02:13 pm
23مئی کو نوازشریف سے کوٹ لکھپت جیل میں ملنے والا کون تھا

23مئی کو نوازشریف سے کوٹ لکھپت جیل میں ملنے والا کون تھا

02:13 pm

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)23مئی كکو سابق وزیر اعظم میاں نوازشریف سے کوٹ لکھپت جیل میں ملاقات کرنے والی شخصیت کون تھی۔ نجی ٹی وی چینل سما نیوز نے اپنی رپورٹ میں بتادیا۔ نیب عدالت كکے جج ارشدملک نے اپنے بیان حلفی میں الزام عائد کیاہے کہ ناصرجنجوعہ نامی ایک بزنس مین نے انھیں مسلم لیگ (ن) کی جانب سے رشوت کی پیشکش کی گئی تھی۔ اب انکشاف ہوا ہے کہ 23مئی کو کوٹ لکھپت جیل میں نوازشریف سے 45منٹ تک ملاقات کرنے والی شخصیت کوئی اور نہیں بلکہ یہی ناصر جنجوعہ تھے۔ چینل کے ذرائع نے بتایا
کہ 23مئی کو جب ناصر جنجوعہ نوازشریف سے ملنےکےلئے کوٹ لکھپت جیل میں ون ٹو ون ملاقات کرنے آئے تو اس وقت ان دونوں کے علاوہ کوئی بھی تیسرا شخص موجود نہیں تھا۔ سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی، مشاہد اللہ اور پرویز رشید 20اہم شخصیات ملاقات کےلئے جیل کے باہر انتظار کرتی رہیں اور ہر کوئی حیران تھا کہ یہ کاروباری شخصیت آخر کون ہے اور اسے اتنا پروٹوکول کیوں دیا جا رہا ہےکہ میاں نوازشریف اس سے الگ ملاقات کر رہے ہیں اور کسی کو بھی اندرآنے کی اجازت نہیں۔ اس سے بھی زیادہ حیران کن امر یہ ہے کہ موجودہ حکومت تحریک انصاف کی ہے۔ اور وزیر اعلیٰ کے معاون خصوصی شہبازگل سپرٹنڈنٹ جیل سے مسلسل رابطے میں رہتے ہیں۔ اس کے باوجود اس کاروباری شخصیت کو نوازشریف سے کیوں ملنے دیا گیا جب کہ اس کا شریف خاندان سے بھی کوئی تعلق نہیں۔ تاہم اس ملاقات سے ثابت ہوتا ہے کہ اس ملاقات کے دوران نیب عدالت کے جج ارشد ملک کی مبینہ ویڈیو، دھمکیوں یا رشوت کی پیشکش جیسے معاملات ہی زیر بحث آرہے تھے جن کا ذکر نیب عدالت کے جج ارشد ملک نے اپنے بیان حلفی میں کیا ہے۔

تازہ ترین خبریں