06:22 pm
اسلام آباد دھرنا کو اب کوئی نہیں روک سکتا ،30 لاکھ سے زائد افراد شریک ہونگے، سینیٹر مولانا عطاءالرحمن

اسلام آباد دھرنا کو اب کوئی نہیں روک سکتا ،30 لاکھ سے زائد افراد شریک ہونگے، سینیٹر مولانا عطاءالرحمن

06:22 pm

ایبٹ آباد( آن لائن)خیبر پختون خواہ جمعیت علمائ� اسلام(ف)کے امیر سینیٹر مولانا عطائ� الرحمن نے کہا ہے کہ حکومت کے خلاف اکتوبر میں آخری معرکہ ہوگا،موجودہ حکومت معاشی، اقتصادی،اور ملکی سلامتی سمیت ہر محاذ پر ناکام ہو چکی ہے ،جس نے عوام کے صبر کا پیمانہ لبریز کر دیا ہے ،
اسلام آباد دھرنا کو اب کوئی نہیں روک سکتا ،30 لاکھ سے زائد افراد شریک ہونگے، جمعیت علمائ� اسلام کی قیادت نے عالم کفر کے ایجنڈہ کو بھانپ کر اسکو کو روکنے کیلئے اپنی جدوجہد کا آغاز کیا، ،عالم کفر کا ایجنڈا یہ ہے کہ کس طرح دنیا سے مسلمانوں کا رابطہ ختم کیا جائے،ہمارے حکمران بھی انکے ایجنڈا کی تکمیل کر رہے ہیں ،وزیر اعظم عمران خان کا امریکہ کا دورہ بھی مخصوص ایجنڈا کی تکمیل تھی ٹرمپ کے ساتھ ملاقات میں ملک کے آئین کو ٹارگٹ بنایا گیا ،امریکہ کے جلسہ میں بھی80 فیصد قادیانی شریک تھے ،اور یہ دورہ بھی قادیانیوں کی ایمائ� پر کیا گیا ،جس میں ملک کی جغرافیائی سرحدوں کو غیر محفوظ کرکے کشمیر کا سودا کیا گیا ،اور ختم نبوت کیقانون کو آئین سے ختم کرنا ہے ،کرتار پور کی راہداری ربوہ اور قادیانیوں کی سہولت کے لئے ہے ، حکمرانوں نے بین الاقوامی ایجنڈہ کی تکمیل کیلئے آسیہ مسیح کو رہا کیا ،جس کا اعتراف وزیر اعظم نے اپنی پریس کانفرنس میں کیا ،وہ ایبٹ آباد میں آزادی مارچ کے حوالہ سے منعقدہ اجلاس میں خطاب کررہے تھے ،اس موقع پر صوبائی جنرل سیکرٹر ی مولانا عطا الحق درویش ، صوبائی نائب امیر مولانا سید ہدایت اللہ شاہ ،ڈپٹی جنرل سیکر ٹری سابق ایم پی اے شاہ حسین، نائب امیر قاری گل عظیم ،صوبائی سالارمولانا عزیز اشرفی کے علاوہ ایبٹ آباد کے عہدیداران ، کارکنان اور دیگر شریک تھے ، سینیٹر مولانا عطائ� الرحمن کا کہنا تھا جمعیت علمائ� اسلام کی قیادت نے 15 سال قبل کہا تھا یہ یہودیوں ایجنٹ ہیں ،آج ہماری پارلیمنٹ میں اسرائیل کو تسلیم کرنے کی تقریریں کی جارہی ہیں ،نام نہاد اور جعلی الیکشن میں ہماری اسٹیبلشمنٹ نے بھی انکی بھرپور سپورٹ کی ،یہ غیر جمہوری اور نااہلوں کی حکومت ہے، جسکی جمعیت علمائ� اسلام نے مخالفت کی ،ان کی پالیسیوں کے خلاف ملک بھر 15 ملین مارچ کئے ،ہماری قیادت کی سوچ مذید ملین مارچ کی تھی ،لیکن اب معاشی طور پاکستان کا ہر فرد متاثر ہوچکا ہے عوام بلک رہی ہے آئے روز قیمتوں میں اضافہ، اور پیسہ کی ویلیو گر چکی ہے ،اور بین الاقوامی قرضوں کا بوجھ بڑھ چکا ہے ، ماوں کے شکم میں بچے مقروض ہیں ،انہوں نے کہا کہ اب صرف جمعیت علمائ� اسلام کا کارکن جذباتی نہیں ہورہا تھا بلکہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے کارکنان بھی اسلام آباد مارچ کا انتظار کررہے ہیں، مرکزی قیادت فیصلہ کرے گی کب اسلام آباد مارچ کے نکلنا ہے ،اس کے لئے صوبائی سطح پر عوامی رابطہ مہم شروع کی گئی ہے ،مانسہرہ،بٹگرام ،کوہستان ،اور دیگر مقام پر دورے جاری ہیں،اکتوبر میں آخری معرکہ ہوگا ،مدارس کے خلاف مہم چلائی جارہی ہے اکتوبر کا اجتماع ضرور کیا جائے گا۔

تازہ ترین خبریں