05:17 pm
عمران خان پاکستان کے سب سے بڑے ڈھیٹ اور بہروپیے ہیں،ان جیسے لوگ ہی۔۔۔! جواد احمد نے کپتان کو آڑے ہاتھوں لے لیا

عمران خان پاکستان کے سب سے بڑے ڈھیٹ اور بہروپیے ہیں،ان جیسے لوگ ہی۔۔۔! جواد احمد نے کپتان کو آڑے ہاتھوں لے لیا

05:17 pm

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) برابری پارٹی کے سربراہ اور گلوکار جواد احمد نے وزیراعظم عمران خان کو پاکستان کا سب سے بڑا ڈھیٹ اور بہروپیہ قرار دے دیا۔ تفصیلات کے مطابق مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں عمران خان سے متعلق بات کرتے ہوئے گلوکار جواد احمد کا کہنا تھا کہ ان صاحب کے اندر نہ تو مڈل کلاس اورغریبوں کے لئے کوئی درد ہے اور نہ یہ کہنے میں کوئی شرم ہے کہ وہ اپنی گورنمنٹ کا بیٹنگ آرڈر بدل رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ میرے الفاظ یاد رکھئیے کہ ان صاحب کو بہت جلد ملک سے بھاگنا پڑے گا
ورنہ لوگ انہیں نہیں چھوڑیں گے۔عمران خان جیسےاشرافیہ کے لوگ پاکستان جتنے غریب ملک کی تقدیر نہیں بدلُ سکتے۔ایسا کرنے کے لئے عوامی تحریکیں چاہئیں جن کی لیڈرشپ انبیا علیہ سلام سے لے کر لینن،ماؤ زے تنگ، چی گویرا جیسے لوگوں کے ہاتھوں میں ہوں اور وہ انہی مڈل کلاس ،محنت کشوں،نوجوانوں سے اٹھیں جنہیں آج تک لوٹا گیا ہے۔واضح رہے کہ گذشتہ ماہ چیئرمین برابری پارٹی پاکستان جواد احمد نے کہا تھا کہ عمران خان نے کرپشن، دھاندلی اور نوازشریف و شہبازشریف چور کے نعروں پر سیاست کی، آرٹیکل 3 کے تحت ریاست غریب عوام کو روزگار دے۔یاد رہے کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت آنے کے بعد جواد احمد کو اکثر ہی حکومتی جماعت اور عمران خان کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے دیکھا گیا۔ انہوں نے کئی تقاریب اور میڈیا سے کی گئیں گفتگو میں عمران خان پر تنقید کے نشتر برسائے۔ پی ٹی آئی چئیرمین عمران خان نے عام انتخابات میں برتری حاصل کرنے کے بعد قوم سے پہلا پالیسی خطاب کیا ۔ اس پالیسی خطاب میں عمران خان نے جو باتیں کیں اس پر پاکستان سمیت بیرون ممالک بھی انہیں خوب سراہا گیا ۔لیکن پاکستان کے معروف گلوکار اور برابری پارٹی کے سربراہ جواد احمد تب بھی عمران خان کی برتری پر ناخوش نظر آئے۔ حال ہی میں برابری پارٹی پاکستان کے سربراہ گلوکار جواد احمد کووزیراعظم عمران خان پرتنقید اُس وقت مہنگی پڑ گئی، تقریب کے شرکا نے عمران خان کو تنقید کا نشانہ بنانے پر جواد احمد کا مائیک ہٹا دیا اورمزید بولنے سے منع کردیا تھا۔ پی ٹی آئی کارکنان نے جواد احمد کے خلاف اور وزیراعظم کے حق میں نعرے بھی لگائے۔