05:29 pm
7سالوں میں ہونے والے دھرنوں سے ملک  کوکتنانقصان ہوا ،رپورٹ میں ہوشرباانکشاف

7سالوں میں ہونے والے دھرنوں سے ملک  کوکتنانقصان ہوا ،رپورٹ میں ہوشرباانکشاف

05:29 pm

اسلام آباد(ویب ڈیسک) قومی اسمبلی کو بتایا گیا ہے کہ 2012 اور 2018 کے دوران ملک میں ہونے والے احتجاجی دھرنے، جس میں 2014 میں اسلام آباد میں تحریک انصاف کی جانب سے ہونے والا روزہ دھرنا بھی شامل ہے، کی وجہ سے ملکی معیشت کو تقریباً ڈیڑھ ارب روپے سے زائد کا نقصان ہوا۔نجی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق وزیر داخلہ ریٹائرڈ بریگیڈ اعجاز شاہ نے فیصل آباد کے رکن قومی اسمبلی اور 2014 میں پی ٹی آئی کے دھرنے اور 2017 میں تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے مشہور فیض آباد دھرنے کے دوران پنجاب کے وزیر داخلہ رہنے والے
رانا ثنا اللہ کے پوچھے گئے سوال کے تحریری جواب میں یہ تفصیلات قومی اسمبلی کے سامنے رکھیں۔وزیر کا کہنا تھا کہ 'مالی معاملات میں معیشت کو ہونے والے نقصانات کی پیمائش وزارت داخلہ کے دائرہ کار میں نہیں آتی ہے اس پر فنانس، ریونیو اور معاشی امور ڈویژن اور منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدام ڈویژن نے اثرات کا حساب کتاب کرنا ہے۔تاہم ان کا کہنا تھا کہ اسلام آباد کیپیٹل ٹیریٹری (آئی سی ٹی) انتظامیہ اور صوبائی حکومتوں کے محکمہ داخلہ کی بڑی کوششوں کے بعد گزشتہ 7 سالوں میں ہونے والے مختلف دھرنوں/امن و امان کی صورتحال پر ہونے والے نقصانات سے متعلق معلومات جمع کی گئیں جس کے مطابق ملک کو ہونے والے اقتصادی نقصان کا تخمینہ ایک ارب 50 کروڑ 71 لاکھ 97 ہزار 263 روپے لگایا گیا ہے۔وزیر نے صوبے کے لحاظ سے اسمبلی کو بتایا کہ 7 سالوں کے دوران اسلام آباد میں ہونے والے مختلف احتجاج کی وجہ سے ملک کو 1 ارب 16 کروڑ روپے سے زائد کا نقصان ہوا ہے جبکہ اسی مدت کے دوران پنجاب کو 31 کروڑ 65 لاکھ روپے کا نقصان برداشت کرنا پڑا ہے۔وزیر کے مطابق پی ٹی آئی کی جانب سے 2014 ہونے والے دھرنے سے ملک کو 75 کروڑ 50 لاکھ سے زائد کا نقصان پہنچا تھا۔واضح رہے کہ 2013 کے انتخابات میں مبینہ دھاندلی کے خلاف تحریک انصاف کی جانب سے منعقد کیا گیا 126 روزہ دھرنا دسمبر میں پشاور میں آرمی پبلک اسکول پر حملے کے بعد ختم ہوا تھا جس حملے میں 132 اسکول کے بچوں اور اساتذہ سمیت 140 سے زائد افراد شہید ہوئے تھے۔اسی طرح وزیر کے جواب سے پتہ چلتا ہے کہ نومبر 2017 میں فیض آباد میں ٹی ایل پی کے دھرنے سے قومی خزانے کو 23 کروڑ 18 لاکھ روپے کا نقصان ہوا تھا۔دلچسپ بات یہ ہے کہ وزیر کے جواب میں بتایا گیا کہ اس 7 سالہ مدت کے دوران کسی بھی احتجاج کی وجہ سے خیبر پختونخوا اور بلوچستان میں کسی قسم کا نقصان نہیں ہوا ہے۔