مسلم امہ کاٹائی راڈٹوٹتاہوں دیکھ رہاہوں،ملک ساجدعلی
  7  دسمبر‬‮  2017     |     یورپ

برسٹل(پ ر) امت مسلمہ کا ٹائی راڈ ٹوٹتا ہوا دیکھ رہا ہوں۔ اس وقت مسلم ممالک کو اتحاد و اتفاق کی ضرورت ہے اپنے تمام گروہی اختلافات بھلاکر ایک پلیٹ فارم پر اکٹھے ہوجائیں ورنہ ایک ایک کرکے تمام مسلمان ممالک کو غلام بنانے کی پالیسیاں جاری رہیں گی۔ امریکی صدر ٹرمپ کا اعلان کہ بیت المقدس اسرائیل کا دارالحکومت ہوگا امت مسلمہ پر کاری ضرب ہے۔ یہ کیسے ہوسکتا ہے مسلمانوں کا پہلا قبلہ بیت المقدس تھا۔ مسلمان ممالک کوہنگامی طورپر ایک اجلاس بلاکر کر اعلان جنگ کا اعلان کریں۔ تمام مسلم ممالک اپنے اپنے ملک سے امریکہ کے سفیر کو ملک بدر کرنے کا اعلان کریں۔ امریکہ سے سفارتی، سیاسی، معاشی اور معاشرتی تعلقات ختم کرنے کا اعلان کریں ورنہ مسلمان ایک اقلیت بند کردئے جائیں گے۔ توڑ پھوڑ اور اپنے اپنے ملکوں میں امریکہ کے جھنڈے جلانے سے کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔ امریکہ کا منہ بند کرنے کا ایک ہی علاج ہے کہ انکے سفیرواں کو ملک بدر کیا جائے جب تک امریکہ یہ بیان واپس نہیں لیتا اور مسلمان ملکوں سے معافی نہیں مانگتا۔ ان خیالات کا اظہار مسلم کانفرنس کے مرکزی رابطہ سیکرٹری ملک ساجد علی نے امریکی صدر کے اعلان پر تبصرہ کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ جو مسائل حل طلب ہیں ان کی طرف کبھی بھی بڑی طاقتوں نے غور نہیں کیا۔ مسئلہ کشمیر پر ثالثی یا بھارت پر دباؤ ڈالنے کیلئے کبھی بھی امریکی حکومت نے کوئی سیاسی ایشو پیش نہیں کیا۔ کیا بھارت بے لگام ملک ہے کہ مسئلہ کشمیر پر کوئی بات بھی سننے کیلئے تیار نہیں۔ کشمیریوں کو حق خودارادیت دینے کی بات کرنے کی بجائے گولی سے بات کرتا یہے کیا اس وقت امریکہ کی آنکھوں پر پٹی باندھی ہوئی ہے۔ امریکہ اور یورپین ممالک یاد رکھیں کہ جس وقت تک مسئلہ فلسطین اور کشمیر کا منصفانہ حل تلاش نہیں کرتے۔ کبھی بھی دنیا میں امن نہیں ہوسکتا۔ اس کے سب راستے کشمیر اور فلسطین سے گزرتے ہیں۔ جسکو یہ دہشت گردی کہتے ہیں وہ آزادی کی جنگ ہے جو مجاہدین لڑ رہے ہیں اگر فلسطین اور کشمیر کے مسئلے حل نہیں ہونگے تو دہشت گردی ہوتی رہے گی۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اہم خبریں

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved