05:54 am
 پشاور،سانحہ23 اپریل 1930ء کو نصاب میں شامل کرنے کا مطالبہ

پشاور،سانحہ23 اپریل 1930ء کو نصاب میں شامل کرنے کا مطالبہ

05:54 am

پشاور ( بیورو رپورٹ ) گندھاراہندکو بورڈ پشاورکے زیر اہتمام 23 اپریل 1930ء کے شہداء کی یاد میں قصہ خوانی بازار میں دعائیہ تقریب کا اہتمام کیا گیا ۔ تقریب میں گندھارا ہندکو بورڈ کے سینئر وائس چیئرمین ڈاکٹر عدنان گل،جائنٹ سیکرٹری احمد ندیم اعوان، ایگزیکٹیو ممبران سکندر حیات سکندر،سعید پارس ،گندھارا ہندکو اکیڈمی کے سٹاف ممبران کے علاوہ مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کی۔ شرکاء نے یادگار شہداء پر پھولوں کی چادر چڑھائی جبکہ شہداء کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے ریلی بھی نکالی گئی۔اس موقع پر ہندکو زبان کے شاعر، ادیب اور محقق نذیر بھٹی کے سانحہ قصہ خوانی کے حوالے سے ہندکو ناول ’’شام الم‘‘ کی رونمائی بھی کی گئی۔مقررین نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے بزرگوں نے 23 اپریل 1930 کو فرنگیوں کے ظلم و بربریت اور انگریز سامراج کے خلاف پرُامن جلوس نکالا جس پر فرنگیوں نے گولی چلائی جس میں ہمارے آبائو اجداد، خواتین اور بچوں نے سینکڑوں کی تعداد میں اپنی جانوں کے نذرانے پیش کئے مگر انگریز سامراج کے سامنے سر نہیں جھکایا اورتحریک آزادی کی جدوجہد میں اہم کردار ادا کیا۔انہوں نے کہا کہ 23 اپریل 1930 ایک تاریخی واقعہ ہے اس کی اہمیت کو سمجھا جائے اوراس واقعے کو نصاب کی کتب میں شامل کیا جائے ۔ انہوں نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اس دن کو سرکاری سطح پر منایا جائے۔اُنہوں نے ضلعی حکومت سے مطالبہ کیا کہ شہداء کی یاد گار پر تاریخی کتبے دوبارہ نصب جائیں اور یادگار کی تزئین و آرائش کی جائے۔ شہداتقریب

تازہ ترین خبریں