09:41 am
پاکستانی حکومت نے نواز شریف کے معاملے میں برطانیہ کو کیا خط لکھ دیا ، جانیں

پاکستانی حکومت نے نواز شریف کے معاملے میں برطانیہ کو کیا خط لکھ دیا ، جانیں

09:41 am

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی حکومت نے سابق وزیراعظم نوازشریف کے حوالے سے برطانوی حکومت کو خط لکھا ہے جس میں سابق وزیراعظم کے عدالتوں میں زیر سماعت کیسوں اور عدالت کی جانب سے سنائی جانے والی سزاؤں کی تفصیلات کے بارے میں آگاہ کرتے ہوئے
برطانوی حکومت سے درخواست کی گئی ہے کہ علاج کے بعد نوازشریف کوپاکستان کی پاکستان واپسی کو یقینی بنایا جائے.نجی ٹی وی کے مطابق برطانوی حکومت کو لکھے گئے خط میں نوازشریف کیس کی تفصیلات بھی منسلک ہیں، خط کے متن میں کہا گیا ہے کہ نوازشریف کےخلاف متعددکیسزچل رہےہیں اور نوازشریف کوایک کیس میں سزابھی دی جاچکی ہے‘خط کے متن کے مطابق علاج کے بعدنوازشریف کوپاکستان کے حوالے کیاجاناچاہئے، مجرم علاج کی غرض سے برطانیہ آیا ہے اس کے خلاف کیسوں کو منطقی انجام تک پہنچانے کے لیے اس کا پاکستان واپس آنا ضروری ہے. یاد رہے اسلام آباد ہائی کورٹ نے العزیزیہ ریفرنس میں نواز شریف کی طبی بنیاد پر ضمانت منظور کرتے ہوئے سزا 8 ہفتے کیلئے معطل کردی تھی‘بعد ازاں حکومت نے سابق وزیراعظم نوازشریف کے بیرون ملک جانے پر انڈیمنٹی بانڈز کی شرط رکھی تھی ، جس پر لاہور ہائی کورٹ نے حکومت کی جانب سے عائد کردہ انڈیمنٹی بانڈز کی شرط کو مسترد کرتے ہوئے نواز شریف کو بیان حلفی عدالت میں جمع کروانے پر بیرون ملک جانے کی اجازت دی تھی ، فیصلے میں کہا گیا تھا کہ نوازشریف کو علاج کے غرض سے 4 ہفتوں کے لیے باہر جانے کی اجازت دی جاتی ہے اور اس مدت میں توسیع بھی ممکن ہے. اجازت مے کے بعد نوازشریف 19 نومبر کو شہبازشریف اور ڈاکٹر عدنان کے ہمراہ قطر ایئرویز کی ایئرایمبولینس کے ذریعے لندن پہنچے تھے۔ نوازشریف کو لندن پہنچنے کے اگلے روز ہسپتال لے جایا گیا جہاں علاج سے پہلے ان کے متعدد ٹیسٹ کیے گئے. ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومت پاکستان کی جانب سے برطانوی حکومت کو خط اس لیے لکھا گیا ہے کہ تاکہ نوازشریف برطانیہ میں سیاسی پناہ کی درخواست دائر نہ کرسکیں.دوسری جانب سابق وزیراعظم نواز شریف کے صاحبزادے حسین نواز نے کہا ہے کہ والد کی طبیعت جیسی کل تھی، ویسی ہی آج بھی ہے‘ایک بیان میں حسین نواز نے کہا کہ نواز شریف کا لندن میں علاج جاری ہے، ان کی طبیعت میں بہتری کے کوئی آثار نظر نہیں آئے‘انہوں نے کہا کہ نزلہ، بخار کی وجہ کا پتا نہیں چلتا تو نواز شریف کو لاحق بیماریوں کا اتنی جلدی کیسے پتا چل سکتا ہے؟