09:23 am
پاکستان نے ریڈار پہ نظر نہ آنے والا جدید ترین ففتھ جنریشن طیارہ بنانے کا پہلا مرحل مکمل کرلیا

پاکستان نے ریڈار پہ نظر نہ آنے والا جدید ترین ففتھ جنریشن طیارہ بنانے کا پہلا مرحل مکمل کرلیا

09:23 am

اسلام آباد (احمد ارسلان)میرا ملک پاکستان وہ عظیم ملک ہے جس کی شروعات خاک اور خون میں اٹے قافلوں سے ہوئی تاہم اس کے بعد جس تیز ی کے ساتھ پاکستان نے ترقی کا سفر شروع کیا وہ قابل دید تھا۔ پوری دنیا نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا مگر پاکستان ایٹمی طاقت بن کر رہا ۔ پاکستان کے چپے چپے کی حفاظت کیلئے دنیا کی سب سے سخت جان اور بہادر فوج تیار کی ، شاہینوں کی طرح آسمان میں راج کرنے کیلئے پاک فضائیہ کا جنم ہوا اور سمندروںکی گہرائیوں میں رہ کر خطہ سرسبز کی حفاظت کا ذمہ لیا پاک بحریہ نے ۔ بلاشبہ دفاع مضبوط ہو تو کوئی بھی ملک کو ترقی کی جانب سفر کرنے میں مشکلات پیش نہیں آتیں ۔
پاکستان بھی ترقی یافتہ ممالک کی طرح ہر میدان میں ترقی کا خواہاں ہے جس کے پیش نظر ہم دفاعی میدان میں تیزی سے ترقی کر رہے ہیں ۔ JF17تھنڈر ہمارا فخر ہے مگر ہماری منزل نہیں ۔ ہماری منزل مستقبل میں مسلسل آگے بڑھنا ہے جس کیلئے پاکستان کے دفاعی انجینئرز ہمہ وقت مصروف رہتے ہیں ۔ اس حوالے سے پاکستانیوں کیلئے ایک زبردست خوشخبری یہ ہے کہ پاکستان نے ریڈار پہ نطر نہ آنے والا جدید ترین ففتھ جنریشن طیارہ بنانے کا پہلا مرحل مکمل کرلیا ہے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق پاک فضائیہ نے رائل انٹرنیشنل ایئر ٹیٹو میں پی اے ایف کے سی130 طیارے کی دم پر اپنے مستقبل کے اسٹیلتھ طیارے کے ڈیزائن کی نمائش کردی ہے۔ رپورٹ کے مطابق وزارت داخلہ کے سالانہ رسالے میں کہا گیا ہے کہ ای وی آر آئی ڈی سیکرٹریٹ نے تصوراتی ڈیزائن کا پہلا مرحلہ مکمل کرلیا ہے۔ اس میں کہا گیا ہے ’’تصوراتی ڈیزائن کی تکمیل کا پہلا مرحلہ مکمل ہوچکا ہے۔ اس طیارے کی مشکل کارکردگی کے تقاضوں پر مبنی ڈیزائن کی وجہ سے اعلیٰ تجزیہ ٹولز اور کوڈز کا استعمال کرتے ہوئے تخیلاتی ڈیزائن کے اندر پہلا مرحملہ مکمل ہو گیا ہے جبکہ مزید تین مرحلے مکمل کیے جائیں گے۔ پانچویں جنریشن کا یہ فائٹر ایئرکرافٹ پروجیکٹ عزم کے تحت بنایا جارہا ہے۔ اس رپورٹ سے پی اے ایف کے ملک میں آرٹ ایوی ایشن انڈسٹریل بیس کی حالت تیار کرنے کے عزائم کی نشاندہی ہوئی ہے۔ واضح رہے کہ پروجیکٹ عزم کا باقاعدہ آغاز پی اے ایف نے جولائی 2017 میں کیا تھا اور اس کا ایجنڈا ایک ایف جی ایف اے، ایک درمیانی اونچائی اور طویل برداشت والے، نئی اسلحہ اور بغیر پائلٹ فضائی گاڑی (یو اے وی)، اور متعدد دوسرے منصوبے تیار کرنا ہے۔ پروجیکٹ ازم کے آغاز کے اعلان کے بعد اس وقت کے چیف آف ایئر اسٹاف ایئر چیف مارشل سہیل امان نے مطلع کیا تھا کہ بغیر پائلٹ فضائی گاڑی (یو اے وی) کا ڈیزائن اپنے آخری مراحل میں پہنچ گیا ہے۔ تاہم ایف جی ایف اے(سٹیلتھ طیارے) کے معاملے حوالے سے پی اے ایف کے چیف آف ایئر اسٹاف ایئر چیف مارشل مجاہد انور خان نے ایک حالیہ انٹرویو میں کہا ہے کہ وہ توقع نہیں کرتے ہیں کہ ایف جی ایف اے ابھی مزید ایک دہائی تک آپریشنل ہوسکے گا۔ پاکستان ڈیفنس کے ٹوئٹر ہینڈل سے یہ ٹوئیٹ ہوتے ہی بھارتیوں سے برداشت نہ ہو سکتا اور انہوں نے طنز کے تیر چلانے شروع کر دیے ۔

تازہ ترین خبریں