01:16 pm
حکومت نے پی ٹی ایم کو مذاکرات کی پیشکش کردی

حکومت نے پی ٹی ایم کو مذاکرات کی پیشکش کردی

01:16 pm

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) پی ٹی ایم رہنماؤں کو ''پاکستان کے ایجنڈے'' پر کام کرنے کی شرط پر مذاکرات کی پیشکش کی گئی۔ تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی کابینہ کے 2 اہم ارکان وزیر دفاع پرویز خٹک اور وزیرداخلہ بریگیڈیئر (ر) اعجاز شاہ کی جانب سے پشتون تحفظ موومنٹ (پی ٹی ایم) کو کچھ شرائط پر مذاکرات کی پیشکش کی گئی جس کے مطابق پی ٹی ایم اراکین صرف ''پاکستان کے ایجنڈے'' پر عمل کریں گے اور اپنی تقاریر میں مسلح فورسز کو ہدف نہیں بنائیں گے۔قومی اسمبلی میں پی ٹی ایم رہنما محسن داوڑ اور وزیرمواصلات مراد سعید کے مابین پہلے ہی ہونے والی لفظی جنگ کے بعد وزیردفاع پرویز خٹک نے کہا
کہ فوج بھی (وزیرستان) سے واپس آنا چاہتی ہے، اگر آپ کا ایجنڈا پاکستان ہے تو میں آپ سے بات چیت کرنے کو تیار ہوں۔انہوں نے کہا کہ اگر آپ ان اداروں کے خلاف بات کرتے رہے جنہوں نے ملک میں امن و سلامتی کو یقینی بنایا ہے تو آپ کو نہیں سنا جائے گا۔حکومت نے اس سے پہلے بھی پی ٹی ایم سے بات کی تھی اور اب تقریباً ایک سال سے وہ اس تنظیم سے کہہ رہے کہ مذاکرات کی میز پر آئیں لیکن افسوس کی بات ہے کہ اس پیشکش کو مسترد کردیا گیا۔ پرویز خٹک نے مزید کہا کہ آپ کیوں بات نہیں کرتے؟ اگر آپ کا ایجنڈا کچھ اور ہے تو یہ مذاکرات نہیں ہوسکتے۔ یاد رہے کہ پی ٹی ایم رہنما علی وزیر اور محسن داوڑ کو 26 مئی کو شمالی وزیرستان میں خڑقمر کی فوجی چیک پوسٹ پر حملے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا جس کے بعد گذشتہ ماہ 18 ستمبر کو پشاور ہائی کورٹ نے 10 لاکھ روپے کے مچلکوں اور دو افراد کی شخصی ضمانت کے عوض گرفتار پی ٹی ایم رہنماؤں محسن داوڑ اور علی وزیر کی ضمانت پر رہائی کا حکم دیا تھا۔

تازہ ترین خبریں