09:59 am
آج عمران خان وزیر اعظم کی کرسی پر شہباز شریف کی وجہ سے ہیں

آج عمران خان وزیر اعظم کی کرسی پر شہباز شریف کی وجہ سے ہیں

09:59 am

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) گذشتہ کئی روز سے سوشل میڈیا پر آرمی چیف اور وزیراعظم کے مابین اختلافات کی خبریں گردش کرتی رہیں۔کچھ سیاسی مبصرین نے بھی اس خدشے کا اظہار کیا کہ وزیراعظم اور عمران خان کے مابین کچھ وجوہات پر اختلافات پائے جا رہے ہیں۔
اسی حوالے سے تجزیہ پیش کرتے ہوئے صحافی ہارون الرشید کا کہنا تھا کہ ن لیگ کا پیپلز پارٹی سے بھی تال میل ٹھیک نہیں ہے،مولانا سے بھی محتاط رہتے ہیں۔ ہارون الرشید کا کہنا ہے کہ خواجہ آصف اور شہباز شریف کی کوشش ہے کہ وزیراعظم عمران خان اور اسٹیبلشمنٹ کے مابین تعلقات خراب کیے جائیں اور اس طرح سے مقدمات بھی ختم کروائیں جائیں اور اقتدار بھی حاصل کیا جائے۔ہارون الرشید نے مزید کہا کہ اگر ان ہاؤس تبدیلی ہوئی تو نیا وزیراعظم بھی پی ٹی آئی سے ہو گا۔ اس سے قبل معروف صحافی حامد میر نے دعویٰ کیا تھا کہ اسٹیبلشمنٹ نے شہباز شریف کو تین یا چار مرتبہ نہیں بلکہ سات آٹھ مرتبہ وزیراعظم بنانے کی پیشکش کی تھی تاہم انہوں نے انکار کر دیا تھا۔حامد میر کا کہنا تھا کہ ہم کئی سالوں سے یہ سن رہے ہیں کہ نواز شریف اور شہباز شریف کے مابین اختلافات ہیں،لیکن یہ بات بھی سچ ہے اور اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ کہ اسٹیبلشمنٹ نے شہباز شریف کو تین یا چار مرتبہ نہیں بلکہ سات آٹھ مرتبہ وزیراعظم بنانے کی پیشکش کی تھی۔ حامد میر نے مزید کہا کہ گذشتہ سال 2018ء میں شہباز شریف اس پوزیشن میں تھے کہ وہ وزیراعظم بن سکتے تھے۔ شہباز شریف سے صرف ایک مطالبہ کیا گیا تھا کہ وہ اپنے بھائی نواز شریف کی پالیسیوں سے اعلانیہ طور پر اختلافات کا اعلان کریں۔ جس پر شہباز شریف نے کہا کہ میں اپنے بھائی کی پیٹھ میں خنجر نہیں گھونپ سکتا۔جب میں مر جاؤں گا تو میرے بچے میرے بارے میں کیاکہیں گے؟۔حامد میر نے کہا میں بڑی ذمہ داری سے کہہ رہا ہوں کہ اگر آج عمران خان پاکستان کے وزیراعظم ہیں تو اس کا کریڈٹ شہبازشریف کو جاتا ہے کیونکہ اگر وہ الیکشن سے پہلے نوازشریف سے اعلان لاتعلقی کر دیتے تو آج وہ وزیراعظم ہوتے۔

تازہ ترین خبریں