11:21 am
آج محسوس ہوتا ہے کہ سندھ میں ضم ہونے کا فیصلہ غلط تھا

آج محسوس ہوتا ہے کہ سندھ میں ضم ہونے کا فیصلہ غلط تھا

11:21 am

حیدرآباد(نیوز ڈیسک)آج محسوس ہوتا ہے کہ سندھ میں ضم ہونے کا فیصلہ غلط تھا، کراچی کو الگ صوبہ ہونا چاہیئے تھا۔۔۔ متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے کنوینر اور وفاقی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ آمر حکمران یحییٰ خان نے کراچی کو کو الگ صوبہ بناکر دینے کا آپشن دیا تھا لیکن اس وقت ہم نے مخالفت کی اور مہاجروں نے سندھ میں سندھیوں کے ساتھ رہنے کو ترجیح دی تھی لیکن آج یہ محسوس ہوتا ہے کہ اس وقت کا یہ فیصلہ غلط تھا ۔انہوں نے کہاکہ ہم ارادہی اور اختیاری پاکستانی ہیں ۔وہ حیدرآبا د پکاقلعہ میں حسرت موہانی لائبری کے لان میں سانحہ 30 ستمبر کے شہداء کے ایصال ثواب کیلئے منعقدہ قرآن خوانی کے اجتماع سے خطاب کررہے تھے۔
اس موقع پر ایم کیوایم کے ڈپٹی کنوینر کنورنوید جمیل، عبدالرؤف صدیقی اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔خالد مقبول صدیقی نے کہاکہ جوبھی سندھ کو انتظامی یونٹس کی بات کرنے پر غدار کہتا ہے وہ خود غدار ہے۔ملک بچانے کیلئے ملک بنانے والوں کی اولادوں کو بچانا ضروری ہے۔ گزشتہ 11سال سے سندھ میں معاشی دہشت گردی کرکے مہاجروں کو دیوار سے لگانے کی کوشش کی گئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ اگر ناقابل تقسیم کوئی چیز ہے تو وہ پاکستان ہے ، پاکستان کے صوبے نہیں ، کوئی بھی انتظامی یونٹس کی تقسیم کو غداری کہتا ہے تو وہ خود غدار ہے ، وہ اس صوبے کو ملک سمجھتا ہے یا ملک بنانا چاہتا ہے۔انہوں نے کہاکہ اگر ماضی میں ایم کیوایم پیپلزپارٹی کی حکومت نہ بنواتی تو سندھ میں کبھی بھی پیپلزپارٹی کی حکومت قائم نہیں ہوتی۔ ہم اپنے حصے کی قربانی دے چکے ہیں ۔ اگر تقسیم سے بچنا ہے تو اب آپ کی قربانی دینے کی باری ہے۔ انہوں نے کہاکہ 30 ستمبر کا سانحہ اس لئے کروایا گیا تاکہ شہری مینڈیٹ پیپلزپارٹی کی حکومت بنانے میں مدد نہ دے اس کے باوجود ایم کیوایم نے 1988ء میں بینظیربھٹو کے ساتھ مل کر حکومت بنائی ، اگر اس وقت ہم پیپلزپارٹی کی حکومت نہیں بنواتے تو کبھی صوبے میں اقتدار میں نہیں آسکتے تھے۔ڈپٹی کنوینر کنورنوید جمیل نے کہاکہ 70 سال سے پاکستان بنانے والوں کے اولادوں کے ساتھ کبھی مردم شماری ، کبھی کوٹہ سسٹم کے ذریعے زیادتیاں کی جاتی ہیں ، جعلی ڈومیسائل کے ذریعے ہمارے حقوق پر ڈاکہ ڈالے جارہے ہیں۔ ہمیں پاکستان کے حکمرانوں سے بہت سی شکایتیں ہیں ، ہم پاکستان کے استحکام اور ترقی کیلئے جان نچھاور کرنے کا حوصلہ رکھتے ہیں، ہمارا جینا مرنا پاکستان کے ساتھ ہے۔ انہوں نے کہاکہ سانحہ 30 ستمبر میں حیدرآبا د میں ڈھائی سو سے زائد راہ چلتے بے گناہوں کو شہید کردیا گیا ۔

تازہ ترین خبریں