04:48 pm
قلات :کورونا سے زیادہ ٹڈی دل تباہی مچا  دی

قلات :کورونا سے زیادہ ٹڈی دل تباہی مچا دی

04:48 pm

قلات ( آن لائن )کورونا سے زیادہ ٹڈی دل تباہی مچا رہی ہے باغات و فصلیں تباہ اور زراعت مکمل ختم ہوکر رہ گئی، زمینداروں کو کروڑوں کا نقصان، صوبائی حکومت صرف وٹس اپ اور فیس بک پر چل رہی ہے، جہازوں کے ذریعے سے اسپرے کرکے متاثرین کی مالی امداد کی جائے۔اگر حکومت اقدامات نہیں اٹھائی تو بی این پی سخت احتجاج پر مجبور ہوگی، ان خیالات کا اظہار بلوچستان نیشنل پارٹی قلات کے ضلعی صدر میر قادر بخش مینگل، جنرل سیکرٹری احمد نواز بلوچ، ہیومن رائٹس سیکرٹری عبدالوحید مینگل، انفارمیشن سیکرٹری عبدالعلیم مینگل و دیگر نے شہید 
میر نورالدین مینگل ہاوس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ ٹڈی دل نے جہاں پورے ملک کو لپیٹ میں لے کر تباہی مچادی ہے ملک و صوبہ سمیت قلات کے زمینداروں کے فصلوں کو مکمل تباہ کرکے رکھ دیا ہے۔ قلات شہر سمیت آس پاس کے علاقوں کے فصلوں قدرتی چراگاہیں ختم کی جبکہ گندم، جوار، زیرہ، کپاس، پیاز، ٹماٹر کے خاتمے کے بعد باغات کا رخ کردیا ہے جس سے سیب چیری و دیگر پھلوں حتی کہ درختوں کے پتوں کا بھی صفایا کردیا ہے۔ جس سے زمیندار طبقے کو کروڑوں کا نقصان ہورہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت بلوچستان کی طرف سے کوئی خاطر خواہ حکمت عملی اور زمینداروں کیلئے کوئی پیکج اور نہ ہی اسپرے کیا جارہاہے۔زمینداروں کا کوئی پرسان حال نہیں۔زمینداروں کو جھوٹی تسلی دیکر توجہ ہٹانے کیلئے محکمہ زراعت چند بوتل زہر اور کچھ ادویات دیکر اپنی جان چھڑانے کی کوشش کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ باقی صوبائی حکومتیں تو خاطر خواہ حکمت عملی کررہے ہیں۔مگر بلوچستان حکومت صرف وٹس اپ اور فیس بک پر چل رہی ہے انہوں نے کہا کہ ہونا تو یہی چاہئیے تھا کہ صوبائی حکومت بذریعہ جہاز اسپرے کرکے ٹڈی دل کو کنٹرول کرتے۔ اور سروے کرکے زمینداروں کو ریلیف دیتے۔لیکن صوبائی حکومت اپنی کارکردگی چھپانے کیلئے بلند و بانگ دعوے کرکے تھکتے نہیں۔ اب زمیندار نان شبینہ کے محتاج ہوکر رہ گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف کورونا وائرس نے عوام کا جینا حرام کیا ہے دوسری جانب ٹڈی دل نے کورونا سے زیادہ عوام کی زندگی اجیرن کی ہے حکومت کی توجہ صرف کورونا پر مرکوز ہے کیونکہ کورونا سے بیورو کریسی کو کمیشن ملتی ہے۔جبکہ زمینداروں کا پرسان حال نہیں۔ انہوں نے کہا کہ زمینداروں کو تنہا نہیں چھوڑینگے۔ حکومت نے اقدامات نہ اٹھائی تو بی این پی زمینداروں کے ساتھ ملکر احتجاجی تحریک چلانے پر مجبور ہوگی۔