09:17 am
وزیراعظم کی میاںوالی آمد پر ہیلی پیڈ بنانے کے لیے درجنوں درخت کاٹ دئیے گئے

وزیراعظم کی میاںوالی آمد پر ہیلی پیڈ بنانے کے لیے درجنوں درخت کاٹ دئیے گئے

09:17 am

میاںوالی (نیوز ڈیسک ) وزیراعظم عمران خان نے گذشتہ روز کندیاں میں 10 بلین سونامی ٹریز شجرکاری مہم کا افتتاح کیا۔وزیراعظم عمران خان کے ایک پودا لگانے کے لیے کئی درخت کاٹ دئیے گئے۔بتایا گیا ہے کہ میانوالی انتظامیہ نے اسٹیج، پارکنگ اور ہیلی پیڈ کے لیے درختوں اور پودوں کو کاٹ دیا۔اس کے علاوہ راستے میں جتنے بھی پودے آ رہے تھے انہیں بھی اکھیڑ دیا گیا۔علاویں ازیں بچوں کو بھی گھروں سے پکڑ کر لایا گیا۔شہریوں نے ڈسٹرکٹ انتظامیہ کی حکمت عملی کو ناقص قرار دے دیا
۔شہریوں کا کہنا ہے کہ ایک طرف وزیراعظم کی جانب سے شجر کاری مہم کا افتتاح کیا جا رہا ہے جب کہ دوسریجانب درختوں کو کاٹا جا رہا ہے۔کہا جا رہا ہے کہ وزیراعظم کے اس دورے پر کروڑوں روپے خرچ ہوئے ہیں۔عمران خان کا شجر کاری مہم کے سلسلے میں میانوالی کا دورہ ، سٹیج ، پارکنگ اور ہیلی پیڈ بنانے کےلیے لاتعداد درخت اور پودے کاٹ دیے گئے، بچوں کو زبردستی گھروں سے اور سکولوں سے جلسہ گاہ میں لایا گیا اس کے ساتھ ضلع انتظامیہ کے تمام ملازمین کو بھی جلسہ گاہ میں آنے کا حکم دیا گیا تھاجب کہ ہ اتوار کے روزمیانوالی کے علاقے کندیاں میں 2020 ء کی شجر کاری مہم کے تحت کندیاں جنگلات کی بحالی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھاکہ نوجوانو ں میں نئی شجرکاری کرنے اور پودوںکی حفاظت کا شعور دینا ہوگا ۔شجرکاری ہمارے لیئے بہت اہم ہے۔ میں بچپن میں کندیاں جنگلات میں جاتا رہا ہوں۔ 21 ہزار ایکڑ کا رقبہ تھا، جو سکڑ کر 10 ہزار پھر 5 ہزار رہ گیا اور آج میں یہاں جھاڑیاں دیکھ رہا ہوں اسے آباد کرنے کے لیئے ہی میدان عمل میں نکلا ہوں ۔ہم درختون کی نعمت بارے نہین جانتے ان سے کافائد ملتے ہیں، آکسیجن انہیں کی پیداوار اور زندگی کے لیئے ضروری ہے۔ہم خوش قسمت ہیں جو قدرت نے ہمیں 12 موسم دیئے ہین اور ہر قسم کا فروٹ بھی ہمیں مل رہا ہے اور اگر ہم دریاوں کا پانی صحیح استعمال کریں تو بھرپور فصلیں لے کر خودکفیل ہوں اور بیرونی ممالک کو بھی ایکسپورٹ کرنے والے بنیں، انگریز جاتے ہوئے ہوئے ہمیں گھنے جنگل دے گیا جن میں کندیاں بھی شامل تھا مگر ہم نے برباد کر دیا اب ہم کندیاں میں اس ویران جنگل کو آباد کریں گے اور دس ہزار ایکڑ زمین پر جنگل کو سرسبز کریں گے اور باقی کے 11 ہزار رقبے کو بھی جلد آباد کیا جائے گا۔ بیری کے درخت بھی لگا کر ساتھ شہد حاصل کریں گے اور بیرون بھی فروخت کر کے ریوینیو بڑھائیں گے ،انہوں نے کہا کہ افسوس کہ چھانگا مانگا میں لوگ سرکاری زمین پہ قابض بن بیٹھے ہین

تازہ ترین خبریں