05:56 pm
پشاور شہر کو تباہ کرنیوالی حکومت نے احتساب ادارے کو گھر کی لونڈی بنادیا ہے،سینیٹر الیاس احمد بلور

پشاور شہر کو تباہ کرنیوالی حکومت نے احتساب ادارے کو گھر کی لونڈی بنادیا ہے،سینیٹر الیاس احمد بلور

05:56 pm

پشاور(آن لائن) سینیٹ آف پاکستان میں عوامی نیشنل پارٹی کے سابق پارلیمانی لیڈر اور یونائیٹڈ بزنس گروپ کے سینئر لیڈر سینیٹر الیاس احمد بلورنے کہا ہے کہ پشاور شہر کو تباہ کرنیوالی حکومت نے احتساب ادارے کو گھر کی لونڈی بنادیا ہے اوراحتسابی ادارے کی اس میگا منصوبہ میں سنگین بے قاعدگیوں پر خاموشی باعث تشویش ہے۔ ہماری حکومت آئی تو بی آر ٹی میں لوٹ مار کرنیوالوں سے ایک ایک پیسے کا حساب لیں گے۔ بی آر ٹی بنانیوالوں نے پشاور کو 4 حصو ں میں تقسیم کردیا ہے ۔
ملک کے سینئر پارلیمنٹرین اور ممتاز صنعتکار سینیٹر الیاس احمد بلور نے ایک بیان میں کہا کہ پشاور شہر میں بی آر ٹی پراجیکٹ کی کوئی ضرورت ہی نہیں تھی اور اس پراجیکٹ کو شروع کرکے نہ صرف پشاور شہر کا مکمل حلیہ بگاڑ دیا گیا ہے بلکہ جی ٹی روڈ کی تاریخی حیثیت بھی ختم کردی گئی جو اب کبھی بھی بحال نہیں ہوسکتی ۔ انہوں نے کہاکہ احتساب کے ادارے کی جانب سے بی آر ٹی منصوبے میں پائی جانیوالی بے شمار سنگین غلطیوں کا کوئی نوٹس نہیں لیاگیا جس کی وجہ سے نیب جیسے اہم قومی ادارے کی ساکھ بری طرح متاثر ہو رہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بی آر ٹی منصوبے کے ذمہ داروں کے خلاف فوری ایکشن کی ضرورت ہے کیونکہ اس منصوبے نے پشاور کی بزنس کمیونٹی کے کاروبار مکمل طور پر تباہ کردیئے ہیں اور عوام کی زندگی اجیرن بنادی گئی ۔سینیٹر الیاس احمد بلور نے کہاکہ پھولوں کے شہر کو پلوں کا شہر بنا دیا گیا ہے ۔ پشاور شہر اور اس سے ملحقہ بازاروں ٗ کینٹ اور یونیورسٹی روڈ کے تاجروں کو روزانہ کروڑوں روپے کا نقصان برداشت کرنا پڑ رہا ہے ۔بی آر ٹی منصوبے سے پشاور کے عوام کو کوئی فائدہ نہیں ہوگا بلکہ سڑکیں مزید تنگ ہونے سے پشاور میں ٹریفک کی روانی کا مسئلہ جوں کا توں ہے ۔انہوں نے کہاکہ اس منصوبہ کی تکمیل کی کئی تاریخیں دی گئیں لیکن ابھی تک اس منصوبے کی تکمیل کا کچھ علم نہیں ۔ انہوں نے اعلیٰ عدلیہ درخواست کی کہ اس میگا منصوبہ میںسنگین بے قاعدگیوں پر فوری ایکشن لیں ۔ انہوں نے کہاکہ پشاور کے عوام کی اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ پشاور شہر کی تاریخی اہمیت ختم کرنے اور اس کا حلیہ بگارنے والوں کو آخرت میں کڑی سزا دے ۔

تازہ ترین خبریں