تازہ ترین  
پیر‬‮   17   دسمبر‬‮   2018

طاہر داوڑ کے قاتلوں کو شہر یارآفریدی نے ایسا پیغام دے ڈالا کہ وہ زمین و آسمان میں چھپنے کی جگہ تلاش کرنے لگ جائیں گے


پشاور (آئی این پی )وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے کہا ہے کہ ایس پی طاہر خان داوڑ کی میت کی حوالگی کے حوالے سے افغان حکومت کی جانب سے اپنایا جانے والا رویہ تکلیف دہ تھا، طاہر داوڑکے قاتل پاکستان میں ہوں یا افغانستان میں، ان کو انجام تک پہنچائیں گے۔پشاور میں خیبرپختونخوا پولیس کے ایس پی طاہر خان داوڑ کے بھائی اور دیگر حکام کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شہریار آفریدی نے کہا کہ وہ میت لینے کیلئے وزیراعظم عمران خان کی خصوصی ہدایت پر طورخم سرحد گئے لیکن جو رویہ طور خم باڈر پر دیکھا وہ تکلیف دے تھا۔ شہریارآفریدی نے کہا کہ ایسا رویہ کیوں اپنایا گیا افغان حکومت کو سوچنا ہوگا، ڈھائی گھنٹے ہمیں کھڑا کیا گیا پھر کہا

کہ ہم پاکستان کو لاش نہیں دیتے۔انہوں نے کہا کہ شہید ایس پی طاہر داوڑ کی لاش نہ دینے کا مقصد اس معاملے پر پاکستان میں انتشار پھیلانا تھا، افغان حکومت کے ساتھ معاملہ سفارتی سطح پر اٹھائیں گے۔شہریار آفریدی نے کہا کہ افغان حکومت کا شہید کی لاش پر سیاست کرنے کا مقصد پاکستان میں انتشار پھیلانا تھا۔انہوں نے کہا کہ ہر شہری کے تحفظ کی ذمہ داری ریاست کی ہے، طاہر داوڑ کے معاملے کو منطقی انجام تک پہنچائیں گے، دنیا میں سب سے زیادہ مہاجرین پاکستان میں ہیں، آج ہم پر ‘ففتھ جنریشن وار’ مسلط کی گئی ہے اس لیے مصدقہ اطلاع کے بغیر بات کرنا ٹھیک نہیں، جب مصدقہ اطلاع ملی تو پارلیمنٹ میں بھی بات کی اور میڈیا پر بھی۔وزیر مملکت برائے داخلہ نے کہا کہ جمعہ کو وزیراعظم ہائوس میں اس معاملے پر اجلاس ہوگا۔اس موقع پر طاہر داوڑ کے بھائی نے قاتلوں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہاکہ اس سلسلے میں انہیں حکومت کا تعاون چاہئے ۔ جبکہ ترجمان کے پی حکومت اجمل وزیر نے کہا کہ افغان حکومت کے نمائندوں کے ساتھ مذاکرات ہوئے ہیں اور طورخم پر ہونے والے واقعات وزیراعظم کے نوٹس میں لائیں گے۔قبل ازیں اسلام آباد میں اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی کا کہنا تھا کہ پشاور کے سپرنٹنڈنٹ پولیس (ایس پی) طاہر داوڑ کے قاتل چاہے پاکستان میں ہوں یا افغانستان میں، انہیں منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا۔واضح رہے کہ پشاور رورل کے ایس پی طاہر داوڑ اسلام آباد کے علاقے جی ٹین سے جمعہ 27 اکتوبر کو لاپتہ ہوئے تھے۔ جن کی لاش 13 نومبر کو افغانستان کے صوبہ ننگرہار سے ملی اور پھر افغان حکام کی جانب سے تصدیق کے بعد گذشتہ روز پاکستانی دفترخارجہ نے ان کے قتل کی تصدیق کی۔دوسری جانب سینیٹ اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے شہریار آفریدی کا کہنا تھا کہ طاہر داوڑ کا مسئلہ حساس تھا، لیکن ہم جوابدہ ہیں اور اس واقعے میں ملوث عناصر کو نشان عبرت بناکر کیس کو منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا۔وزیر مملکت برائے داخلہ نے بتایا کہ طاہر داوڑ 2 خودکش حملوں میں بچے، انہیں اس سے قبل بھی دھمکیاں ملتی رہتی ہیں جبکہ ان کی بھابھی اور بھائی کو بھی شہید کیا جاچکا ہے۔واقعے کی تفصیلات بتاتے ہوئے شہریار آفریدی نے کہا کہ ’28 اکتوبر کو طاہر داوڑ کے لاپتہ ہونے کی ایف آئی آر ان کے بھائی فرحان الدین احمد کی مدعیت میں اسلام آباد کے تھانہ رمنا میں کاٹی گئی، جس کے بعد ان کی تلاش شروع ہوئی، لیکن تمام خفیہ اداروں اور سیکیورٹی اداروں کی جانب سے یہی بات سامنے آرہی تھی کہ طاہر داوڑ سے رابطہ نہیں ہو رہا اور انہیں ٹریس کیا جا رہا ہے۔انہوں نے بتایا کہ ’13 نومبر کو سوشل میڈیا پر جب تصاویر آئیں تو افغانستان اور پاکستان میں کوئی ایسا ذریعہ نہیں تھا، جس سے تصدیق ہوسکے اور پھر 14 نومبر کو افغان حکومت نے طاہر داوڑ کے قتل کی تصدیق کی۔وزیر مملکت نے بتایا کہ ‘ایس پی طاہر داوڑ کو اسلام آباد سے اغوا کرکے پنجاب کے شہر میانوالی لے جایا گیا اور پھر وہاں سے بنوں کے راستے انہیں افغانستان لے جایا گیا۔ شہریار آفریدی نے بتایا کہ ‘طاہر داوڑ کا آخری پیغام گھر والوں کے لیے یہ تھا کہ میں محفوظ ہوں، پریشان نہ ہوں۔ وزیر مملکت برائے داخلہ نے بتایا کہ افغان حکومت کی جانب سے طاہر داوڑ کے قتل کی تصدیق پر وزیراعظم عمران خان نے وزیراعلی خیبرپختونخوا، آئی جی کے پی اور آئی جی اسلام آباد سے انکوائری رپورٹ مانگی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ‘یہ پہلا واقعہ نہیں ہے، کچھ عناصر پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔وزیر مملکت کا کہنا تھا کہ ‘افغان بارڈر سائیڈ پر پیٹرولنگ کا کوئی نظام نہیں ہے، جس پر افغان حکومت کو آگاہ کیا جاچکا ہے’۔اس موقع پر شہریار آفریدی نے اسلام آباد میں سیف سٹی منصوبے کے تحت لگائے گئے کیمروں کی فعالیت پر بھی سوال اٹھایا اور کہا کہ ‘1800کے قریب کیمرے نصب کیے گئے لیکن کسی کیمرے میں یہ صلاحیت نہیں ہے کہ گاڑی کا نمبر یا کسی شکل کی تصدیق کرسکے’۔انہوں نے سیف سٹی منصوبے کے تحت نصب کیے گئے کیمروں کی تحقیقات کا بھی مطالبہ کیا، تاکہ ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کی جاسکے۔سینیٹ اجلاس میں طاہر خان داوڑ کی مغفرت اور درجات کی بلندی کے لیے دعا بھی کی گئی۔




 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

تازہ ترین خبریں




     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved