10:48 am
 2021 تک بھارت کو مسلمانوں اور عیسائیوں سے پاک کرنے کا اعلان کر دیا

2021 تک بھارت کو مسلمانوں اور عیسائیوں سے پاک کرنے کا اعلان کر دیا

10:48 am

نئی دہلی ـ(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارت میں الیتی جماعتوں کے ساتھ ظالمانہ سلوک روا رکھا جاتا ہے۔ بھارت میں بسنے والے مسلمانوں کو آج بھی نفرت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔ انتہا پسند ہندو مسلمانوں کو اپنے جارحانہ رویوں کا نشانہ بناتے ہیں اور اکثر و بیشتر تو مسلمانوں کو چھوٹی چھوٹی غلطیوں پر اپنی جانوں سے بھی ہاتھ دھونا پڑتا ہے۔ بھارت میں بڑھتے ہوئے اسلام فوبیا اور مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز جذبات نے نام نہاد ''سیکولر'' بھارت میں مسلمانوں کا جینا مشکل کر دیا ہے
اور مقبوضہ کشمیر میں ڈھائے جانے والے بھارتی مظالم نے مسلمانوں کو مزید مشکلات سے دوچار کر دیا ہے۔ تاہم اب بھارت کی حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے رہنما راجیشور سنگھ نے بھی مسلمانوں اور عیسائیوں کے خلاف ہرزہ سرائی شروع کر دی ہے جس کے بعد اقلیتی جماعتوں میں عدم اعتماد کی فضا پیدا ہو گئی ہے جبکہ انتہا پسند ہندوؤں کے خوف نے اقلیتیوں بالخصوص مسلمانوں کو خوفزدہ کر دیا ہے۔ بی جے پی کے رہنما راجیشور سنگھ نے اپنے حالیہ بیان میں کہا کہ 2021ء تک بھارت کو مسلمانوں اور عیسائیوں سے پاک کروا لیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ بھارت میں مسلمانوں اور عیسائیوں کو رہنے کا کوئی حق حاصل نہیں ہے۔ بھارت کی روح جاگ چکی ہے۔ بی جے پی رہنما نے کہا کہ ہم نے طے کر لیا ہے کہ 31 دسمبر 2021ء اس ملک میں مسلمانوں اور عیسائیوں کا آخری دن ہو گا۔31 دسمبر 2021ء سے پہلے ہم بھارت میں اسلام اور عیسائیت کو ختم کر دیں گے۔ یہ میرا اور میرے ساتھیوں کا عزم ہے جسے ہم ہر صورت پورا کریں گے۔ بھارتی میڈیا کے مطابق راجیشور سنگھ نے پہلی مرتبہ ایسا بیان نہیں دیا ، وہ اس سے قبل بھی آر ایس ایس کے پلیٹ فارم سے ایسے کئی بیانات دے چکے ہیں۔

تازہ ترین خبریں