09:40 am
جیل میں موجود نواز شریف کے گھر سے کھانا آنے پر پابندی عائد

جیل میں موجود نواز شریف کے گھر سے کھانا آنے پر پابندی عائد

09:40 am

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک ) پنجاب حکومت نے سابق وزیراعظم نواز شریف کے لیے کوٹ لکھپت جیل میں گھر سے کھانا لانے پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔اس حوالے سے میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے
کہ جیل انتظامیہ نے نواز شریف کو گھر سے کھانا فراہم کرنے کی اجازت دے رکھی تھی لیکن اب پنجاب حکومت کی جانب سے اس پر پابندی کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ ممکن ہے رواں ہفتے ہی نواز شریف کے لئے گھر کا کھانا بند کرنے کا حکم جیل انتظامیہ کی طرف سے جاری کیا جائے گا۔اس سے قبل سینئیر صحافی عارف حمید بھٹی نے دعویٰ کیا ہے کہ ایک خاص میٹنگ ہو رہی ہے کہ سابق وزیراعظمنواز شریف کو جیل میں گھر سے آیا کھانا نہ کھانے دیا جائے۔ عارف حمید بھٹی نے کہا کہ ہو سکتا ہے کہ کل کو نواز شریف کو گھر سے آیا کھانا نہ کھانے دیا جائے۔ سینئیر صحافی نے کہا کہ مریم نواز اپنے گھر سے جو کھانا بنا کر سونے کے برتنوں میں بھجتی ہیں اب وہ نواز شریف کو نہیں ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ فیصلہ کر لیا گیا ہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف کو بتایا جائے گا کہ گیسٹ ہاؤس اور جیل میں فرق ہوتا ہے۔ عارف حمید بھٹی نے کہا نواز شریف ابھی جیل میں نہیں رہ رہے وہ گیسٹ ہاؤس میں رہ رہے ہیں انہیں وہاں گیسٹ ہاؤس والی تمام سہولیات میسر ہیں اور وہ گھر سے آیا کھانا کھاتے ہیں لیکن اب فیصلہ کر لیا گیا ہے کہجب کہ دوسری جانب شریف خاندان کے خلاف منی لانڈرنگ کیس کی تحقیات میں اہم پیش رفت، نیب نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کے خلاف بھی جعلی اکائونٹس کے ذریعے ٹرانزیکشنز کی انکوئری شروع کر دی۔ شریف خاندان کے خلاف منی لانڈرنگ کیس میں نیب نے تحقیقات کا دائرہ کار وسیع کر دیا۔ ذرائع کے مطابق نے نیب نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کے خلاف بھی جعلی اکائونٹس کی تحقیقات کا آغاز کر دیا۔ نیب ذرائع کے مطابق شہباز شریف خاندان کے خلاف منی لانڈرنگ کیس کی تحقیقات کے دوران یہ بات سامنے آئی ہے کہ سابق وزیر اعظم نواز شریفکے اکائونٹس میں بھی جعلی اکائونٹس کے ذریعے ٹرانزیکشنز ہوئیں ہیں جس پر اسٹیٹ بینک اور دیگر متعلقہ اداروں سے انکے بینک اکاونٹس میں ہونے والی ٹرا نزیکشنز کا ریکارڈ حاصل کرلیا ہے۔ اسی کیس میں نیب نے حمزہ شہباز کو گرفتار کر رکھا ہے جبکہ اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہباز شریف کو بھی 5 جولائی کو طلب کر رکھاہے۔

تازہ ترین خبریں