03:07 pm
نعیم الحق اور جہانگیر ترین کی لڑائی شدت اختیار کرگئی،تحریک انصاف میں پھوٹ پڑنے کا خدشہ

نعیم الحق اور جہانگیر ترین کی لڑائی شدت اختیار کرگئی،تحریک انصاف میں پھوٹ پڑنے کا خدشہ

03:07 pm

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے معروف صحافی و تجزیہ کار ڈاکٹر شاہد مسعود نے کہا کہ اب عدالتی محاذ، معاشی محاذ ، پارلیمانی محاذ اور اندورنی محاذ پر حکومت کو مشکلات کا سامنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے اندر جو محاذ چل رہا ہے وہ دن بدن زور پکڑتا جا رہا ہے۔ نعیم الحق کی جہانگیر ترین کے ساتھ نہیں بن رہی۔اس سے قبل فواد چودھری کے بھی جہانگیر ترین سے اختلافات کی خبریں آئی تھیں۔
ان بن چھوٹی باتوں پر ہوتی ہے لیکن بعد میں مسائل پیدا ہو جاتے ہیں۔ ایسے میں عمران خان کے لیے بھی وہی مسائل پیدا ہو جائیں گے جو نواز شریف کے لیے ہوئے تھے۔ کیونکہ شروع شروع میں تو نواز شریف بھی چودھری نثار علی خان اور خواجہ آصف کی لڑائی کو کافی انجوائے کرتے تھے لیکن پھر ہوا یہ کہ جب بحران پیدا ہوا تو تب تک یہ لڑائی دلوں کے اندر زبردست خلیج پیدا کر چکی تھی۔اگرچہ یہ چھوٹے چھوٹے مسائل ہیں لیکن اگر عمران خان نے ان مسائل کو حل نہ کیا تو مزید مسائل پیدا ہو سکتے ہیں کیونکہ اگر ان کے آپس میں ہی اتنے مسائل رہیں گے تو پھر یہ لوگ اتحادیوں سے کیسے بات کریں گے۔ ڈاکٹر شاہد مسعود نے کہا کہ عید سے پہلے کے چند روز ، عید کے بعد ، بجٹ اور ریفرنسز کے دن کافی اہم ہیں۔ بجٹ کے بعد ریفرنسز آئیں گے جبکہ اپوزیشن کی تحریک بھی اسی دوران ہی چلائی جائے گی۔دس تاریخ تک زرداری صاحب بھی بیٹھ پر منصوبہ بندی کریں گے کہ مجھے کیا کرنا ہے۔ گیارہ کو بجٹ آ رہا ہے۔ شہباز شریف بھی گیارہ کو واپس آ رہے ہیں۔ پیپلز پارٹی کا کہنا ہے کہ ہم بجٹ منظور نہیں کروائیں گے ، حکومت کے لیے یہ بہت ضروری ہوتا ہے کہ فنانس بل دونوں ہاؤسز سے پاس ہو جائے۔ قومی اسمبلی میں اتحادیوں کے ساتھ حکومت کی اکثریت ہے لیکن وہاں اختر مینگل جن کے چھ ووٹ حکومت کے ساتھ ہیں، نے بجٹ کے دوران سرکاری بینچوں میں بیٹھنے سے منع کر دیا ہے اور یہ وہی چھ ووٹس ہیں جن کے بارے میں اپوزیشن کہتی ہے کہ حکومت صرف چھ ووٹوں پر کھڑی ہے۔

تازہ ترین خبریں