08:57 am
’’نوٹی فکیشن معطلی فوج کے لیے شرمندگی کا باعث ہے‘‘

’’نوٹی فکیشن معطلی فوج کے لیے شرمندگی کا باعث ہے‘‘

08:57 am

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک ) سپریم کورٹ کی جانب سے آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے نوٹیفکیشن معطی پر سوال کا جواب دیتے ہوئے تجزیہ کار جنرل (ر) امجد شعیب نے کہا کہ یہ سب کام بیورو کریسی کے کرنے کے ہیں۔اعلیٰ عہدوں پر فائز لوگوں اس سے لا علم ہوتے ہیں۔
 
نجی ٹی شومیں اینکر نے سوال کیا کہ آرمی چیف کی مدت ملازت میں توسیع پر حالیہ صورتحال سے فوج میں کیا پیغام جائے گا، جس پر جنرل (ر) امجد شعیب نے کہا کہ یہ فوج کے کیلئے شرمندگی کا باعث ہے۔ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کی حالیہ صورتحال کے ذمہ داروں کا محاصرہ ہونا چاہیے۔ یاد رہے کہ گزشتہ روز سپریم کورٹ نے آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کا نوٹی فیکیشن معطل کر دیا۔ اٹاررنی جنرل نے بتایا کہ 29نومبر کو آرمی چیف ریٹائرڈ ہو رہے ہیں۔ ان کی مدت ملازمت میں توسیع کا نوٹیفیکیشن صدرِ مملکت کی منظور کے بعد جاری ہو چکا ہے۔ جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دئے کہ صدر کی منظوری اور نوٹیفیکیشن دکھائیں۔ اٹارنی جنرل نے دستاویزات اور وزیراعظم کی صدر کو سفارش عدالت میں پیش کی۔چیف جسٹس نے کہا وزیراعظم کو آرمی چیف تعینات کرنے کا اختیار نہیں۔آرمی چیف تعینات کرنے کا اختیار صدر کا ہے۔یہ کیا ہوا پہلے وزیراعظم نے توسیع کا لیٹر جاری کر دیا۔پھر وزیراعظم کو بتایا گیا کہ توسیع آپ نہیں کر سکتے۔آرمی چیف کی توسیع کا نوٹیفیکیشن 19 اگست کا ہے۔19 اگست کو نوٹیفیکیشن ہوا، وزیراعظم نے کیا 21 اگست کو منظور دی۔ اٹارنی جنرل نے بتایا کہ کابینہ کی منظوری چاہئیے تھی۔

تازہ ترین خبریں