04:19 pm
حریم شاہ ’’ ز‘‘ کے بعد قتل

حریم شاہ ’’ ز‘‘ کے بعد قتل

04:19 pm

 
اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک ) حریم شاہ کو زیادتی کے بعد قتل کر دیا گیا ، لاش کہاں سے اور کس حالت میں برآمد ہوئی ؟ افسوسناک خبر ۔۔۔۔۔۔۔۔ کمسن بچوں کے ساتھ درندگی کے واقعات میں کمی نہ آ سکی  ۔خیبر پختونخواہ کے علاقے چکدرہ میں دو سالہ حریم شاہ پانچ روز پہلے چکدرہ راموڑہ سے لا پتہ ہوئی تھی اورگزشتہ روز اس کی تشدد زدہ لاش ملی، دو سالہ حریم شاہ منگنی کی ایک تقریب میں ماں کے ہمراہ آئی تھی اور لاپتہ ہوگئی، والدین نے مقدمہ درج کروایا،پانچ روز بعد اسکی لاش ملی پولیس کا کہنا ہے کہ ننھی حریم شاہ کی لاش راموڑ درہ کی پ
ہاڑی سے ملی ہے جنہیں بے دردی سے قتل کیا گیا ہے۔ قتل کے شبہ میں بارہ مشتبہ افراد کو گرفتار بھی کیا جاچکا ہے جن سے تفتیش جاری ہے۔ ننھی بچی کے بہیمانہ قتل کی خبر علاقے میں جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی اور جنازہ میں عزیز و اقارب کے علاوہ دیگر سینکڑوں لوگوں نے بھی شرکت کی اور اس ک بعد احتجاجی ریلی نکالی۔معصوم بچی کے قتل کے خلاف چکدرہ بازار میں انجمن تاجران کے زیراہتمام احتجاجی مظاہرے میں سیاسی جماعتوں اور سول سوسائٹی نے شرکت کی، مظاہرین نے حکومت اور پولیس کو قاتلوں کی گرفتاری کے لئے تین دن کی مہلت دیتے ہوئے کہاکہ تین دن کے اندر قاتل گرفتار نہ ہوئے تو اسلام آباد کی طرف مارچ کریں گے ،مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے چکدرہ بار کے صدر عطاء اللہ ایڈوکیٹ نے کہا کہ ملزمان کی گرفتاری کی صورت میں کوئی وکیل چکدرہ کی عدالت میں ملزمان کی پیروی نہیں کرے گا اور ملزمان کو سزا دینے کیلئے ہر حد تک جائیں گے۔ دوسری جانب ڈی ایس پی اعجاز خان نے کہا ہے کہ حریم شاہ کے قتل کے شک میں بارہ مشتبہ افراد کو گرفتار کیا جا چکا ہے اور بہت جلد مجرمان تک پہنچ جائیں گے۔ امیر جماعت اسلامی پاکستان سراج الحق نے چکدرہ میں ڈھائی سال کی اغوا شدہ اور قتل شدہ بچی حریم شاہ کے گھر کا دورہ کیا ان کے خاندان سے تعزیت کی اور حکومت سے فوری طور پر قاتلوں کی گرفتاری کا مطالبہ کیا۔عوامی نیشنل پارٹی کےمرکزی نائب صدر حسین شاہ خان کا کہنا ہے کہ چکدرہ سے تعلق رکھنی والی چھوٹی پری حریم شاہ کیساتھ جو ظلم ہوا ہے اسکا ازالہ نہین کیا جا سکتا حکومت کو چاہئے کہ ملزمان کو جلد گرفتار کر کے سزا دی جائے