08:40 am
نمرتا کماری کیس میں اہم پیش رفت

نمرتا کماری کیس میں اہم پیش رفت

08:40 am


کراچی  نمرتا کماری کیس میں اہم پیش رفت سامنے آئی ہے۔ جوڈیشل انکوائری نے نمرتا کماری کے واقعے کو خودکشی قرار دے کر رپورٹ سندھ حکومت کو جمع کروا دی ہے۔تفصیلات کے مطابق 16 ستمبر کو بی بی آصفہ ڈینٹل کالج فائنل ایئر کی طالبہ نمرتا چندانی کی چانڈکا ہاسٹل میں مردہ پائے جانے کا کیس ہائی پروفائیل قرار دیا گیا جس کی مختلف زاویوں سے انتہائی باریک بینی سے نہ صرف تفتیش کی گئی بلکہ ایف آئی اے، پنجاب فارنزک ایجنسی، نادرا، لمس جامشورو، کیمیکل ایگزمن سمیت متعدد اداروں سے بھی مدد لی گئی تھی۔
 
بی بی آصفہ ڈینٹل کالج کی طالبہ نمرتا چندانی ہلاکت معاملے کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج لاڑکانہ کی جانب سے مکمل کی گئی جڈیشل انکوائری رپورٹ ہوم سیکریٹری سندھ کو بھیج دی گئی، ذرائع کے مطابق انکوائری رپورٹ وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کو پیش کی گئی جس پر وہ مشاورت کے بعد متعلقہ اداروں کو احکامات جاری کریں گے تاہم ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کے رپورٹ میں واضع طور پر لکھنے کے باوجود بھی جڈیشل انکوائری کی کاپی ایس ایس پی لاڑکانہ مسعود احمد بنگش اور وائیس چانسلر جامعہ بے نظیر بھٹو ڈاکٹر انیلا عطا الرحمان کو نہیں دی گئی۔میڈیا رپورٹس کے مطابق جوڈیشل انکوائری نے نمرتا کماری کے واقعے کو خودکشی قرار دے دیا ہے۔خیال رہے کہ نمرتا کماری کی موت کے بعد سوشل میڈیا پر سخت ردِ عمل دیکھنے میں آیا تھا۔کچھ روز قبل یہ خبر بھی سامنے آئی تھی کہ نمرتا کماری کے ساتھ زیادتی بھی ہوئی تھی۔۔نمرتا کے جسم کے اندرونی حصے سے ملنے والے کسی نامعلوم شخص کے ڈی این اے کی رپورٹ پر بھی غور کیا گیا۔مجموعی طور پر45افسران، ہاسٹل اہلکار، لیڈی ڈاکٹرز اور نمرتا کے کلاس وہاسٹل فیلوز کے بیانات ریکارڈ کئے گئے۔ نمرتا ہلاکت کیس کی عدالتی تحقیقات میں پولیس تفتیش کو بھی شامل کیا گیا تھا۔عدالتی تحقیقات کے دوران یونیورسٹی کی وائس چانسلر، کالج اور ہاسٹل اسٹاف اور نمرتا کے قریبی دوستوں کے بیانات بھی قلمبند کئے گئے۔ نمرتا کے فون ، لیپ ٹاپ اور جسمانی اعضا کی فرانزک رپورٹس بھی تحقیقات میں شامل ہیں۔

تازہ ترین خبریں