12:52 pm
 جمعیت علماء اسلام تقسیم کشمیر نہیں ہونے دے گی،مولانا امتیاز عباسی

جمعیت علماء اسلام تقسیم کشمیر نہیں ہونے دے گی،مولانا امتیاز عباسی

12:52 pm

جمعیت علماء اسلام تقسیم کشمیر نہیں ہونے دے گی،مولانا امتیاز عباسی مولانا فضل الرحمن 19ستمبر کو آزادی کشمیر کانفرنس سےمظفرآباد میں خطاب کریں گے مظفرآباد(سٹاف رپورٹر)جمعیت علماء اسلام پاکستان کے سربراہ مولانا فضل الرحمن 19ستمبر کو مظفرآباد میں آزادی کشمیر کانفرنس سے خطاب کریں گے۔اس بات کا اعلان یہاں معروف دینی درسگاہ جامعہ اشاعت القرآن شاہناڑہ میں جمعیت علماء اسلام جموں وکشمیر کے اہم اجلاس کے بعد پریس بریفنگ دیتے ہوئے مرکزی سیکرٹری جنرل مولانا امتیاز عباسی نے سرپرست اعلیٰ مولانا قاری عبدالمالک توحیدی،سینئر نائب امیر مولاناعبدالحی اور ضلعی امیر مولانا قاری عبدالماجد کے ہمراہ کیا۔ضلعی امیر مولانا قاری عبدالماجد نے بتایا کہ اجلاس میں مرکزی سیکرٹری اطلاعات مولانا قاری محمد افضل خان،مرکزی ناظم انتخاب مولانا محمد معروف کشمیری،مولانا مختار کیانی،مولانا محمد یونس شاکر،مولاناحزب الحق،مولانا عمر افضل خان،مولانا قاضی ظہیر،مولانا قاضی نصیب،مولانا محمد ندیم،مولانا محمد رفیق ربانی،مولانا فضل وہاب،قاری ابو ہاشم،مولانا فیاض،مولانا الطاف شیخ سمیت دیگر علمائے کرام وذمہ داران جمعیت نے شرکت کی۔راہنمائوں نے کہا کہ اجلاس میں طے پایا کہ 19ستمبر 2019ء بروز جمعرات مظفرآباد میں عظیم الشان آزادی کشمیر کانفرنس کا انعقاد کیا جائے گا۔یہ کانفرنس جمعیت علماء اسلام جموں وکشمیر کے زیر اہتمام ہوگی اور اس کے مہمان خصوصی قائد ملت اسلامیہ امام انقلاب مولانا فضل الرحمن ہوں گے۔کانفرنس سے امیر جمعیت علماء اسلام جموں وکشمیر مولانا سعید یوسف خان کے علاوہ آزادکشمیر کی دیگر ہم خیال سیاسی اور مذہبی جماعتوں کے سربراہان خطاب کریں گے۔مولانا امتیاز عباسی نے کہا کہ جمعیت علماء اسلام تقسیم کشمیر کے کسی بھی فارمولے کو کامیاب نہیں ہونے دے گی۔کشمیری 72سال سے حق خود ارادیت کی جنگ لڑرہے ہیں اور اب بھارت نے دفعہ 370اور 35Aختم کر کے کرفیو نافذ کررکھا ہے۔28روز گزرنے کے باوجود اسے نہیں اٹھایا گیا کشمیر کے بچے خوراک اور دودھ کے لیے ترس رہے ہیں۔مریضوں کو ادویات نہیں مل رہی ہیں۔کشمیر کے اندر بے شمار حریت پسندوں کو شہید کردیا گیا ہے اور ان کے جنازوں پر بھی پابندی عائد کی گئی ہے۔اس صورتحال میں اقوام عالم خصوصاً اقوام متحدہ کا کردار نہایت شرمناک ہے کیونکہ آزادی مانگنے والے مسلمان ہیں اور ان کے حق میں دنیا کے لب سی چکے ہیں جبکہ ہمارے وکیل پاکستان نے بھی اب تک کوئی ٹھوس قدم نہیں اٹھایا ۔زبانی جمع خرچ اور احتجاجوں سے کشمیریوں کے ساتھ رسمی اظہار یکجہتی کی جارہی ہے اور حقیقت میں کشمیر پر سودے بازی کی گئی ہے جس کا اظہار مولانا فضل الرحمن نے جمعیت علماء اسلام کے عاملہ اور شوریٰ کے اجلاس میں برملا کیا ہے اور اس سے قبل میڈیا فورم پر بھی کرچکے ہیں جس کی تردید نہ کر کے حکومت نے واضح کردیا ہے کہ واقعی کشمیر پر سودے بازی ہوئی ہے مگر ہم اس سودے بازی کو تسلیم نہیں کرتے ۔کشمیریوں کا مطالبہ ہے کہ افواج پاکستان کشمیریوں کی ٹھوس عسکری مدد کرے اس کے بغیر کشمیر کی آزادی ممکن نہیں۔اجلاس میں کانفرنس کے حوالے سے کمیٹیاں تشکیل دیدی گئی ہیں۔کانفرنس میں آزادکشمیر بھر سے کارکنان شرکت کریں گے جبکہ مہاجرین جموں وکشمیر اور مجاہدین جموں وکشمیر ،حریت قائدین کو بھی مدعو کیا جائے گا۔ مولانا امتیاز عباسی