01:37 pm
’’قیامت کی نشانیاں ‘‘

’’قیامت کی نشانیاں ‘‘

01:37 pm

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک)لاہور میں نوجوان لڑکے نے اپنے دوست کیساتھ مل کر اپنی 19سالہ بہن کو قتل کر دیا مگر لڑکے کادوست جب لڑکی کو قتل کر رہا تو لڑکی نے کیا الفاظ ادا کیے کہ جس نے سنا وہ ۔۔! ۔۔ 19 سالہ طالبہ اپنے ہی بھائی کے ہاتھوں قتل ہو گئی۔نجی ٹی وی کے ایک پروگرام میں بتایا گیا ہے کہ احمد نامی لڑکے اپنی بہن کو غیرت کے نام پر قتل کر دیا۔بھائی نے بہن کو قتل کرنے کے لیے اپنے دوست کی مدد لی
ور دونوں نے مل کر 19 سالہ لڑکی کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔میڈیا رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ مسکان کالج جانے والی طالبہ تھی اس کے بھائی کو بہن کے کردار پر شک تھا اور اسی شک کی بنا پر اسے قتل کیا۔ جب کہ بہن کو قتل کرنے والے بھائی کا کہنا تھا کہ میری بہن کے پیچھے لڑکے بھی آتے تھے جس پر میں نے اسے منع کیا اور کہا کہ تم نے کالج نہیں جانا لیکن اس نے میری بات نہیں سنی اور میرے ساتھ بدتمیزی کی۔جب کہ قتل کے دوسرے ملزم کا کہنا ہے کہ جب میں لڑکی کو قتل کرنے لگا تو وہ اپنے بھائی کو بھی آوازیں لگاتی رہی اور اس کا نام پکارتی رہی۔لیکن ا سکو معلوم نہ تھا کہ اس کے اپنے بھائی نے ہی قاتل کو یہ راستہ دکھایا ہے۔ جب کہ پولیس کا کہنا ہے کہ ہماری کوشش ہو گی لڑکی کو قتل کرنے والے دونوں ملزمان کو کڑی سے کڑی سزا دی جائے۔واضح رہے غیرت کے نام پر قتل کا یہ کوئی پہلا واقعہ نہیں ہے بلکہ آئے روز اس طرح کے واقعات پیش آتے ہیں۔ گذشتہ سال منڈی بہائوالدین میں سگے بھائی نے مبینہ طور پر غیرت کے نام پر گلا دبا کر 17 سالہ بہن کو قتل کیا تھا۔جون میں ڈیرہ غازی خان میں عیدالفطر کے دوران ایک مقامی سوشل میڈیا ایکٹیوسٹ اور شاعرہ کو مبینہ طور پر غیرت کے نام پر قتل کردیا گیا تھا۔ 20 مئی 2018 چکوال میں 4 بھائیوں نے مبینہ طور پر غیرت کے نام پر اپنی 50 سالہ والدہ کو قتل کردیا تھا۔خیال رہے کہ سال 2017 میں غیرت کے نام پر اور گھریلوں تنازعات میں صوبہ پنجاب کے ضلع گجرات میں 41 خواتین کو قتل کیا گیا تھا جبکہ سال 2016 میں یہ تعداد 35 تھی جبکہ 2013 میں یہ تعداد 51 اور 2014 میں 36 تھی۔

تازہ ترین خبریں