے بعد  سرکاری سکولوں میں اساتذہ کی حاضری  میں بہتری آئی ہے

بکس میرٹ بحال ہوا ،بائیومیٹرک حاضری سسٹم آنے کے بعد سرکاری سکولوں میں اساتذہ کی حاضری میں بہتری آئی ہے

11:58 am

N-9(تصویر ہمراہ ہے) میرٹ بحال ہوا ،بائیومیٹرک حاضری سسٹم آنے کے بعد سرکاری سکولوں میں اساتذہ کی حاضری میں بہتری آئی ہے حکومتی اقدامات کی باعث سرکاری تعلیمی اداروں پر عوامی اعتماد میں اضافہ ہوا ہے ،بشارت اقبال کا انٹرویو میرپور(اوصاف فورم/رشید طالب)ڈسڑکٹ ایجوکیشن آفیسرراجہ بشارت اقبال نے کہا ہے موجودہ دورمقابلے کوالٹی آف ایجوکیشن کا دورہے ۔ ہم سرکاری تعلیمی اداروں میں کوانٹٹی کیساتھ ساتھ کوالٹی آف ایجوکیشن کی طرف بھی بھرپور توجہ دے رہے ہیں تعلیمی معیار میں بہتری کوالٹی آف ایجوکیشن کیلئے محکمہ تعلیمات سیکرٹری ایجوکیشن اورڈی پی آئی کی قیادت و سربراہی میں بھرپور اقدامات اٹھا رہا ہے جس سے سرکاری تعلیمی اداروں کے تعلیمی معیار کارکردگی تعلیمی نتائج میں بھی کافی بہتری آئی ہے اور سرکاری تعلیمی اداروں پر عوامی اعتماد میں بھی بھرپور اضافہ ہوا ہے جسکی واضح مثال ضلع بھر کے سرکاری سکولوں میں ہزاروں کی تعداد میں نئے داخلوں کا ہونا ہے ۔ این ٹی ایس ، پی ایس سی کے توسط سے اہلیت اور میرٹ پر پورا اترنے والے اہل ذہین لوگوں کو ان کا حق مل رہاہے جسکی وجہ سے شعبہ تعلیم کی ساکھ اورکاردگی میں مزید بہتری آئی ہے اورلوگوں کے اعتماد میں بھی اضافہ ہواہے بائیو میٹرک حاضری سسٹم حکومت اور محکمہ تعلیمات کااہم کارنامہ ہے بائیو میٹرک سسٹم کے نفاذ سے اساتذہ اور دیگر سٹاف کی حاضری 100فیصدہوچکی ہے بائیو میٹرک حاضری سسٹم کی وجہ سے اساتذہ کی حاضری میں بہتری کیساتھ ساتھ کارکردگی میںبھی خاطرخواہ بہتری آئی ہے سیکرٹری تعلیمات کے احکامات کی روشنی میں تعلیمی شعبہ میں اصلاحات کا یہ عمل جاری رہے گا ۔ ان خیالات کا اظہار ڈسڑکٹ ایجوکیشن آفیسر (مردانہ)راجہ بشارت اقبال نے ’’اوصاف‘‘فورم میں تفصیلی گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ انہوںنے کہا کہ بہترمعیاری تعلیم کوالٹی آف ایجوکیشن کا فروغ ہماری اولین ترجیحی ہے اس مقصد کے حصول کیلئے بھرپور اور منظم انداز میں کام کیا جارہا ہے موجودہ دورچونکہ مقابلے کا دورہے ، کوالٹی آف ایجوکیشن کا دور ہے ہم سرکاری تعلیمی اداروں میں بھی پرانے طریقہ کار تعلیم کو بدل کر جدید تعلیمی طریقہ کار اور بہتر انداز اپنا رہے ہیں نئی تمام جابز این ٹی ایس اورپبلک سروس کمیشن کے ذریعے میرٹ پر پُر کی جارہی ہیں جس کی وجہ سے اپنے اپنے مضامین میں مہارت رکھنے والے اہل تجربہ کار اور ذہین لوگ ہی آگے آرہے ہیں اور سلیکٹ ہورہے ہیں جس سے تعلیمی اداروں کا تعلیمی وتدریسی ماحول پہلے سے کافی بہترہوچکاہے انہوں نے کہا کہ NTSاور PSCکے ذریعے میرٹ پر پورا اترنے والے اساتذہ کی بھرتیوں سے محکمہ تعلیم پر عوام کے اعتماد میں بھرپور اضافہ ہوچکاہے ۔جس کی وجہ سے عوام اب اپنے بچوں کو سرکاری سکولوں میں خوش دلی سے داخل کروا رہے ہیں اور یہ تعداد ہر سال بڑھ رہی ہے اس سال ضلع بھر کے سرکاری تعلیمی اداروں میں ریکارڈتعدادہزاروںنئے طالبعلموں نے داخلہ لیاہے جو محکمہ تعلیم اور سرکاری سکولوں پر اطمینان اور اعتماد کا اظہار ہے ۔انھوںنے کہا کہ عوام کی طرف سے مختلف سرکاری اداروںاور اساتذہ کے حوالہ سے اکثر شکایات آتیں رہتی تھیں کے اساتذہ سکولوں میں حاضرنہیںہوتے ان شکایات کے ازالہ کیلئے حکومت اور محکمہ تعلیمات نے بائیو میٹرک حاضری سسٹم رائج کیا ہے بائیو میٹرک حاضری سسٹم رائج کرنے سے سکولوں اوردیگر تعلیمات کے اداروںمیں اساتذہ اوردیگر سٹاف کی نہ صرف حاضری بہترہوسکی ہے بلکہ تعلیمی تدریسی معیار اورکارکردگی میں بھی خاطر خواہ اضافہ ہوچکا ہے انھوں نے مزید کہا کہ تعلیم ہی وہ ہتھیارہے جس کی بدولت ہم آگے بڑھ اورترقی کر سکتے ہیں ۔ ہمٰں تعلیم پر بھرپور توجہ دینے کی ضرورت ہے بچوںکی تعلیم وتربیت نہ صرف اکیلے اساتذہ کی ذمہ داری نہیں بلکہ والدین پر یہ ذمہ داری زیادہ عائدہوتی ہے کیونکہ اساتذہ کے پاس ایک بچہ چوبیس گھنٹوں میںسے چھ گھنٹے رہتاہے باقی اٹھارہ گھنٹے وہ والدین کے پاس گھر پررہتا ہے اساتذہ سرکاری تعلیمی اداروں میں ان چھ گھنٹوںمیں بچے کو پڑھنے ، اس کی تربیت ، کردار سازی میںبھرپورکوشش محنت ہیں لیکن اگر وہ بچہ گھر جا کر توجہ نہ دے والدین کی طرف سے بھی بچے پر کوئی توجہ چیک اینڈبیلنس نہ ہوتو پھر اساتذہ کی چھ گھنٹے کی محنت کسی کام کی نہیںرہتی لہٰذا اساتذہ کیساتھ ساتھ والدین کو بھی اپنی ذمہ داریوں کا احساس کرتے ہوئے گھروں پر اپنے بچوں کی تعلیم وتربیت ان کی کردارسازی ان کے اٹھنے بیٹھنے دیگر مشاغل کے بارے میں آگاہ ہونا ہوگا اساتذ ہ والدین باہم ملکرہی بچوں کی تعلیمی وتربیت اور بہترنتائج حاصل کر سکتے ہیں ایک سوال کے جواب میں انھوں نے کہا کہ سیکرٹری تعلیمات سیکنڈری وایلیمنٹری اورDPIکی طرف سے محکمہ تعلیم میںکی جانے والی اصلاحات اور انقلابی تبدیلیوں سے محکمہ تعلیم میں کافی بہتری آچکی ہے محکمہ تعلیمات کی تاریخ میں اس قدر اصلاحات پہلے کبھی نہ کی گئیں ان اصلاحات کی وجہ سے محکمہ تعلیم کی ساکھ کارکردگی ، تعلیمی نتائج میں مزید بہتری آئی ہے اساتذہ کے تمام مسائل کے حل کیلئے سیکرٹری تعلیم خصوصی دلچسپی لے رہے ہیں اساتذہ کافی مطالبات تسلیم کیے جاچکے ہیں اورجوکچھ رہ گئے ہیں وہ جلد حل ہونگے ۔ ڈی ای او میرپور

تازہ ترین خبریں