"

دیپالپور کی خاتون جج کی اپنے نائب قاصد کو گاڑی میں غلیظ باتیں

جو میری ڈیوٹی ہے وہی لیں ،میں یہ کام نہیں کر سکتا ، خاتون سول جج کار میں اپنے نائب قاصد کو انتہائی غلیظ گالیاں کیوں دیتی رہی ؟ نائب قاصد نے انتہائی اقدام اٹھا لیا ۔۔ ویڈیو منظر عام پر سوشل میڈیا پر ایک خبر وائرل ہو رہی ہے جس میں دیبالپور کی ایک سول جج اور اس کے نائب قاصد کے حوالے سے انکشاف کیا گیا ہے کہ خاتون سول جج کے نامناسب رویے کی وجہ سے تنگ آکر نائب قاصد اپنی کلائی کاٹ لیتا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق دیپالپور میں خاتون سول جج کی ڈانٹ سے دل برداشتہ ہو کر نائب قاصد نے اپنی نبض کاٹ لی ۔ ذرائع کے مطابق خاتون سول جج شیخ صائمہ وحید نے سرکاری نائب قاصد کو اپنے پرسنل ڈرائیور کے طور پر رکھا ہوا تھا ۔آج لاہور سے واپسی پر دورانِ ڈرائیونگ قصور کے قریب گاڑی کی ہلکی سے ٹکر ہو گئی جس پر سول جج نے نائب قاصد کو غلیظ گالیاں دیں ۔واپس دیپالپور پہنچ کر دلشاد اشفاق نامی نائب قاصد نے سول جج سے کہا میری جو ڈیوٹی ہے وہ لیں میں ڈرائیونگ نہیں کرسکتا ۔جس پر سول جج مزید سیخ پا ہو گئیں اور دلشاد اشفاق کو خوب کھری کھری سنائیں جس سے دل برداشتہ ہو کر نائب قاصد نے اپنی نبض کاٹ لی ۔نائب قاصد کو زخمی حالت میں ہسپتال طبی امداد کیلئے لے جایا گیا ہے جہاں ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ہسپتال عملہ اس کے اقدام خودکشی پر اسے پیار سے سمجھا رہا ہے اور دلاسہ دے رہا ہے ۔ واضح رہے کہ اس سے قبل بھی سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو خوب وائرل ہوئی تھی جس میں ایک خاتون خود کو کرنل کی بیوی ظاہر کرتے ہوئے پولیس اہلکاروں سے بدتمیزی کرتی دکھائی دے رہی تھی جس کے بعد سوشل میڈیا’’کرنل کی بیوی‘‘ ہیش ٹیگ ٹاپ ٹرینڈ کررہا تھا یا یوں کہیں کہ ’’کرنل کی بیوی‘‘ نے پاکستانی سوشل میڈیا پر ہنگامہ مچادیا تھا ۔ اور دیکھتے ہی دیکھتے ٹاپ ٹرینڈ بن گئی۔ ویڈیو میں خاتون ہزارہ موٹروے چیک پوسٹ پر پولیس کے ساتھ نہ صرف بدتمیزی کررہی تھی بلکہ نامناسب الفاظوں کا استعمال کرتے ہوئے نہایت دیدہ دلیری سے قانون توڑتی ہوئی اپنی گاڑی وہاں سے بھگاتی ہوئی لے جاتی ہے۔ ویڈیو میں دیکھا جاسکتا تھا کہ خاتون اپنی کار میں ایک شخص کے ساتھ بیٹھی ہوئی ہے جب کہ آس پاس دیگر گاڑیاں بھی سڑک پر ناکہ لگا ہونے کی وجہ سے کھڑی ہیں۔ خاتون ایک اہلکار سے رکاوٹیں ہٹانے کے لیے کہتی ہے جس پر اہلکار کہتا ہےجب اجازت ملے گی اس وقت راستہ کلیئر ہوگا جس پر خاتون کہتی ہے میں آرمی آفیسر کی بیوی ہوں کوئی معمولی بات نہیں ہے اس کے بعد خاتون نائب صوبیدار کے لیے انتہائی نامناسب لفظ استعمال کرتے ہوئے کہتی ہے میں’’کرنل کی بیوی‘‘ہوں اور دوبارہ نائب صوبیدار کو گالی دیتی ہے اور کہتی ہے میں اس کی وردی اتروادوں گی۔ تاہم پولیس کی جانب سے گاڑی کو آگے جانے کی اجازت نہ ملنے پر خاتون گاڑی سے باہر آکر پولیس اہلکاروں سے بدتمیزی کرنے لگتی اور قانون توڑتے ہوئے زبردستی سڑک پر موجود رکاوٹیں ہٹادیتی ہے۔ اس دوران دیکھا جاسکتا تھا کہ پولیس اہلکار خاتون سے نہایت آرام سے بات کرتے ہوئے اسے سمجھانے کی بھی کوشش کرتا ہے کہ وردی کی بےعزتی ہورہی ہے سب کے سامنے لیکن خاتون کچھ بھی سمجھنے کو تیار نہیں تھی۔ ویڈیو میں خاتون کو پولیس اہلکاروں پر چلاتے ہوئے بھی دیکھاجاسکتاہے جب کہ خاتون مسلسل کہہ رہی ہے ایک صوبیدار کی کیا اوقات ہے میرے آگے میں کرنل کی بیوی ہوں۔ ایک موقع پر خاتون گاڑی میں موجود شخص کو کہتی ہوئی نظر آرہی ہے کہ گاڑی پولیس والے پر چڑھادو اور پولیس اہلکار کو دھکا دینے کی دھمکی بھی دے رہی ہے۔ بعد ازاں پولیس اہلکاروں کے ساتھ بدتمیزی کرنے اور ان پر چلانے کے بعد خاتون زبردستی رکاوٹیں ہٹاکر وہاں سے چلی جاتی ہے۔ سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے اس ویڈیو پر شدید ردعمل کا اظہار بھی کیا گیا تھا اور لوگ پولیس اہلکار سے بدتمیزی کرنے اور گالیاں دینے پر خاتون کے رویے کو شرمناک قرار دیاجب کہ کچھ لوگوں کی جانب سے خاتون کے شوہر کو اس واقعے کے لیے جوابدہ ہونے کا مطالبہ بھی کیا گیا تھا