فتوے بعد میں لگانا ۔۔پہلے یہ کام کرو۔۔افغان صدر تو پاکستان پر حکم چلانا شروع ہو گئے۔۔کیا زمانہ آگیا
  19  جنوری‬‮  2018     |     اہم خبریں

کابل (مانیٹرنگ ڈیسک ) افغان صدر اشرف غنی نے درخواست کی ہے کہ پاکستان کے قومی بیانیے پر مبنی فتوے کا اطلاق افغانستان پر بھی کیا جائے ۔افغانستان کے دارالحکومت کابل میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اشرف غنی نے سوال اٹھایا کہ دہشت گردی کے خلاف فتوی صرف پاکستان تک کیسے محدود ہوسکتا ہے۔اس فتوے کا اطلاق افغانستان سمیت پوری مسلم دنیا پر ہونا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ کیا اسلامی تعلیمات اور اصول تمام مسلم ممالک کے لیے ایک نہیں ہیں؟ کیا انہیں ایک ملک تک محدود کیا جاسکتا ہے؟ اسلامی تعلیمات کو کسی ایک ملک تک محدود نہیں کیا جاسکتا کیونکہ یہ عالمگیر ہیں۔اپنی حکومت کے پاکستان مخالف بیان کو دہراتے ہوئے اشرف غنی کا کہنا تھا کہ افغانستان میں بدامنی اسلام آباد کی طرف سے افغان طالبان اور اس کے عسکری ونگ حقانی نیٹ ورک کی

حمایت کی وجہ سے ہے، اس لیے اس فتوے کو سب سے پہلے پاکستان میں عملدرآمد کی ضرورت ہے۔تاہم افغان صدر کا کہنا تھا کہ افغان طالبان جیسے گروپوں کی حمایت کرکے پاکستان پڑوسی اسلامی ملک کے استحکام کو خطرے میں ڈال رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کی حمایت سانپ پالنے کے مترادف ہے اور جو اپنے آنگن میں سانپ پالتے ہیں انہیں بالآخر وہ ڈس ہی لیتے ہیں۔یاد رہے کہ دو روز قبل حکومت کی جانب سے دہشت گردی کے خلاف علما کا فتوی(پیغام پاکستان)کیا گیا تھا، جس میں مختلف مکاتب فکر کے ایک ہزار 800 سے زائد علما نے خودکش حملوں کو اسلام کے اصولوں کے مطابق حرام قرار دیا تھا۔فتوی میں علما کی جانب سے غیر ریاستی عناصر سے جہاد کے نام پر تشدد پر مکمل پابندی عائد کرنے کا مطالبہ بھی کیا گیا تھا۔یوان صدر اسلام آباد میں پیغام پاکستان فتوے کی تقریب اجرا سے خطاب کرتے ہوئے صدر مملکت ممنون حسین کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف علما کا فتوی اسلامی تعلیمات کی روح کے عین مطابق ہے، جس پر عمل درآمد سے انتہا پسندی کے فتنے پر قابو پانے میں مدد ملے گی اور دنیا کے سامنے اسلام کی تعلیمات کے علاوہ پاکستانی معاشرے کا مثبت تاثر بھی اجاگر ہوگا۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
63%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
38%


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اہم خبریں

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved