07:03 am
پاکستان بھر میں آج 15 اگست کو بھارت کے یوم آزادی کے موقع پر یوم سیاہ منایا جا رہا ہے

پاکستان بھر میں آج 15 اگست کو بھارت کے یوم آزادی کے موقع پر یوم سیاہ منایا جا رہا ہے

07:03 am

راولپنڈی (نیوز ڈیسک )مقبوضہ کشمیر سے اظہار یکجہتی کے لیے آج 15 اگست کو بھارت کے یوم آزادی کے موقع پر پاکستان نےیوم سیاہ منانے کا اعلان کررکھا ہے جس کے تحت آج پاک فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنی ڈی پیز سیاہ رنگ کی کر دیں۔ ترجمان پاک فوج میجر جنرل آصف غفور نے اپنے سرکاری اور ذاتی ٹوئٹر اور انسٹاگرام اکائونٹس کی ڈی پیز کو سیاہ رنگ سے بدل دیا ہے
۔دوسری جانب کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے بڑی تعداد میں سوشل میڈیا صارفین نے بھی اپنی ڈی پیز سیاہ کر دیں۔ پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اس سلسلے میں اپنی ٹویٹر پروفائل پکچر سیاہ کی اور اس حوالے سے اپنی ٹویٹ میں کہا کہ آر ایس ایس کے غنڈوں کو مقبوضہ وادی میں بھجوانے کی اطلاعات ہیں۔ بھارت کے زیر تسلط مقبوضہ کشمیر میں 12 روز سے جاری کرفیو, پہلے ہی سے فوجی کثرت والے مقبوضہ علاقے میں مزید فوجوں کی تعیناتی، آر ایس ایس کے غنڈوں کو مقبوضہ وادی میں بھجوانے، اطلاعات و وسائلِ ابلاغ کی مکمل بندش اور گجرات میں مودی کے ہاتھوں مسلمانوں کے قتل عام کی نظیر سامنے رکھتے ہوئےان کا کہنا تھا کہ کیا دنیا خاموشی سے بھارت کی جانب سے کشمیریوں پر کیے جانے والے مظالم کو دیکھتی رہے گی؟ بھارت کے زیر تسلط مقبوضہ کشمیر میں 12 روز سے جاری کرفیو, پہلے ہی سے فوجی کثرت والے مقبوضہ علاقے میں مزید فوجوں کی تعیناتی، آر ایس ایس کے غنڈوں کو مقبوضہ وادی میں بھجوانے، اطلاعات و وسائلِ ابلاغ کی مکمل بندش اور گجرات میں مودی کے ہاتھوں مسلمانوں کے قتل عام کی نظیر سامنے رکھتے ہوئےکیا دنیا خاموشی سے مقبوضہ کشمیر میں مسلمانوں کی نسل کشی اور سربرینیکا جیسے ایک اور قتل عام کا نظارہ کرے گی؟میں اقوام عالم کو متنبہہ کرتا ہوں کہ اگر اسکی اجازت دی گئی تو مسلم دنیا سے شدید ردعمل اور سنگین نتائج برآمد ہوں گے، انتہاء پسندی کو ہوا ملے گی اور تشدد کا نیا دور ابھرے گا۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اپنے ذاتی ٹویٹر اکاؤنٹ جبکہ تحریک انصاف کے بھی ٹویٹر اکاؤنٹس کی ڈی پیز سیاہ ہوگئیں۔خیال رہے کہ بھارتی حکومت نے 5 اگست کو مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کا اعلان کیا تھا جبکہ اس کے ساتھ ساتھ مقبوضہ وادی میں ٹیلی فون، انٹرنیٹ اور ٹیلی ویژن نیٹ ورک سروسز کو معطل کرکے کرفیو نافذ کردیا تھا۔ بھارت نے خصوصی حیثیت تبدیل کرکے مقبوضہ وادی میں مزید ہزاروں فوجی تعینات کیے تھے اور وادی کو جیل میں تبدیل کردیا تھا جبکہ 12 روز سے جاری کرفیو کے باعث مقبوضہ کشمیر کے عوام بد ترین مشکلات کا شکار ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ بھارت کے یوم آزادی کے روز یوم سیاہ منانے کا یہ اقدام مقبوضہ کشمیر کی عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے کیا گیا۔

تازہ ترین خبریں