02:57 pm
 رواں سال ’’رمضان بازار‘‘ لگائے جائیں گے یا نہیں ؟پنجاب کی نئی حکومت نے بڑا فیصلہ کر لیا

رواں سال ’’رمضان بازار‘‘ لگائے جائیں گے یا نہیں ؟پنجاب کی نئی حکومت نے بڑا فیصلہ کر لیا

02:57 pm

لاہور (آن لائن) صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت 90شاہرہ قائد اعظم پر کابینہ کمیٹی برائے پرائس کنٹرول کا اجلاس ہوا۔ جس میں رمضان پیکیج 2019ء کو حتمی شکل دینے کیلئے مختلف تجاویز کا جائزہ لیا گیا۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ رمضان المبارک کے دوران گزشتہ سال کے مقابلے میں زیادہ رمضان بازار لگائے جائیں گے اور یوٹیلٹی سٹورز سے بھی فائدہ اٹھایا جائے گا۔
رمضان بازار25شعبان سے کام شروع کر دیں گے اور یہاں فیئر پرائس شاپس پر 19اشیائے ضروریہ رعائتی نرخوں پر دستیاب ہوں گی جن میں دال چنا، بیسن ، لیمن ،کھجور ، سبزیاں اور پھل شامل ہیں۔ شوگر ملز ایسوسی ایشن نے رمضان بازاروں میں 54روپے فی کلو چینی کی فراہمی پر اتفاق کیا ہے اور رعایتی نرخوں پر چینی ایک کلو اور دو کلو کے پیکٹوں میں دستیاب ہو گی۔اجلاس میں حق داروں کو اشیائے ضروریہ پر مشتمل راشن کے تھیلے ان کے گھروں پر مہیا کرنے کی تجویز کا بھی جائزہ لیا گیا۔صوبائی وزیر صنعت وتجارت میاں اسلم اقبال نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ رمضان بازاروں کا مقصد غریب او ر عام آدمی کو ریلیف فراہم کرنا ہے۔ رمضان پیکیج کے حوالے سے پولٹری ایسوسی ایشن ، فلو ر ملز ایسوسی ایشن ،شوگر ملز ایسوسی ایشن اور دیگر تاجر تنظیموں سے سود مند بات چیت ہوئی ہے اور تمام سٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے رمضان پیکیج کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ رمضان بازاروں میں فراہم کی جانے والی اشیائے ضروریہ کے معیار اور وزن پر کوئی سمجھوتا نہیں ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ماہ رمضان میں ٹارگٹڈ سبسڈی دیں گے تا کہ اس کا فائدہ صرف حق داروں کو پہنچے۔صوبائی وزیر نے ہدایت کی کہ مارکیٹ کمیٹیوں کے نظام کو بھی بہتر بنایا جائے اور انہیں پوری طرح متحرک کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ فلو ر ملوں کو گندم کی فراہمی کا ایسا میکا نیزم بنائیں گے جس کا فائدہ صرف نادار اور غریب لوگوں کو پہنچے۔ انہوں نے کہا کہ گندم اور چینی وافر مقدار میں موجود ہے اور اس سال گندم کی پیداوار بھی بہترہے۔ اس لیے کسی کو افرا تفری پیدا نہیں کرنے دیں گے۔انہوں نے کہا کہ جن شوگر ملوں نے ابھی تک کسانوں کو ادائیگی نہیں کی ان کے ساتھ مل بیٹھ کر ادائیگی کا شیڈول طے کیا جائے اور مشاورت میں کسان اتحاد کو بھی شامل کیا جائے۔صوبائی وزیر خوراک سمیع اللہ چوہدری نے کہا کہ گزشتہ کئی سالوں سے جاری رمضان پیکیج کاروایتی ماڈل سود مند ثابت نہیں ہوا ہے،ہمیں سبسڈی حق داروں تک پہنچانے کیلئے اقدامات کرنے ہوں گے،اشیائے ضروریہ کی قیمتوں پر کنٹرول کیلئے فیلڈ فورس کو متحرک بنانا ہو گا۔ صوبائی وزیر زراعت نعمان اخترلنگڑیال نے کہا کہ ہمیں پالیسیوں پر عمل در آمد پر فوکس کرنے کی ضرورت ہے،پرائس کنٹرول کے حوالے سے انتظامیہ کو اپنا موثر کردار اد کرنا ہے۔ صوبائی وزیر خزانہ مخدوم ہاشم جواں بخت، متعلقہ محکموں کے سیکرٹریز،ایم ڈی، یوٹیلیٹی سٹورز کارپوریشن اور دیگر افسران نے اجلاس میں شرکت کی۔ دریں اثنا صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال سے پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشنز کے وفد نے بھی 90شاہرہ قائد اعظم پر ملاقات کی اوررمضان المبارک کے دورن سستے آٹے کی فراہمی کے حوالے سے مشاورت کی گئی۔صوبائی وزیر نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت عام آدمی کو ریلیف کی فراہمی کیلئے صوبہ بھر میں رمضان بازار لگا ر ہی ہے اور فلو رملیں رعایتی نرخوں پر جو آٹا رمضان بازاروں پر دیں گی اس کا فائدہ حکومت نہیں بلکہ نادر افراد کو ہو گا۔ ملاقات کے دوران فلور ملز ایسوسی ایشن نے رمضان بازاروں میں رعایتی نرخوں پر آٹے کی فراہم ی پر اتفاق کیا۔ صوبائی وزیر زراعت نعمان اختر لنگڑیال اور صوبائی وزیر خوراک سمیع اللہ چوہدری کے علاوہ سیکرٹریز صنعت و تجارت اور خوراک بھی اس موقع پر موجود تھے۔