01:40 pm
28مئی 1998کو پوری دنیا کے مسلمانوں نے خوشیاں منائی

28مئی 1998کو پوری دنیا کے مسلمانوں نے خوشیاں منائی

01:40 pm

لاہور( خصوصی رپورٹ) اس وقت کے وزیر اعظم محمد نوازشریف نے پاکستان کے ایٹمی دھماکوں کا اعلان کیا اور کامیابی کی مبارکباد دی، 28 مئی وہ دن تھا جب انڈونیشیا سے لے کر مراکش تک مسلمانوں نے چراغاں کیاگیا،خوشیاں منائیں گئیں، اس تجربے نے پوری دُنیا کے مسلمانوں کو ایک نیا جذبہ ایک نئی امید دی، ایک فلسطینی نوجوان نے ہاتھ میں پتھر اُٹھائے ہوئے اسرائیلی فوجی کو کہا کہ میری طرف مت دیکھ، ہمارا ایٹم بم پاکستان میں پڑا ہے۔ 
سرائیل ایٹمی طاقت بنا۔۔ کہیں پر نہیں کہا گیا یہودی بم، ہندوستان کے نیوکلیئر ٹیسٹ پر کسی نے ہندو بم کا نعرہ نہیں لگایا لیکن جب پاکستان نیوکلئر طاقت بنا اور ایٹم بم کا تجربہ کیا، پوری عالم اسلام اور پوری دنیا میں اسلامی بم کا نعرہ بلند ہوا۔ عرب کے کئی اخباروں میں اگلے دن اسلامی بم کی شہ سرخیاں آویزاں تھیں۔ فلسطینی روزنامہ عرب الیوم میں خبر اسطرح چھپی تھی کہ اس خطہ میں ہم اسلامی نیوکلئر بم کی پیدائش پر اندرونی طور پر مسرت محسوس کرتے ہیں۔لبنانی روزنامہ النحر نے اپنے شہ سرخی پر یہ خبر چھاپی کہ”پاکستان دنیا اسلام کی پہلی نیوکلئر طاقت ہے”۔ایک اور لبنانی روزنامہ الحیات کہتا ہے کہ”پاکستان دنیا کا ساتواں اور عالم اسلام کا پہلا نیوکلئر طاقت کا حامل ملک ہے”۔ ایک اور عرب روزنامہ اشراق میں ایک مضمون چھپا جس کا موضوع تھا “اسلامی بم، ایک خواب جو شرمندہ تعبیر ہوا”۔کویتی اخبار القباس اور الوطن کے مطابق “پاکستان کے نیوکلئر تجربہ کی وجہ سے اسلامی دنیا مضبوط ہوئی ہے”۔ الغرض پورے عالم اسلام میں اس طرح کی کئی سرخیاں، خبریں، مضامین اور لوگوں میں مسرت اور جذبہ پایا گیا جو پاکستان کے نیوکلئر طاقت بننے کی وجہ سے تھا۔”آساں نہیں مٹانا نام و نشاں ہمارا”۔ خیال رہے کہ آج ملک بھر میں یوم تکبیر نہایت سادگی سے منایا جارہا ہے کیونکہ دیگر ممالک کی طرح پاکستان بھی کورونا کی لپیٹ میں ہے۔