02:06 pm
 عوامی عہدوں کے لیے نفسیاتی اہلیت کا معیار 

 عوامی عہدوں کے لیے نفسیاتی اہلیت کا معیار 

02:06 pm

 امریکی ایوان نمائندگان کی اسپیکرنینسی پلوسی نے 6جنوری کو کیپٹل بلڈنگ پر یلغار کے فوری بعد امریکا کے چیئرمین چیفس آف  اسٹاف کمیٹی سے
(گزشہ سے پیوستہ)
 امریکی ایوان نمائندگان کی اسپیکرنینسی پلوسی نے 6جنوری کو کیپٹل بلڈنگ پر یلغار کے فوری بعد امریکا کے چیئرمین چیفس آف  اسٹاف کمیٹی سے رابطہ کیا اور اس خدشے کا اظہار کیا کہ ٹرمپ کے اس رویے کے ساتھ انہیں جوہری ہتھیاروں کے کوڈ تک رسائی حاصل ہے اور وہ اس حوالے سے اختیارات رکھتے ہیں۔ جنرل ملر نے فوری افواج کو ایک واضح پیغام بھیجا کہ ہم ’’آئین کے وفا دار‘‘ ہیں۔  امریکی صدر میں یہ اہلیت اور صلاحیت ہونی چاہیے کہ وہ موصول ہونے والی اطلاعات کی بنیاد پر فیصلہ کرنے سے پہلے اس کے نتائج و اثرات پر غور و فکر کے بعد ہی کسی نتیجے پر پہنچے۔ فرائض منصبی کی ادائیگی کے لیے تندرستی کا معیار کسی شخص کی کام کرنے کی اہلیت اور اس کی اپنی صحت و سلامتی سے بھی تعلق رکھتا ہے۔
 کسی کام کو کرنے کے لیے نفسیاتی نااہلی کا مطلب دماغی مرض نہیں ، یہ کوئی طبی حالت نہیں جس کا علاج بھی کیا جاسکے۔ کسی بھی فرد کی شخصیت بچپن سے لے کر اس کی زندگی کے حالات سے تشکیل ہوتی ہے۔ بہت سے شخصی خواص موروثی بھی  ہوسکتے ہیں اور سماجی ماحول پر بھی منحصر ہوتے ہیں جن میں اس کی پرورش ہوئی ہو۔ اس لیے یہ  ممکن نہیں کہ کسی عہدے کے لیے کوئی شخص ناموزوں قرار پائے اور بعد میں خود کو یکسر تبدیل کرلے۔  
امریکا میں پیدا ہونے والی حالیہ ڈرامائی صورت حال سے اس پہلو پر غور و فکر شروع ہونا چاہیے کہ پراگندہ دماغ رکھنے والا شخص کسی منصب کے لیے منتخب ہوکر کس طرح سیاسی نظام اور ریاست کے نظم و نسق میں بگاڑ پیدا کرسکتا ہے۔ دہائیوں سے سیاسی نظام کی کمزوریوں سے گزرتے پاکستان میں کئی اصلاحات کی ضرورت ہے اور ہمارے کئی سیاست داں اب ذمہ داریوں کی اہلیت کھو بیٹھے ہیں۔ موجودہ حکومت سیاسی نظام کی تنظیم نو کے مرحلے سے گزر رہی ہے اس لیے انتخابی دوڑ میں شریک ہونے کے لیے ’’اہلیت‘‘ کی شرائط متعین کرسکتی ہے۔ اس جانچ پرکھ کا تعلق طبی پیمانوں سے ہٹ کر شخصیت،کردار اور قائدانہ  صلاحیت کی بنیاد پر ہوسکتا ہے۔ نیشنل ٹیسٹنگ سروس  (این ٹی ایس) بڑی تعداد میں منتخب ہونے والوں کی اہلیت کا ہر کچھ عرصے بعد جائزہ لے سکتا ہے۔ اپنی سماجی حیثیت کی بنا پر انتخابی کام یابی حاصل کرنے والے مختلف جماعتوں میں شامل ’’الیکٹ ایبلز‘‘  کے کردار اور شخصیت کو زیادہ اہمیت نہیں دی جاتی۔  مذہبی رہنماؤں کو قبائلی سرداروں کے مانند وراثت میں منصب مل جاتا ہے، امیر اور باثروت لوگ اپنی دولت کے بل پر قیادت کے حق دار ٹھہرتے ہیں۔ سیاسی قیادت کا وارث ہونے کے لیے کوئی پیمانہ نہیں اس لیے کسی بھی خاندان ، فرقے یا قبیلے میں بھائیوں ،بہنوں اور بھتیجوں کی اجارہ داری رہتی ہے۔ اس لیے نظام اقتدار کی بہتری کے لیے کوئی تو پیمانہ متعین ہونا ہی چاہیے۔ 
حکومتی مناصب سے عادی جھوٹوں اور فریب کاروں کو دور رکھنے کے لیے افواج یا سی ایس ایس طرز کی کڑی جانچ پڑتال ضروری ہے۔ افواج پاکستان میں افراد کے انتخاب کے لیے متعین پیمانوں سے بھی مدد لی جاسکتی ہے۔ انٹر سروسز سلیکشن بورڈ (آئی ایس ایس بی) میں امیدواروں کی آئی کیو کو کمپیوٹر کے ذریعے پرکھا جاتا ہے۔ ماہرین نفسیات کے ساتھ تجزیاتی سیشن کروائے جاتے ہیں جس میں مقررہ وقت کے اندر تحریری امتحان بھی دینا ہوتا ہے جس میں جملے مکمل کرنے، لفظ جوڑنے کی آزمائش اور تصاویر پر مختصر کہانیاں لکھوا کر زورتخیل کا تجزیہ کیا جاتا ہے۔ امیدواروں کو ایک مختصر نوٹ میں اپنی خوبیاں اور خامیاں بیان کرنے کا کہا جاتا ہے۔ ماہرین نفسیات امیدواروں کی  ذاتی پس منظر اور ان آزمائشوں کی روشنی میں شخصیت کا جائزہ لیتے ہیں۔فوج کے لیے مطلوب دیانت داری، جرات مندی، قائدانہ صلاحیت ، عزم اور سنجیدگی کے پیمانوں پر پرکھنے کے بعد ہی انتخاب کا فیصلہ کیا جاتا ہے۔ سی ایس ایس کے امیدواروں کو بھی کم و بیش انہی مراحل سے گزرنا پڑتا ہے۔ کسی بھی منفی انداز فکر یا نفسیاتی خلل رکھنے والے شخص کو انہی پیمانوں کی مدد سے ان شعبوں میں داخل ہونے سے روکا جاتا ہے۔  قومی و صوبائی سطح پر نمائندگی کے خواہش مند افراد کے لیے بھی جانچ پرکھ کا ایسا ہی کوئی جامع نظام ہونا چاہیے تاکہ پاکستان میں کسی ’’ٹرمپ‘‘ کا اقتدار کے ایوانوں میں داخلہ ممکن نہ رہے۔ 
بدقسمتی سے ایسی جانچ پرکھ کے نظام نافذ ہونے کے باجود اس میں فریب کاری کی راہیں موجود رہیں گی۔ اس کے لیے دیانت دار اور سیاسی طور پر غیر جانب دار افراد کا انتخاب ضروری ہوگا۔ کمپیوٹر اور ٹیکنالوجی کے استعمال سے اس مسئلے کو مزید محدود کیا جاسکتا ہے۔ کسی بھی جمہوریت میں نااہلی کے ایسے کسی فیصلے پر نظر ثانی  کا راستہ موجود ہوتا ہے۔ پھر فوج یا سول سروس کے ضابطے ’’الیکٹ ایبلز‘‘ کی صلاحیتوں کو پرکھنے کے لیے پوری طرح موزوں نہیں ہیں۔ اس کے لیے مشتبہ معاملوں پر توجہ مرکوز کرنا ہی مناسب ہوگا۔ تاہم اس حوالے سے ایک ماڈل تیار کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ 
پاکستان میں ایسے کسی نظام کی ضرورت بہت زیادہ ہے کیوں کہ اس طرح ہمارے ہاں کتنے ہی عادی جھوٹے اور مجرمانہ ذہنیت رکھنے والے افراد سے نظام کی تطہیر ممکن ہوجائے گی۔ ایسے لوگ ہائیڈ پارک کے پاس چہل قدمی کررہے ہیں لیکن ہماری عدالتیں نہ جانیں کب سبق سیکھیں گی۔ قانون محض کتابوں میں لکھی عبارت نہیں بلکہ اس حقیقی روح زیادہ اہمیت رکھتی ہے۔ ہمیں ٹرمپ کی مثال سے عبرت پکڑتے ہوئے امریکا اور دنیا  میں جمہوریت کی بقا کے لیے ایک قدم آگے بڑھ کر سوچنا ہوگا۔ 
 

تازہ ترین خبریں

ایم کیو ایم نے وزیراعظم کو اعتماد کے ووٹ کے بدلے ڈپٹی چیئرمین شپ مانگ لی

ایم کیو ایم نے وزیراعظم کو اعتماد کے ووٹ کے بدلے ڈپٹی چیئرمین شپ مانگ لی

اعتماد کا ووٹ! عمران خان کا دیوانہ میدان میں آگیا، اپنے کپتان کے لیے بھوکے پیٹ عبادت شروع کر دی، مگر یہ ہے کون؟

اعتماد کا ووٹ! عمران خان کا دیوانہ میدان میں آگیا، اپنے کپتان کے لیے بھوکے پیٹ عبادت شروع کر دی، مگر یہ ہے کون؟

پی ٹی آئی اپنے ارکان کس طرح پورے کرے گی؟ حکمت عملی سامنے آگئی

پی ٹی آئی اپنے ارکان کس طرح پورے کرے گی؟ حکمت عملی سامنے آگئی

’ہمارے کتنے ارکان نے خود کو بیچا‘ وزیر اعظم اراکین اسمبلی کے سامنے پھٹ پڑے، اجلاس میں جذباتی مناظر

’ہمارے کتنے ارکان نے خود کو بیچا‘ وزیر اعظم اراکین اسمبلی کے سامنے پھٹ پڑے، اجلاس میں جذباتی مناظر

اعتماد کاووٹ۔۔پی ڈی ایم کیاکرنیوالی ہے،کھلاڑیوں  کی مشکلات میں اضافہ کردینے والی خبرآگئی

اعتماد کاووٹ۔۔پی ڈی ایم کیاکرنیوالی ہے،کھلاڑیوں کی مشکلات میں اضافہ کردینے والی خبرآگئی

کرتار پور کو پرانے انداز میں آباد کرنے کا فیصلہ

کرتار پور کو پرانے انداز میں آباد کرنے کا فیصلہ

جماعت اسلامی کا وزیراعظم کواعتماد کا ووٹ نہ دینےکا اعلان لیکن مجموعی طور پر کتنے ووٹ ملنے کا امکان ہے؟

جماعت اسلامی کا وزیراعظم کواعتماد کا ووٹ نہ دینےکا اعلان لیکن مجموعی طور پر کتنے ووٹ ملنے کا امکان ہے؟

8.1 شدت کازلزلہ ،لوگ خوف کے مارے گھروں سے باہرنکل آئے،سونامی کی وارننگ جاری

8.1 شدت کازلزلہ ،لوگ خوف کے مارے گھروں سے باہرنکل آئے،سونامی کی وارننگ جاری

گَل بڑی وَدھ گئی اَے۔۔۔سینیٹ الیکشن کے بعد صحافی غریدہ فاروقی نے حکومت کے زخموں پر نمک چھڑک دیا

گَل بڑی وَدھ گئی اَے۔۔۔سینیٹ الیکشن کے بعد صحافی غریدہ فاروقی نے حکومت کے زخموں پر نمک چھڑک دیا

الیکشن کمیشن کی وزیراعظم کیخلاف پریس کانفرنس،وفاقی وزراء بول پڑے

الیکشن کمیشن کی وزیراعظم کیخلاف پریس کانفرنس،وفاقی وزراء بول پڑے

وزیراعظم نے چیئرمین سینٹ کوبلالیا،کیاہونے والاہے؟شہراقتدار سے بڑی خبرآگئی

وزیراعظم نے چیئرمین سینٹ کوبلالیا،کیاہونے والاہے؟شہراقتدار سے بڑی خبرآگئی

اگر کسی کو ہمارے فیصلوں پر اعتراض ہے تو ۔۔۔وزیراعظم  کی تقاریرکے بعد الیکشن کمیشن کابھی جواب آگیا،دبنگ اعلان

اگر کسی کو ہمارے فیصلوں پر اعتراض ہے تو ۔۔۔وزیراعظم کی تقاریرکے بعد الیکشن کمیشن کابھی جواب آگیا،دبنگ اعلان

سبی ، بابر کچ میں بارودی سرنگ  دھماکہ،متعدد افرادزخمی

سبی ، بابر کچ میں بارودی سرنگ دھماکہ،متعدد افرادزخمی

جنوبی پنجاب کے پانچ محکمے ختم کرنے کا فیصلہ

جنوبی پنجاب کے پانچ محکمے ختم کرنے کا فیصلہ