06:30 pm
فضل الرحمن نے اگر مذہب کارڈ استعمال کیا تو میں اپنے کپتان کے ساتھ کھڑا ہوں گا

فضل الرحمن نے اگر مذہب کارڈ استعمال کیا تو میں اپنے کپتان کے ساتھ کھڑا ہوں گا

06:30 pm

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک)نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے معروف اینکر منصور علی خان نے کپتان کا ساتھ دینے کا واضح اعلان کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کے سخت ترین ناقد معروف اینکر پرسن منصور علی خان نے کہا ہے کہ وزیر اعظم اور ان کی حکومت کے خلاف مولانا فضل الرحمان کے احتجاج میں مذہب کارڈ استعمال کیا جا رہا ہے۔وہ اس کی مخالفت کرتے ہیں اگر مولانا نے اپنے دھرنے اور احتجاج میں مذہب کارڈ کا استعمال کیا تو وہ ''پنے کپتان'' کے ساتھ کھڑے ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی تاریخ میں ہر طرح کا احتجاج کیا گیا اور اس میں پہلے بھی مذہب کارڈ کا استعمال کیا گیا جس کا نتیجہ ہم نے خون نا حق کی صورت میں دیکھا ۔
اُن کا کہنا تھا کہ وقت آگیا ہے کہ یہ سلسلہ بند کیا جائے۔منصور علی خان نے مولانا کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ سیاست کریں احتجاج کریں اور بھرپور احتجاج کریں لیکن ناموس رسالت کے تحفظ جیسے نعروں کے ساتھ مذہب کارڈ استعمال نہ کریں یہ آج اور آنے والی نسلوں کے ساتھ زیادتی ہے۔ خیال رہے کہ جمیعت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے حکومت کو اکتوبر تک مستعفی ہونے کی ڈیڈ لائن دیتے ہوئے اسلام آباد کی جانب حکومت مخالف مارچ کا اعلان کیا تھا تاہم مولانا فضل الرحمان نے مارچ کی تاریخ کے حوالے سے تاحال کوئی حتمی اعلان نہیں کیا۔حال ہی میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا جمیعت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اعلان کیا تھا کہ 18 ستمبر کو جمعیت کے اجلاس میں مارچ کا اعلان کر دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم رکاوٹیں توڑ کر اسلام آباد جائیں گے، اگرحکومت نے روکنے کی کوشش کی تو پورا ملک جام کر دیں گے۔مقبوضہ وادی میں انسانی المیہ جنم لے چکا ہے، امریکہ سمیت عالمی برادری مقبوضہ کشمیر میں مزید پیچیدہ صورتحال سے بچنے کے لئے فوری اقدامات کرے، دنیا جان لے امن کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ بھارت ہے، صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکہ ایران کشیدگی کے خاتمہ کے لئے وزیراعظم عمران خان کے کردار ادا کرنے کی پیشکش قبول کر لی ہے۔

تازہ ترین خبریں