04:21 pm
’’ پاکستان پہنچتے ہی آپ کو فارغ کر دیا جائے گا ‘‘ دبنگ وفاقی وزیر کو یہ الفاظ کس نے کہہ ڈالے؟

’’ پاکستان پہنچتے ہی آپ کو فارغ کر دیا جائے گا ‘‘ دبنگ وفاقی وزیر کو یہ الفاظ کس نے کہہ ڈالے؟

04:21 pm

اسلام آباد (ویب ڈیسک) کابینہ میں ردوبدل کے کئی روز بعد بھی تبصروں کا سلسلہ جاری ہے اور اس دوران تجزیہ نگاروں کا ایک موقف یہ بھی رہا کہ اسد عمر کو کارکردگی سے زیادہ پارٹی کی اندرونی سیاست کی وجہ سے نکالا گیا اور اب سینئر صحافی حامد میر 2 ایسے وزراء کے نا م سامنے لے آئے ہیں جنہوں نے کابینہ اجلاس میں سابق وزیرخزانہ پر تنقید کی ۔روزنامہ جنگ کیلئے اپنے کالم میں حامد میر نے لکھا
کہ ’’ اسد عمر کا کہنا ہے کہ اُنہیں وزارت خزانہ سے ہٹائے جانے کے فیصلے کا پہلے سے علم نہیں تھا۔ حیرت ہے کہ جب مراد سعید اور فیصل واوڈا نے کابینہ کے اجلاسوں میں اسد عمر پر فائر کھولا تو اُنہیں کیوں سمجھ نہ آئی کہ اُن کی وزارت خطرے میں ہے۔ 26مارچ کو ہم نے جیو نیوز پر کیپٹل ٹاک میں صاف صاف بتا دیا تھا کہ اسد عمر پر کابینہ میں بڑی تنقید ہو رہی ہے۔ کابینہ میں اُن پر تنقید کرنے والے فیصل واوڈا کیپٹل ٹاک میں موجود تھے، اُنہوں نے ہماری خبر کی تردید کرنے کے بجائے خاموشی اختیار کی۔دو اپریل کو ہم نے کیپٹل ٹاک میں فواد چوہدری سے پوچھا کہ کیا یہ درست ہے کہ کابینہ کے اجلاس میں آپ کی اور اسد عمر کی گرما گرم بحث ہوئی؟ اُنہوں نے اسے معمول کی کارروائی قرار دیا۔ پانچ اپریل کو اسد عمر نے کچھ صحافیوں کو بریفنگ کے لئے وزارت خزانہ میں بلایا۔ بریفنگ ختم ہونے والی تھی تو فواد چوہدری بھی آ گئے تاکہ ہمیں تاثر ملے کہ سب ٹھیک ہے لیکن اسی شام اسد عمر کو اُن کے ایک دوست صحافی نے بتا دیا تھا کہ آئی ایم ایف ک ساتھ مذاکرات کے بعد آپ کو فارغ کر دیا جائے گا۔ 12اپریل کو اُن کے ایک اور دوست صحافی نے اُنہیں امریکہ پیغام بھیجا کہ پاکستان واپسی پر آپ فارغ ہو جائیں گے لیکن اسد عمر ان سب خبروں کو غالب بن کر ہزاروں خواہشیں ایسی قرار دیتے رہے جن پر نجانے کس