07:24 am
 ملک میں بجلی کی طلب 17 ہزار 304 میگاواٹ جبکہ دستیاب بجلی 20 ہزار 500 میگاواٹ ہوگئی

ملک میں بجلی کی طلب 17 ہزار 304 میگاواٹ جبکہ دستیاب بجلی 20 ہزار 500 میگاواٹ ہوگئی

07:24 am


اسلام آباد(سی پی پی )ملک میں بجلی کی طلب 17 ہزار 304 میگاواٹ اور دستیاب بجلی 20 ہزار 500 میگاواٹ ہو گئی ہے۔پاور ڈویژن کے ذرائع کے مطابق بدھ کی صبح ساڑھے 3 بجے تک ملک میں بجلی کی فراہمی طلب سے 3ہزار196 میگاواٹ زیادہ تھی اور ملک بھر میں 99 فیصد سے زائد فیڈر پر کوئی لوڈ شیڈنگ نہیں۔دوسری جانب پاکستان پن بجلی کی پیداواری صلاحیت رکھنے والا دنیا کا تیسرا ملک بن گیا۔
تفصیلات کے مطابق انٹر نیشنل ہائیڈرو پاور ایسوسی ایشن نے عالمی سطح پر پن بجلی کے حوالے سے اپنی تازہ ترین رپورٹ جاری کی۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ پن بجلی پیداکرنے کی صلاحیت میں حالیہ اضافہ کے حوالے سے پاکستان دُنیا بھر میں تیسرے نمبر پر رہا ۔انٹر نیشنل ہائیڈرو پاور ایسوسی ایشن کی مذکورہ رپورٹ 2019 : ہائیڈرو پاور سٹیٹس رپورٹ ۔ سیکٹرٹرینڈزاینڈ انسائٹس‘‘کے عنوان سے جاری کی گئی ہے اور ویب لنک hydropower.org/statusreport پر بھی دستیاب ہے ۔ یونیسکو کے زیر اہتمام 1995ء میں انٹر نیشنل ہائیڈرو پاور ایسوسی ایشن کے نام سے قائم ہونے والا یہ فورم دُنیا بھر میں پن بجلی کے حوالے سے مفید تجربات کو فروغ دے رہا ہے ۔انٹر نیشنل ہائیڈرو پاور ایسوسی ایشن کی رپورٹ میں شامل پن بجلی کی پیداواری صلاحیت میں حالیہ اضافہ کے حوالے سے ٹاپ20 ممالک کی فہرست میں بتایا گیا ہے کہ 2018 ء میں پاکستان نے مختلف منصوبوں کی تکمیل سے اپنے قومی نظام میں 2 ہزار 487 میگاواٹ پن بجلی کا اضافہ کیا ۔ چین دُنیا بھر میں پہلے نمبر پر رہا جس نے اپنے نظام میں 8 ہزار 540 میگاواٹ پن بجلی کا اضافہ کیا جبکہ 3 ہزار 866 میگاواٹ پن بجلی اضافہ کے ساتھ برازیل فہرست میں دوسرے نمبر پر ہے ۔ایک ہزا ر85 میگاواٹ پن بجلی اضافہ کے ساتھ ترکی چوتھے جبکہ 668میگاواٹ پن بجلی اضافہ کے ساتھ انگولا پانچویں نمبر پر رہا ۔ ہمسایہ ملک بھارت کی فہرست میں آٹھویں پوزیشن ہے جس نے اپنے نظام میں 535 میگاواٹ پن بجلی کا اضافہ کیا ۔ پاکستان میں پن بجلی کی پیداواری صلاحیت میں حالیہ اضافہ کے حوالے سے واپڈا نے سال 2018 ء میں تیزی سے پیش رفت کرتے ہوئے 2 ہزار 487میگاواٹ پیداواری صلاحیت کے تین میگامنصوبوں کو مکمل کیا ، اِن منصوبوں میں گولن گول ، تربیلا کا چوتھا توسیعی منصوبہ اور نیلم جہلم ہائیڈرو پاور پراجیکٹ شامل ہیں ۔یہ تینوں منصوبے طویل عرصہ سے تاخیرکا شکار تھے۔ اِن منصوبوں کی تکمیل کی بدولت واپڈا کی پن بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت میں صرف ایک سال میں 36 فیصد اضافہ ہوا اور یہ بڑھ کر 9 ہزار 389 میگاواٹ ہو گئی ہے ۔ قبل ازیں 1958ء میں اپنے قیام سے 2017 ء تک 59 برس میں واپڈا کی پن بجلی پیداکرنے کی صلاحیت 6 ہزار 902 میگاواٹ تک پہنچ سکی تھی ۔یہاں یہ بات قابلِ ذکر ہے کہ پاکستان میں پانی سے بجلی پیداکرنے کا پوٹینشل 60ہزار میگاواٹ سے بھی زائد ہے ۔اِس صلاحیت کو بروئے کار لانے کے لئے واپڈا نے ایک ہمہ جہت حکمت ِ عملی تیار کی ہے۔ قلیل مدتی پلان کے تحت2025ء تک مختلف منصوبوں کی تعمیر سے پن بجلی کی پیداواری صلاحیت میں 828 میگاواٹ، وسط مدتی پلان کے تحت 2030تک5ہزار653میگاواٹ جبکہ طویل مدتی پلان کے تحت 2050ء تک مزید 6ہزار 245میگاواٹ اضافہ کیا جائے گا ۔

 

تازہ ترین خبریں