02:34 pm
مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے مغربی دنیا سے تو مدد اور حمایت مل سکتی ہے لیکن اسلامی دنیا سے نہیں،حکومت پاکستان کیلئے افسوسناک انتباہ جاری

مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے مغربی دنیا سے تو مدد اور حمایت مل سکتی ہے لیکن اسلامی دنیا سے نہیں،حکومت پاکستان کیلئے افسوسناک انتباہ جاری

02:34 pm

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)سینیئر صحافی مظہر عباس نے دعویٰ کیا ہے کہ پاکستان کو کشمیر کے مسئلے پر مغربی دنیا سے حمایت اور مدد مل سکتی ہے لیکن اسلامی دنیا سے نہیں مل سکتی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو مسلم دنیا سے سپورٹ نہیں ملے گی ماسوائے ایک آدھ حد تک بیان کے، اس وقت دنیا کو بتانے کی ضرورت ہے کہ یہ خالصتاً کشمیریوں کی تحریک ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ نریندرا مودی ایک نازی نظر آتاہے
اوربھارت میں لوگ بات کرتے ہیں کہ بھارت میں شدت پسندی پھیلی ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ مسئلہ کشمیر پر او آئی سی کی قرارداد آگئی ہے لیکن یہ نظرنہیں آتاکہ کوئی واضح امداد ملے گی۔ہمیں دنیا میں مسئلہ کشمیر کو زیادہ سے زیادہ اجاگر کرناچاہئے ۔انہوں نے کہا کہ دنیا کا سب سے بڑا مرکز سعودی عرب ہے جہاں دنیا بھر کے مسلمان اکٹھے ہوتے ہیں لیکن اس دفعہ خطبہ حج میں کشمیر کا کوئی ذکر نہیں تھا۔خیال رہے کہ اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) مقبوضہ وادی کی صورتحال پرعالمی برادری سے نوٹس لینے اور بھارتی حکام سے کشمیریوں کے حقوق کے مکمل تحفظ کا مطالبہ کردیا ہے. تفصیلات کے مطابق اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) نے مقبوضہ وادی کی صورتحال پرعالمی برادری سے نوٹس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل کیا جائے، اقوام متحدہ، دیگر ادارے مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے کردار ادا کریں. او آئی سی نے بھارتی حکام سے کشمیریوں کے حقوق کے مکمل تحفظ کا بھی مطالبہ کیا اور کہاکہ مذہبی آزادی سے روکناعالمی انسانی قوانین کی خلاف ورزی ہے، بھارت کشمیریوں کو مکمل مذہبی آزادی فراہم کرے. او آئی سی سیکرٹریٹ سے جاری کردہ بیان میں اسلامی ممالک کی تنظیم نے مقبوضہ کشمیر کی مخدوش صورت حال اور بھارت کی طرف سے کشمیریوں کو مذہبی فرائض کی ادائیگی سے روکنے پر سخت تشویش کا اظہار کیا ہے. او آئی سی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل کیا جائے اور اقوام متحدہ و دیگر ادارے مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے اپنا کردار اداکریں. اوآئی سی نے مزید کہاکہ بھارت کی طرف سے مقبوضہ کشمیر میں عید الاضحیٰ کے موقع پر مسلمانوں کو مذہبی فرائض کی ادائیگی سے روکنا، مذہبی آزادی پر قدغن لگانا اور مکمل لاک ڈاؤن انتہائی تشویش ناک ہے.