12:30 pm
پرویز مشرف آرمی چیف کو پھنسوانے کے ذمہ دار،سابق صدر کا ایسا اقدام جس کی وجہ سےحالات بگڑگئے

پرویز مشرف آرمی چیف کو پھنسوانے کے ذمہ دار،سابق صدر کا ایسا اقدام جس کی وجہ سےحالات بگڑگئے

12:30 pm


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) سینئر تجزیہ کار صحافی عارف نظامی نے کہا ہے کہ آرمی چیف کو معاملے میں خواہ مخواہ پھنسایا گیا ہے، یہ معمولی واقعہ نہیں ، اس سے پاکستان کی بڑی سبکی ہوئی، دراصل یہ پرویز مشرف کی ٹیم ہے ، جو مشرف کو بچانے پر لگی ہوئی ہے، بتایا جائے یہ حکومت مشرف کی ہے یا عمران خان کی ہے؟ انہوں نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے معاملے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ معمولی واقعہ نہیں ہے، اس سے پاکستان کی سبکی ہوئی ہے،
 
کہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کا 19 اگست کو نوٹیفکیشن جاری کیا جائے اور 21 اگست کو وزیراعظم اور کابینہ اس کی منظوری دے، پھر اس کی صدرمملکت سے بھی سمری منظور نہ کروائی جائے۔نالائق ٹیم سابق صدر مشرف کو بچانے میں لگی ہوئی ہے۔دراصل یہ پرویز مشرف کی ٹیم ہے ، فروغ نسیم، کیپٹن (ر) انور منصوریا وزیرداخلہ اعجاز شاہ یہ ساری مشرف کی ٹیم ہے، یہ حکومت مشرف کی ہے یا عمران خان کی ہے؟ اس ٹیم نے مشرف کے معاملے پر بھی عدلیہ پر اثرڈالنے کی کوشش کی ہے کہ مشرف کا فیصلہ روکا جائے اور ٹرائل روکا جائے۔ میرے خیال میں اس سارے میں معاملے میں آرمی چیف کو خواہ مخواہ اس میں پھنسا دیا گیا ہے۔پاکستان کی تاریخ میں یہ پہلی بار ہوا ہے کہ کسی چیف جسٹس نے حاضر سروس آرمی چیف کو اس طرح طلب کیا ہو اور توسیع کا نوٹیفکیشن معطل کیا ہو۔ اس کے سنگین نتائج ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کا معاملہ یہ ہے کہ ترجمان روز بیٹھ جاتے ہیں۔ جبکہ حکومت کی کارکردگی صفر ہے ۔ دوسری جانب وزیراعظم عمران خان نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی مدت ملازمت میں توسیع کی معطلی سے متعلق وفاقی کابینہ کا اجلاس دوبارہ طلب کرلیا، اجلاس میں آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کی سمری پر مشاورت کی جائے گی، وزیراعظم کابینہ ارکان کو اعتماد میں لے کر قانونی ماہرین کی مشاورت سے سپریم کورٹ کیلئے جواب تیار کریں گے، ذرائع کا کہنا ہے کہ کابینہ ارکان نے آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کابینہ کا متفقہ فیصلہ قرار دیا۔میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت کابینہ اجلاس کا دوسرا سیشن کچھ ساڑھے پانچ بجے منعقد ہوگا۔ اجلاس میں کابینہ ارکان اور قانونی ماہرین سپریم کورٹ میں آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے نوٹیفکیشن پر مشاورت کریں گے۔ وزیراعظم عمران خان کابینہ کو اعتماد میں لے کرآئندہ کا لائحہ عمل مرتب کریں گے۔ ذرائع نے بتایا کہ کابینہ ارکان کا کہنا ہے کہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کا اختیارچیف ایگزیکٹوکے پاس ہے۔ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کا فیصلہ کشمیر اور سکیورٹی صورتحال کو دیکھ کرکیا۔ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کابینہ کا متفقہ فیصلہ ہے۔ ارکان نے کہا کہ وفاقی کابینہ متفقہ طور پر فوج کے ساتھ ہوگی۔