07:01 pm
اگر سابق سینیٹر حافظ حمد اللہ پاکستانی شہری نہیں تو ان کے بیٹے پاک فوج میں سیکنڈ لیفٹیننٹ کی حیثیت سے کس طرح کام کررہے ہیں، سوالات اٹھنے لگے

اگر سابق سینیٹر حافظ حمد اللہ پاکستانی شہری نہیں تو ان کے بیٹے پاک فوج میں سیکنڈ لیفٹیننٹ کی حیثیت سے کس طرح کام کررہے ہیں، سوالات اٹھنے لگے

07:01 pm

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) سابق سینیٹر اور جمعیت علمائے اسلام ف کے رہنما حافظ حمد اللہ کو غیر ملکی شہری قرار دے دیا گیا ہے جب کہ ان کے بیٹا فوج میں سیکنڈ لیفٹینیٹ کے طور پر کام کر رہے ہیں۔ایسے میں سوشل میڈیا پر یہ سوال اٹھایا جا رہا ہے کہ اگر حافظ حمداللہ افغانی شہری ہیں توپھر ان کا بیٹا پاک فوج میں ملازمت کیسے کر سکتا ہے؟۔اسی حوالے باغی ٹی وی کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ حافظ حمد اللہ ایک ایسی جانی پہنچانی شخصیت ہیں
جو کئی سالوں پاکستان کی شہریت لے کر مذہب کے نام پر سیاست اور پھر سیاست کے بہانے ریاست کے خلاف سازش کی ایک بہت بڑی نشانی بن کر سامنے آئے۔مذکورہ میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا کہ حافظ حمد اللہ کے بارے میں ایسے انکشافات سامنے آئے ہیں جو جاننے کے بعد میڈیا سمیت تمام ادارے حیران و پریشان ہو کر رہ گئے،بتایا جا رہا ہے کہ حافظ حمداللہ کا ایک بیٹا شبیر احمد پاک فوج میں سیکنڈ لیفٹینیٹ کے عہدے پر نوکری کر رہا ہے۔سوشل میڈیا پر صارفین سوال اٹھا ارہے ہیں کہ ایک طرف حافظ حمد اللہ کو افغان باشندہ قرار دیا گیا ہے تو دوسری طرف اُنہی کا بیٹا ملک کے سب سے بڑے اور محترم ادارے میں ملازمت کر رہا ہے۔اسی حوالے سے سینئیر صحافی سلیم صافی نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا ہے کہ 70 کی دہائی میں سرکاری سکول کے ٹیچر کی حیثیت میں ریٹائرمنٹ لینے والے قاری ولی محمد کے بیٹے اور سیکنڈ لیفٹیننٹ شبیر احمد کے والد، سابق سینیٹر حمداللہ کو تاحکم ثانی غیر پاکستانی ڈیکلیئر کردیا گیا۔حافظ حمداللہ 2002 سے 2006 تک صوبائی وزیر صحت بھی رہے۔جب کہ وزارت داخلہ نے نادرا اور متعلقہ اداروں سے جواب بھی طلب کر لیا ہے کہ ایک افغان شہری کو پاکستان کا شناختی کارڈ کیوں جاری کیا گیا۔خیال رہے کہ جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی) ف کے مرکزی رہنما سینیٹر حافظ حمد اللہ کی پاکستانی شہریت منسوخ کردی گئی۔نیشنل ڈیٹابیس رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) نے جے یو آئی ف کے مرکزی رہنما حافظ حمد اللہ کو غیر ملکی قرار دیتے ہوئے ان کا شناختی کارڈ منسوخ کردیا۔ یہ انکشاف پاکستان میں میڈیا کے نگراں ادارے پاکستان میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کے ایک نوٹی فکیشن کے ذریعے ہوا۔پیمرا نے ایک حکم نامہ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ نادرا نے 11 اکتوبر کو ایک مراسلہ پیمرا کوبھجوایا جس میں حافظ حمد اللہ کو ایلین (غیر ملکی) قرار دیا گیا ہے۔نادرا کے مراسلے کی روشنی میں پیمرا نے حافظ حمد اللہ کی ٹی وی کوریج پر پابندی لگاتے ہوئے ہدایت کی کہ تمام ٹی وی چینلز حافظ حمد اللہ کو اپنے پروگرامات، ٹاک شوز اور خبروں میں مدعو نہ کریں کیونکہ وہ پاکستان کے شہری نہیں ہیں بلکہ ایلین (غیرملکی) ہیں۔

تازہ ترین خبریں