05:15 pm
وزیراعظم عمران خان نے بیوروکریسی کے نظام میں تبدیلی کی منظوری دے دی

وزیراعظم عمران خان نے بیوروکریسی کے نظام میں تبدیلی کی منظوری دے دی

05:15 pm

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک ) وزیراعظم عمران خان نے بیوروکریسی کے نظام میں تبدیلی کی منظوری دے دی، بیوروکریسی کی ترقیاں بہترین کارکردگی کی بنیاد پر ہی ہوسکیں گی،پرفارمنس بورڈ کی سفارش پر بیوروکریٹس کو قبل ازوقت ریٹائرڈ بھی کیا جا سکے گا۔ وزیراعظم عمرا ن خان نے اپنے دورہ لاہور میں اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ سول سرونٹس کی ترقیوں کے نظام میں تبدیلی کی منظوری دے دی ہے۔ 20 سال کی ملازمت کرنے والے سرکاری ملازمین کیلئے کارکردگی کا جائزہ لازمی قرار ہوگا۔اے سی آر بہتر رینکنگ بھی کارکردگی سے مشروط کردی گئی۔
بتایا گیا ہے کہ سینئرسیکرٹریزاور فیڈر ل پبلک سروس کمیشن کے چیئرمین پر مشتمل پرفارمنس ایویلیوایشن بورڈ بنایا جائے گا، بورڈ تعین کرے گا کہ کس بیوروکریٹ یا سول سرونٹس کو ترقی دی جاسکتی ہے؟ اگر تشکیل کردہ بورڈ نے کسی سرکاری آفیسر کی کارکردگی پر عدم اعتماد کا اظہار کیا اور ترقی نہ دینے کی سفارش کی، یا پھر اسی اسٹیج پر سیکرٹری یا آفیسر کو ریٹائرڈ کرنے کی سفارش کردی تو بورڈ کی سفارش پر فوری عملدرآمد کیا جاسکے گا۔ یعنی پرفارمنس بورڈ کی سفارش پر کسی آفیسر کو ترقی یا پھر بیوروکریٹ کو قبل ازوقت ریٹائرڈ بھی کیا جا سکے گا۔ اب بورڈ کرے گا کہ کون سا سول سرونٹ ملازمت برقرار رکھ سکتا ہے یا نہیں، 20 اور21 گریڈ کی ترقی کیلئے صرف 20 فیصد افسران اہل ہوں گے۔ گریڈ 21 میں ترقی کیلئے صوبے سے باہر سروس کرنا لازمی ہوگا۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ مردوں کو پہلے 5 سال اور خواتین کو 3 سال دوسرے صوبوں میں سروس کرنا لازمی ہو گی۔ جو سول سرونٹ دس سال سے زیادہ ایک صوبے میں قیام کرے گا اس کو ترقی نہیں ملے گی ۔19 سے 20 گریڈ میں ترقی کے لئے افسران کو ہارڈ ایریاز میں سروس کرنا بھی لازمی ہو گی۔